Forum Replies Created

Viewing 3 posts - 1 through 3 (of 3 total)
  • Author
    Posts
  • Ghazali Farooq
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Member
    #7

    آپ سب کے جوابات کا مشکور ہوں۔ اس بلاگ میں تحسین تو کسی حکومت کی نہیں کی گئی۔ تنقید کی گئی ہے  اور پھر تجویز دی گئی  ہے۔

    جہاں تک کراچی کے مسٔلہ کا تعلق ہے تو اس کے لیے میرا بلاگ ملاحظہ ہو جس میں اصل مسٔلہ کی تشخیص کی گئی ہے اور اس کا حل پیش کیا گیا ہے۔۔۔

    کراچی کا اصل مسٔلہ، انتظامی یا کچھ اور؟

    https://ghazalifarooq.blogspot.com/2020/09/blog-post.html

    Ghazali Farooq
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Member
    #6

    بھائی جان عمران خان کے بیان پہ کیوں پریشان ہو رہے ہو اس کو پتا ہے کہ کشمیر کا مسلہ انڈیا کے ساتھ ھل نہیں ہو سکتا اور انڈیا ان کی بات کبھی نہیں مانے گا ویسے بھی عمران خان ووہی کچھ کہتا جو اس کو جی ایچ قو کہتا ہے … اور جی ایچ قو کبھی بھی ایٹمی ہتھیاروں سے دستبردار نہیں ہو گا … ان کا تو دانا پانی ایٹم بم سے لگا ہوا ہے … میڈیا میں انڈیا پاکستان دشمنی کو بڑھا چڑھا کر پیش کرتے ہیں … پوری قوم بھوکی مر رہی ہے … تو جناب ٹینشن نہ لو .. کٹپلتی کے کہنے سے کچھ نہیں ہوتا …

    دراصل جب سیاسی قیادت کی جانب سے کسی بات کا بار بار اظہار ہو اور فوجی قیادت کی جانب سے اس کی تصحیح  نہ کی جائے تو اس کا مطلب یہ ہوتا ہے کہ اس معاملہ میں سیاسی اور فوجی قیادت ایک صفحے پر ہیں۔ وزیر اعظم صاحب نے ایک سے زیادہ مرتبہ اور مختلف مواقع پر یہ بات کی ہے اور اس کی کہیں سے کوئی تصحیح نہیں آئی۔

    باقی کہا تو یہ بھی جاتا تھا کہ پاکستان بھارت کو کبھی کشمیر کا الحاق نہیں کرنے دے گا کیونکہ کشمیر کے نام سے ہی تواس ادارے کا دانہ پانی چلتا ہے اور بجٹ میں اس کے لیے فنڈز مختض ہوتے ہیں۔ لیکن اس کے باوجود کشمیر کا سودا کر دیا گیا۔ بلکہ اس کو پکا کرنے کے لیے گلگت بلتستان کو بھی صوبے کا درجہ دے دیا گیا اور اس صوبہ کو بنانے کے لیے فوجی قیادت کی جانب سے تمام بڑی سیاسی پارٹیوں کی ہنگامی طور پر خفیہ میٹنگ بلائی گئی جس کی خبر بعد میں لیک ہوئی۔ یہ سب امریکی ایماء پر ہوا کیونکہ امریکہ کشمیر کا مسٔلہ بھارت کے حق میں حل کر کے بھارت کی توجہ مکمل طور پر  چین کی جانب مرکوز کروانا چاہتا ہے۔ 

    تو اسی طرح امریکی ایماء پر  ایٹمی ہتھیاروں سے دستبرداری بھی کوئی بعید نہیں۔ اور جب بار بار اس سلسلہ میں عوامی سطح پر بیانات دیے جا رہے ہوں تو اس سے معلوم یہ  ہوتا ہے کہ سیاسی اور فوجی قیادت امریکی غلامی میں اس حد تک جانے کے لیے بھی تیار ہے۔ لیکن صرف عوام کا دباؤ اور رد عمل انہیں شاید ایسا کرنے سے روکے رکھے۔ لہٰذا اس بات کی کھل کر تردید کرنے کی ضرورت ہے کہ پاکستان کی عوام ایسا بالکل بھی ہونے نہیں دینا چاہتی۔         

    • This reply was modified 1 year, 1 month ago by Developer.
    Ghazali Farooq
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Member
    #5
    میرے خیال میں عمران خان نے بہت اچھا جواب دیا کہ ھمیں ایٹمی ھتھیاروں کی ضرورت نہیں ۔ بحیثیت انسان ھم سب کو اپنے ارد گرد کا علم حاصل کرنا چاھیے ۔۔۔ اور کسی بھی قسم کی جنگ و جدل سے باز رھنا چاھیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اوپر کالم میں ٹی پی کل پا کستانی بڑھکوں والے جذ بات کا اظہار کیا گیا ہے کہ ۔۔۔ ھمارا دین ھم پر لازم کرتا ہے کہ ھم جدید ترین فوجی صلاحیت حاصل کریں ۔۔۔ اپنے دشمنوں کو خوفزدہ کریں ۔۔۔ مقبوضہ علاقوں کا آزاد کرائیں دنیا کی صف اول کی ریاست بنا دیں ۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میں ان جذ باتی بڑھکوں کے جواب میں یہ کہنا چاھتا ہوں کہ ھمارا دین سب سے پہلے ھم پر یہ لازم کرتا ہے کہ ھم علم حاصل کرلیں وہ علم کہ کون ھمارا دشمن ہے اور کونسی فوج کس دشمن کے پے رول پر کام کرتی ہے اس کے بعد فوجی صلاحیت سے دشمن کو خوفزدہ کرنے کا شوق فوری ختم ہو جائے گا ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بھا ئی جان ۔۔۔ فوجی صلاحیت حاصل کرنے سے پہلے علم تو حاصل کرلو ۔۔۔۔ کہ فوجی صلاحیت تمہارے لیئے کا م کرے گی یا کسی اور کے لیئے ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پا کستانی قوم ابھی ماضی قریب میں اپنی فوجی بالادستی فوجی صلاحیت ۔۔۔ کشمیر ۔۔ کابل ۔۔۔ قندھار ۔۔۔ میں آزما کر ۔۔۔ نا کام و نامراد جھنڈے گاڑ چکی ہے پا کستان کے دو تاریخی فوجی جرنیل ۔۔۔۔۔ جرنل ضیاء اور جرنل مشرف ۔۔۔ جس طرح ۔۔۔فوجی صلا حیتیں دکھا نے کے لیے ۔۔۔ فوجی جنگوں میں کودے اور جس طرح ملک کو اندھیروں میں لے گئے ۔۔۔ وہ تاریخ میں سیاہ حروف سے لکھا جا چکا ہے ۔۔۔۔۔۔ جرنل ضیاٰء اور جرنل مشرف کی فوجی بلا دستی کے ٹورنامنٹس نے جس طرح پا کستان کو کمزور لاغر بنا دیا ملک کب کا کیلا ریپبلک بن چکا ہے ۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کابل کشمیر میں دو تین دھائیوں کے فوجی ٹورنا منٹس کے بعد پا کستان کے ھاتھ نہ صرف خالی رھے ہیں الٹا ملک کھوکھلا کمزور ہوگیا ہے ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس حالیہ فوجی پنگوں سے قوم کو سبق حاصل کرنا چاھیے کہ ۔۔۔ آزمائے کو کیا آزما نا ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دوسرے جہاں تک بہت سے پا کستانی بہا دروں کو ایٹمی ھھتیاروں کے دورے پڑتے رھتے ہیں ان کے لیئے عرض ہے کہ ۔۔۔ جنگل میں ۔۔۔ شیر ۔۔۔چیتے ۔۔۔ ریچھ ۔۔۔ گینڈے ۔۔۔ ھا تھی ۔۔۔ کے ہوتے ہوئے ۔۔۔ کوئی سینگوں والا ۔۔۔ بیل ۔۔۔۔ کسی حال میں بھی برتری کا خواب نہیں دیکھ سکتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ انسان کو اپنے گریبان کا علم حاصل کرتے رھنے چاھیے کہ ۔۔۔ ھم کس قابل کیا کرسکتے ہیں کیا نہیں کرسکتے ۔۔۔۔ ھمارا ملک ۔۔۔ ابھی نندن ۔۔۔ جیسے پا ئلٹ کو ۔۔۔ گرفتار کرکے کورٹ مارشل کرنے کی بھی صلاحیت نہیں رکھتا ہے فوری پا ئلٹ چھوڑنا پڑتا ہے ۔۔ دشمن کو چائے بھی پلا نی پڑتی ہے عزت سے بارڈر تک چھوڑ کر بھی آنا پڑتا ہے ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ھر بندے ھر قوم ھر ملک کو اپنی اوقات کا علم سب سے پہلے حاصل کرنا چاھیے اس کے بعد ۔۔۔ خوا ہشات کے پل با ندھنے چاھیں ۔۔۔ جنگل میں شیر ۔۔۔ چیتے ۔۔ ریچھ ۔۔۔ گینڈے ۔۔ ھاتھی کے ہوتے ہوئے ۔۔۔ ایک معمولی بیل کی کوئی اوقات نہیں ہوتی چاھے جتنے بھی بڑے سینگ کرلے ۔۔ ۔۔۔۔ پا کستانی فوج جتنی مرضی نشان حیدر اکٹھے کرلے ۔۔۔ دنیا کی طاقتوں کے میزائلوں کے دو تین برسٹ ۔۔۔۔ فوجی صلاحیت ٹھنڈی کرسکتے ہیں ۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جنگل میں شیر ۔۔ چیتے ۔۔۔ ریچھ ۔۔۔ گینڈے ۔۔ ھاتھی ۔۔۔ دند نا رھے ہوں تو ۔۔۔ سینگوں والے بیل کو کون پوچھتا ہے ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میرے حساب سے عمران خان کا ایٹمی ھتھیاروں سے جان چھڑانے کی سوچ بہت اچھی ہے بلکہ میرا تو خیال ہے ۔۔۔۔ پا کستان کو ایٹمی ھتھیاروں پر اربوں ڈالر ضا ئیع کرنے کی ضرورت ہی نہیں ہے فوری طور ایٹمی اسلحہ سازی بند کرنی چاھیے ۔۔۔۔۔ کون چلانے دے گا ان کو ایٹمی ھتھیار ۔۔۔۔۔ ایک فون پر لیٹتا ہے جن کا سپہ سالار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    آپ کی قیمتی آراء کے لیے نہایت مشکور ہوں۔ آپ نے درست فرمایا کہ اس بات کا علم ہونا چاہیئے کہ جس ادارے کی مضبوطی کا مطالبہ کیا جا رہا ہے وہ کس کے لیئے کام کر رہا ہے۔ یہ بات بدقسمتی سے درست ہے کہ اس ادارے کی قیادت اس وقت اس ادارے کو  استعمار کی پالیسی کے مطابق لے کر چل رہی ہے۔ یہ قیادت ہماری افواج سے  امریکہ کی “دہشت گردی کے خلاف جنگ” اور اقوام متحدہ کے استعماری مشنز کی جنگیں تو لڑوا سکتی ہے لیکن کشمیر اور فلسطین کی آزادی کے لیے انہیں روانہ نہیں کر سکتی یا اس مقدس مقصد کے لیے مسلم افواج کا کوئی اتحاد قائم کرنے کی سعی نہیں کر سکتی۔

    لیکن یہ مطالبہ کی پاکستان کو ایٹمی طاقت سے دستبردار نہیں ہونا چاہیئے ، درست قیادت کے مطالبے سے خالی نہیں۔ پاکستان کی سیاسی اور فوجی قیادتیں بھی ایسی ہوں جو اس ایٹمی طاقت کوصحیح معنوں میں  ڈیٹرنس کے طور پر استعمال کر سکیں تا کہ بھارت کو کشمیر کا الحاق کرنا تو دور کی بات اس کی جانب میلی آنکھ سے دیکھنے کی بھی جرأت نہ ہو سکے۔  

    باقی پاکستانی فوج کی کشمیر میں  کامیاب مزاحمت قائم رکھنے   میں  ناکامی یا ابھی نندن کی فوری واپسی وغیرہ کی وجہ پاکستانی فوج کی قابلیت میں کمی نہیں بلکہ فوجی قیادت کی جانب سے امریکہ کی غلامی اور اس خطے کے لیے امریکی  پالیسی پر عمل درآمد کا ہونا ہے۔اگر فوجیاور سیاسی  قیادت کسی بیرونی اثر و رسوخ میں آئے بغیر خود مختارانہ طور پر پاکستان اور مسلمانوں کے حق میں فیصلے لے تو پاکستان بہت سے محاذوں میں کامیاب ہو سکتا ہے۔

             

Viewing 3 posts - 1 through 3 (of 3 total)
×
arrow_upward DanishGardi