Home Forums Islamic Corner ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

Viewing 20 posts - 101 through 120 (of 272 total)
  • Author
    Posts
  • #101
    نادان
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 109
    • Posts: 15156
    • Total Posts: 15265
    • Join Date:
      31 Aug, 2016

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    مرزا غلام احمد کبھی بھی صوفی ازم سے متاثر نہیں رہا …. اپنے ابتدائی دور میں اس نے عیسایوں سے بہت مناظرے کے اور اس وقت کے مسلمان علما نے اسکی تعریف کی کے بہت اچھا کام کر رہا ہے خاص کر دیوبند علماؤں نے ….اسکا جھکاؤ ہمیشہ سے دیوبند مکتبہ کی طرف رہا جو کے اب تک اسکے ماننے والوں میں ہے …. ابن عربی کی بات ایک طرف مگر یہ بات تو احمدی مسلم بھی نہیں مانتے کے دعوه نبوت انہوں نے ابن عربی کی تحریر سے متاثر ہوکے کیا

    واللہ عالم بصواب

    غامدی صاحب نے یہ نہیں کہا ..مرزا کی بات کرتے ہوئے انہوں نے تصوف پر بات کی تھی ..اور تمام نامی گرامی صوفیاء  کرام کا ذکر کیا تھا ..آپ ان کی ویڈیوز دیکھ لیں..آپ خود دیکھ لیں ..میں اتنا تفصیلی لکھنے سے رہی

    #102
    نادان
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 109
    • Posts: 15156
    • Total Posts: 15265
    • Join Date:
      31 Aug, 2016

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    بالکل بجا فرمایا ، آپ کا اسلام چونکہ غامدی صاحب کے اسلام سے مطابقت رکھتا ہے لہذا آپ کے نزدیک وہی خالص اسلام ہے ۔ جبکہ ڈاکٹر اسرار احمد جو کہ مولانا مودوی ہی کے نقطہ فکر کے پیرو کار ہیں ،غامدی صاحب سے قطعا” مختلف انداز فکر رکھتے ہیں ۔ کیا آپ ڈاکٹر اسرار احمد کے مکتبہ فکر سے بھی متاثر ہیں یا صرف ڈاکٹر شاھد کی وڈیو ہی دیکھنا پسند کرتی ہیں :serious: ۔

    غامدی صاحب نے شعور  کی آنکھ مولانا مودودی کے آستانے میں ہی کھولی ہے ..ان کی تعلیمات سے متاثر بھی ہیں اور ان کا احترام بھی کرتے ہیں .

    لیکن کچھ معاملات میں ان سے علمی اختلافات ہیں ..جیسے کہ ہمیشہ سے علماء میں رہے ہیں اور جو بڑی  نیچرل بات ہے

    رہی مولانا اسرار کی بات ..میرے والدین انہیں بہت سننتے تھے ..میں نے زیادہ نہیں سنا ..لیکن ٹی  وی پر ایک پروگرام دیکھا تھا جس میں وہ ملک میں اسلامی نظام کے نفاز کی بات کر رہے تھے ..ان کا کہنا تھا کہ ملک میں اس کے لئے بہت خون  خرابہ ہوگا ..جو بات مجھے پریشان کر گئی کہ کس کا خون  خرابہ

    #103
    نادان
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 109
    • Posts: 15156
    • Total Posts: 15265
    • Join Date:
      31 Aug, 2016

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    مدائم آپ کے بس میں ہو آپ تو غامدی صاحب کو وہابی بنا دیں ویسے غامدی صاحب اقبال کے بہت بڑے فین ہیں اور اقبال کے صوفی پن کا کس کو نہیں پتا جو رومی کو اپنا استاد مانتے تھے …… … جیسے وہ اوپر والی ویڈیو میں شیخ اعرابی کے ختم نبیین کا مہفوم سمجھا رہے تھے …. آپ نے جو سوال غامدی صاحب کے لئے اکھٹے کیے ہوے ہیں آپ ان سے یہ سوال بھی پوچھا لینا کہ غامدی صاحب آپ صوفی کے خلاف ہیں … اور مرزا غلام کے براۓ میں آپ کی کیا راے ہے

    وہ ان سوالات کا جواب دے چکے ہیں ..کاہلی  چھوڑیں ..خود سرچ کریں

    #104
    نادان
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 109
    • Posts: 15156
    • Total Posts: 15265
    • Join Date:
      31 Aug, 2016

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    میں نے اج اور اس سے پہلے بھی آپکے تھریڈ پر ان لوگوں کی گفتگو پڑھکر یہ اندازہ لگایا ہے ۔۔یہ لوگ کسی نقطے پر بحث نہیں کرنا چائتے اور نہ آپکی رائے کا آحترام ۔۔یہ صرف اور ہارنا چاہتے ہیں آپنے الفاظ کے منھ سے اگلوانا چایتے ہیں ۔۔۔۔آگر یہاں عغامدی صاحب کے خلاف لکھتی تو کمال بدیادنتی سے ان لوگوں نے دوسری طرف ہوجانا تھا کہہ غامدی ٹھیک کہہ رے ہیں ۔۔۔۔آپ کو کوڑ مغز لوگوں سے بحث ہی نہیں کرنی چایئے تھی ۔۔۔۔

    آپ کی بات درست ہے ..یہ بحث  برائے بحث  کرتے ہیں ..میں ان کے ہر سوال پر وڈیو لگاتی ہوں ..یا تو وہ اسے سرے سے دیکھتے ہی نہیں ..یا ان میں سمجھنے کی صلاحیت ہی نہیں ..میں بھی اسی نتیجہ پر پہنچی ہوں کہ اس پر ان سے بات کرنا وقت ضائع کرنا جیسا ہے

    #105
    unsafe
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 54
    • Posts: 1035
    • Total Posts: 1089
    • Join Date:
      8 Jun, 2020
    • Location: چولوں کی بستی

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    غامدی صاحب صوفی ازم کے خلاف ہیں انہوں نے صاف صاف کہا ہے کہ مرزا غلام کا دعویٰ غلط ہے . میرا خیال ہے آپ لوگوں سے اس معاملے پر گفتگو بیکار ہے ..یہ آپ کی سمجھ سے اوپر کی باتیں ہیں ..

     …. آپ خود کو غامدی صاحب کی بہت بڑی فین سمجی ہیں لیکن اسلام کی طرح غامدی کے مطلق بھی آپ کا علم کوئی خاص نہیں ہے …میں غامدی صاحب کی ویڈیو لگا رہا ہوں یہ ان کے اپنے الفاظ ہیں ….. “جب کے مرے والد قادری جنید چشتی کے شیخ تھے میں نے اپنے دودھ کے دانت بھی اسی پر توڑے ہے اور ابتدائی تعلیم بھی ارباب تصوف سے پائی ہے .. مرے والد کے شیخ بھی مجھ پر خاص عنایات فرماتے تھے .. اور آپ نے یہ اتنی بڑی بات بغیر تحقیق کیسے لکھ دی …. میڈم آپ کو اسلام کے ساتھ ساتھ غامدی کے اوپر بھی تحقیق کرنی چاہے ….

    وہ ان سوالات کا جواب دے چکے ہیں ..کاہلی چھوڑیں ..خود سرچ کریں
    • This reply was modified 11 months, 3 weeks ago by unsafe.
    #106
    unsafe
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 54
    • Posts: 1035
    • Total Posts: 1089
    • Join Date:
      8 Jun, 2020
    • Location: چولوں کی بستی

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    آپ کی بات درست ہے ..یہ بحث برائے بحث کرتے ہیں ..میں ان کے ہر سوال پر وڈیو لگاتی ہوں ..یا تو وہ اسے سرے سے دیکھتے ہی نہیں ..یا ان میں سمجھنے کی صلاحیت ہی نہیں ..میں بھی اسی نتیجہ پر پہنچی ہوں کہ اس پر ان سے بات کرنا وقت ضائع کرنا جیسا ہے

    :hilar: :lol:

    مادام  جو ویڈیو میں نے آپ کے غامدی صاحب کے اوپر ایک متضاد بیان کے اوپر لگائی ہے اس کے بارے میں کیا کہنا پسند کریں گی …

    • This reply was modified 11 months, 3 weeks ago by unsafe.
    #107
    Zaidi
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 19
    • Posts: 938
    • Total Posts: 957
    • Join Date:
      30 May, 2020
    • Location: دل کی بستی

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    غامدی صاحب نے شعور کی آنکھ مولانا مودودی کے آستانے میں ہی کھولی ہے ..ان کی تعلیمات سے متاثر بھی ہیں اور ان کا احترام بھی کرتے ہیں . لیکن کچھ معاملات میں ان سے علمی اختلافات ہیں ..جیسے کہ ہمیشہ سے علماء میں رہے ہیں اور جو بڑی نیچرل بات ہے رہی مولانا اسرار کی بات ..میرے والدین انہیں بہت سننتے تھے ..میں نے زیادہ نہیں سنا ..لیکن ٹی وی پر ایک پروگرام دیکھا تھا جس میں وہ ملک میں اسلامی نظام کے نفاز کی بات کر رہے تھے ..ان کا کہنا تھا کہ ملک میں اس کے لئے بہت خون خرابہ ہوگا ..جو بات مجھے پریشان کر گئی کہ کس کا خون خرابہ

    پریشان کر گئ ؟ جو حالیہ خون خرابہ ہورہا ہے ، اس پر تبصرہ نہیں فرمایا ۔ مطیع اللہ کا دن دھاڑے اسلام آباد کے مشہور علاقے سے زبردستی اغوا ، آپ کے نزدیک معمولی بات ہے ۔اور جس طرح ہمارے ملک میں سیکوریٹی ایجنسیوں نے جانفشانی سے سپریم کورٹ میں معصومانہ رپورٹ پیش کی ہے ، کیا وہ اتنی ہی سادہ بات ہے ؟ ان واقعات کے ہونے کے بعد اورمعلوم مجرموں کو پکڑنے سے حکومتی روایتی بزدلانا گریز کے بعد آپ کس منہ سے شاہراہ کشمیر کو شاہراہ سرینگر پکار سکتی ہیں ؟ اسرار احمد شاید ان ہی معلوم دہشتگروں سے آخری معرکہ کی بات کررہے ہوں جنہوں نے ملک میں خوف وہراس کا ماحول قائم کر رکھا ہے ۔

    #108
    Zaidi
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 19
    • Posts: 938
    • Total Posts: 957
    • Join Date:
      30 May, 2020
    • Location: دل کی بستی

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    …. آپ خود کو غامدی صاحب کی بہت بڑی فین سمجی ہیں لیکن اسلام کی طرح غامدی کے مطلق بھی آپ کا علم کوئی خاص نہیں ہے …میں غامدی صاحب کی ویڈیو لگا رہا ہوں یہ ان کے اپنے الفاظ ہیں ….. “جب کے مرے والد قادری جنید چشتی کے شیخ تھے میں نے اپنے دودھ کے دانت بھی اسی پر توڑے ہے اور ابتدائی تعلیم بھی ارباب تصوف سے پائی ہے .. مرے والد کے شیخ بھی مجھ پر خاص عنایات فرماتے تھے .. اور آپ نے یہ اتنی بڑی بات بغیر تحقیق کیسے لکھ دی …. میڈم آپ کو اسلام کے ساتھ ساتھ غامدی کے اوپر بھی تحقیق کرنی چاہے ….

    انسیف بھائ ، لگتا ہے آپ کو بچپن میں کیسٹرل آئل نہیں دیا گیا ۔ آپ کو بھی اچھی طرح سے علم ہے کہ کس طرح بد دیانتی سے کسی کی بھی وڈیو اپنے نقطہ نظر کو تقویت دینے کے لیے سیاق وسباق سے ہٹ کر پیش کر دی جاتی ہے ۔ غامدی صاحب کی کوئ ایسی وڈیو بھی پیش کریں جب انہوں نے بلوغت کی عمر میں پہنچنے کے بعد بھی صوفی ازم کی بطور ایک مکتبہ فکر تائید کی ہو ۔ یاد رکھیے آپ بھی کسی زمانے میں پرائمری اسکول میں ضرور داخل ہوئے ہونگے ۔ اس وڈیو سے تو ظاہر ہے کہ وہ تصوف کو دین کے بنیادی احکامات سے انحراف کی ایک قسم سمجھتے ہیں جب ان کے مطابق تصوف کے حامی عمومی عبادت کے احکامات کو من وعن قبول کرکے اس کے خواص پر ایک خاص نقطہ نظر رکھتے ہیں جو غامدی صاحب کے نزدیک قابل اعتراض ہے ۔

    #109
    unsafe
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 54
    • Posts: 1035
    • Total Posts: 1089
    • Join Date:
      8 Jun, 2020
    • Location: چولوں کی بستی

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    انسیف بھائ ، لگتا ہے آپ کو بچپن میں کیسٹرل آئل نہیں دیا گیا ۔ آپ کو بھی اچھی طرح سے علم ہے کہ کس طرح بد دیانتی سے کسی کی بھی وڈیو اپنے نقطہ نظر کو تقویت دینے کے لیے سیاق وسباق سے ہٹ کر پیش کر دی جاتی ہے ۔ غامدی صاحب کی کوئ ایسی وڈیو بھی پیش کریں جب انہوں نے بلوغت کی عمر میں پہنچنے کے بعد بھی صوفی ازم کی بطور ایک مکتبہ فکر تائید کی ہو ۔ یاد رکھیے آپ بھی کسی زمانے میں پرائمری اسکول میں ضرور داخل ہوئے ہونگے ۔ اس وڈیو سے تو ظاہر ہے کہ وہ تصوف کو دین کے بنیادی احکامات سے انحراف کی ایک قسم سمجھتے ہیں جب ان کے مطابق تصوف کے حامی عمومی عبادت کے احکامات کو من وعن قبول کرکے اس کے خواص پر ایک خاص نقطہ نظر رکھتے ہیں جو غامدی صاحب کے نزدیک قابل اعتراض ہے ۔

    سر جی … اپ سے مادام والی تعصبانہ رویہ کی توقع نہیں تھی …-ویڈیو میں اگر آپ نے غامدی صاحب کا نقطہ نظر پورا سن لیا ہوتا تو آپ کو مجھ سے یہ سوال کرنے کی گنجائش نہ رہتی … – اس ویڈیو میں چار علما بیٹھے ہیں … جس میں غامدی کا نقطہ نظر پورا کا پورا بیان کیا ہے … ویڈیو پروگرام لمبا ہے .. باقی لوگوں کی آرا پوسٹ کرنے کا مقصد نہیں تھا ….غامدی صاحب کے مطابق مسلمانوں میں تصوف کی دو ارا پائی جاتی ہیں.. ایک تصوف جس میں لوگ اس کو دین کی سب اعلی تعبیر سمجتھے ہیں .. اور دوسری مخالف والی … .. .. اور یہ بات کوئی ان کے بچپنے کی نہیں بلکے پروگام الف میں ان کے بال سفید ہیں تب انہوں نے اپنا نقطہ نظر بیان کیا تھا … …. اور پھر انہوں نے کچھ شخصیات جن کے تصوف سے بہت متاثر ہیں ان کے نام تصنیف کے ساتھ لئے ہیں جن کو وہ بہت پڑھتے ہیں …. جن میں چشتی ، غزالی اور کچھ بزرگوں کے نام لئے ہیں… اور کہتے ہیں ان کی وجہ سے وہ تصوف قابل احترام ہے اور دین کا حصہ سمجتھے ہیں … ….. ایسی ہی وی ڈیو جس میں تھریڈ لگا ہے جس میں شیخ اعرابی کا نقطہ نظر پیش کر رہے تھے ……

    #110
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 164
    • Posts: 5438
    • Total Posts: 5602
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    غامدی صاحب نے شعور کی آنکھ مولانا مودودی کے آستانے میں ہی کھولی ہے ..ان کی تعلیمات سے متاثر بھی ہیں اور ان کا احترام بھی کرتے ہیں . لیکن کچھ معاملات میں ان سے علمی اختلافات ہیں ..جیسے کہ ہمیشہ سے علماء میں رہے ہیں اور جو بڑی نیچرل بات ہے رہی مولانا اسرار کی بات ..میرے والدین انہیں بہت سننتے تھے ..میں نے زیادہ نہیں سنا ..لیکن ٹی وی پر ایک پروگرام دیکھا تھا جس میں وہ ملک میں اسلامی نظام کے نفاز کی بات کر رہے تھے ..ان کا کہنا تھا کہ ملک میں اس کے لئے بہت خون خرابہ ہوگا ..جو بات مجھے پریشان کر گئی کہ کس کا خون خرابہ

    پریشان کر گئ ؟ جو حالیہ خون خرابہ ہورہا ہے ، اس پر تبصرہ نہیں فرمایا ۔ مطیع اللہ کا دن دھاڑے اسلام آباد کے مشہور علاقے سے زبردستی اغوا ، آپ کے نزدیک معمولی بات ہے ۔اور جس طرح ہمارے ملک میں سیکوریٹی ایجنسیوں نے جانفشانی سے سپریم کورٹ میں معصومانہ رپورٹ پیش کی ہے ، کیا وہ اتنی ہی سادہ بات ہے ؟ ان واقعات کے ہونے کے بعد اورمعلوم مجرموں کو پکڑنے سے حکومتی روایتی بزدلانا گریز کے بعد آپ کس منہ سے شاہراہ کشمیر کو شاہراہ سرینگر پکار سکتی ہیں ؟ اسرار احمد شاید ان ہی معلوم دہشتگروں سے آخری معرکہ کی بات کررہے ہوں جنہوں نے ملک میں خوف وہراس کا ماحول قائم کر رکھا ہے ۔

    میرا تاثر غامدی صاحب ، ڈاکٹر اسرار اور مولانہ موددی کے حوالے سے کچھ اسطرح ہے
    مولانہ موددی اور ڈاکٹر اسرار احمد دونوں ملک اور جہاں جہاں ممکن ہو شریعت کے نفاذ کے حامی ہیں اسکو تقاضہ ایمان سمجھتے ہیں شریعت کے نفاذ کے لئے ضروری ہے کہ طاقت میں آیا جائے اور اقتدار حاصل کیا جائے. کیوں کہ وہ سمجھتے ہیں کہ اسلامی نظام کے اصل فوائد عوام ا لناس تک اس وقت تک نہیں پہنچ سکتے جب تک شریعت پورے طریقہ سے نافظ نہ ہو جائے. جہاں ان دونوں اصحاب کا اختلاف ہوتا ہے وہ اقتدار کے حصول کا راستہ ہے . مولانہ موددی پاکستان کی حد تک اقتدار میں آنے کے لئے سیاست کا راستہ اپنانا چاہتے تھے اور انکا خیال تھا کہ عوام الناس تک اپنا پیغام پہنچا کر انکی حمایت سے اقتدار حاصل کرکے ملک میں قانون سازی کے ذرئیے شریعت کا نفاذ کیا جائے.
    ڈاکٹر اسرار احمد اقتدار کے حصول کے لئے سیاست کو ضروری نہیں سمجھتے ہیں کیوں کہ سیاست میں فیصلہ نظری لحاظ سے عوام کی مرضی کے طابع ہوتا ہے جبکہ شریعت کا نفاذ حکم خدا وندی کے مطابق لازمی ہے اور عوام کی حمایت کے حصول کا محتاج نہیں ہے لہذا وہ حصول اقتدار کے لئے تلوار کا استعمال درست سمجھتے ہیں اسکی مثال طالبان کے حصول اقتدار میں ڈھونڈھی جاسکتی ہے جنہوں نے اقتدار کے حصول میں حائل ہر رکاوٹ کو بزور طاقت ختم کردیا القاعدہ، الشباب، اخوان المسلمین، داعیش جیسی تنظیمیں شاید ڈاکٹر اسرار کے مکتبہ فکر سے زیادہ نزدیک ہیں
    غامدی صاحب کی راہیں ان دونوں اکابرین سے جوہری طور پر مختلف ہیں غامدی صاحب نفاذ شریعت کو تقاضہ اسلام نہیں سمجتھے ہیں لہٰذا وہ اقتدار کے حصول کی جدوجہد کو غیر ضروری سمجھتے ہیں انکے خیال میں قیامت تک مسلمانوں کا کام محض دین کا پیغام دیگر انسانوں تک پہنچانے تک محدود ہے اتفاق سے اگر کسی جگہ مسلمانوں کی اکثریت کی حکومت قائم ہو جائے تو شریعت کے نفاذ میں کویی مضایقہ نہیں ہے غامدی صاحب کے مطابق عسکری جہاد کی کویی گنجائش نہیں ہے اور حضور کے دور میں لڑی گئی جنگیں اتمام حجت کے قانون کے مطابق تھیں اور اس ہی زمانہ تک محدود تھیں

    پس تحریر- جیسا کہ ابتدائیہ میں عرض کیا ہے کہ درج بالا میری حتمی راے نہیں ہے بلکہ مختلف اوقات میں ان حضرات کو سن اور پڑھ کر ایک قسم کا میرا تاثر ہے .اگر کویی صاحب اس کی تصحیح کرنا چاہییں چشم ماروشن دل ماشاد

    #111
    Bawa
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 154
    • Posts: 15514
    • Total Posts: 15668
    • Join Date:
      24 Aug, 2016

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    میرا تاثر غامدی صاحب ، ڈاکٹر اسرار اور مولانہ موددی کے حوالے سے کچھ اسطرح ہے مولانہ موددی اور ڈاکٹر اسرار احمد دونوں ملک اور جہاں جہاں ممکن ہو شریعت کے نفاذ کے حامی ہیں اسکو تقاضہ ایمان سمجھتے ہیں شریعت کے نفاذ کے لئے ضروری ہے کہ طاقت میں آیا جائے اور اقتدار حاصل کیا جائے. کیوں کہ وہ سمجھتے ہیں کہ اسلامی نظام کے اصل فوائد عوام ا لناس تک اس وقت تک نہیں پہنچ سکتے جب تک شریعت پورے طریقہ سے نافظ نہ ہو جائے. جہاں ان دونوں اصحاب کا اختلاف ہوتا ہے وہ اقتدار کے حصول کا راستہ ہے . مولانہ موددی پاکستان کی حد تک اقتدار میں آنے کے لئے سیاست کا راستہ اپنانا چاہتے تھے اور انکا خیال تھا کہ عوام الناس تک اپنا پیغام پہنچا کر انکی حمایت سے اقتدار حاصل کرکے ملک میں قانون سازی کے ذرئیے شریعت کا نفاذ کیا جائے. ڈاکٹر اسرار احمد اقتدار کے حصول کے لئے سیاست کو ضروری نہیں سمجھتے ہیں کیوں کہ سیاست میں فیصلہ نظری لحاظ سے عوام کی مرضی کے طابع ہوتا ہے جبکہ شریعت کا نفاذ حکم خدا وندی کے مطابق لازمی ہے اور عوام کی حمایت کے حصول کا محتاج نہیں ہے لہذا وہ حصول اقتدار کے لئے تلوار کا استعمال درست سمجھتے ہیں اسکی مثال طالبان کے حصول اقتدار میں ڈھونڈھی جاسکتی ہے جنہوں نے اقتدار کے حصول میں حائل ہر رکاوٹ کو بزور طاقت ختم کردیا القاعدہ، الشباب، اخوان المسلمین، داعیش جیسی تنظیمیں شاید ڈاکٹر اسرار کے مکتبہ فکر سے زیادہ نزدیک ہیں غامدی صاحب کی راہیں ان دونوں اکابرین سے جوہری طور پر مختلف ہیں غامدی صاحب نفاذ شریعت کو تقاضہ اسلام نہیں سمجتھے ہیں لہٰذا وہ اقتدار کے حصول کی جدوجہد کو غیر ضروری سمجھتے ہیں انکے خیال میں قیامت تک مسلمانوں کا کام محض دین کا پیغام دیگر انسانوں تک پہنچانے تک محدود ہے اتفاق سے اگر کسی جگہ مسلمانوں کی اکثریت کی حکومت قائم ہو جائے تو شریعت کے نفاذ میں کویی مضایقہ نہیں ہے غامدی صاحب کے مطابق عسکری جہاد کی کویی گنجائش نہیں ہے اور حضور کے دور میں لڑی گئی جنگیں اتمام حجت کے قانون کے مطابق تھیں اور اس ہی زمانہ تک محدود تھیں پس تحریر- جیسا کہ ابتدائیہ میں عرض کیا ہے کہ درج بالا میری حتمی راے نہیں ہے بلکہ مختلف اوقات میں ان حضرات کو سن اور پڑھ کر ایک قسم کا میرا تاثر ہے .اگر کویی صاحب اس کی تصحیح کرنا چاہییں چشم ماروشن دل ماشاد

    گھوسٹ پروٹوکول بھائی

    آپ بھی پکّے پکّے مولوی نکلے ہیں

    :bigsmile:

    میں تو آپ کو اپنے جیسا دین و دنیا سے نا بلد ہی سمجھتا تھا

    :lol: :hilar:

    #112
    حسن داور
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 4310
    • Posts: 2846
    • Total Posts: 7156
    • Join Date:
      8 Nov, 2016

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    غامدی صاحب نے یہ نہیں کہا ..مرزا کی بات کرتے ہوئے انہوں نے تصوف پر بات کی تھی ..اور تمام نامی گرامی صوفیاء کرام کا ذکر کیا تھا ..آپ ان کی ویڈیوز دیکھ لیں..آپ خود دیکھ لیں ..میں اتنا تفصیلی لکھنے سے رہی

    چندا ..ذرا صوفی ازم کے بارے معلومات اکٹھی کر لو ..پھر پوچھوں گی ..میری تو اپنی آنکھیں کھل گئیں …مرزا قادیانی نے وہاں سے ہی لیا ہے

    ریڈ ہائی لائٹ لائن کے بارے میں آپ کیا کہتی ہیں …. آپ ہی کہ رہی ہیں کے مرزا غلام احمد قادیانی نے وہاں سے لیا ہے (وہاں کا مطلب تصوف یا ابن عربی کے بیان کردہ الفاظوں سے ہے) …. یا آپ کا ماننا ہے یا غامدی کا ؟؟؟

    #113
    Zinda Rood
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 22
    • Posts: 2485
    • Total Posts: 2507
    • Join Date:
      3 Apr, 2018
    • Location: NorthPole

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    مودودی صاحب نے قران کی ایک آیت کی تشریح کرتے ہوئے فرمایا ہے کہ نابالغ بچیوں کے ساتھ نکاح کرنا اور جنسی تعلقات رکھنا عین اسلامی ہے اور اس کی مخالفت کرنے کا حق کسی مسلمان کو نہیں۔۔

    ۔

    ۔

    ۔

    سرکارِ دو عالم کی چھ سالہ عائشہ کے ساتھ شادی شاید اسی آیت کی روشنی میں قرار پائی ہو۔۔ واللہ اعلم بالصواب۔۔ وما علینا الاالبلاغ المبین۔

    • This reply was modified 11 months, 3 weeks ago by Zinda Rood.
    #114
    Believer12
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 398
    • Posts: 9093
    • Total Posts: 9491
    • Join Date:
      14 Sep, 2016

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    مودودی صاحب نے قران کی ایک آیت کی تشریح کرتے ہوئے فرمایا ہے کہ نابالغ بچیوں کے ساتھ نکاح کرنا اور جنسی تعلقات رکھنا عین اسلامی ہے اور اس کی مخالفت کرنے کا حق کسی مسلمان کو نہیں۔۔ ۔ ۔ ۔

    سرکارِ دو عالم کی چھ سالہ عائشہ کے ساتھ شادی شاید اسی آیت کی روشنی میں قرار پائی ہو۔۔ واللہ اعلم بالصواب۔۔ وما علینا الاالبلاغ المبین۔

    آپ نے مودودی کا جو اقتباس اسی کی کتاب سے دیا ہے اگر مودودی نے یہ بات کہی تھی کہ نابالغ بچیوں سے خاوند کا جسمانی تعلق جائز ہے تو وہ لعنتی تھا اور اس وقت جہنم میں  انہی شیطانی جنسی خیالات کی وجہ سے جل رہا ہوگا، نبی کریم :pbuh: نے کسی بھی نابالغ لڑکی سے شادی نہیں کہ ہاں نکاح ہوسکتا ہے مگر رخصتی بلوغت کے بعد ہوگی

    جہاں تک اس بات کا تعلق ہے کہ حضرت عائشہ کا نکاح نو سال کی عمر میں ہوا تھا تو وہ صرف نکاح تھا جو ایک قسم کی روک سمجھ لیں مگر ان کی رخصتی انکی بلوغت کے بعد ہی ہوی تھی اب اس بات پر کوی بھی حد نہیں کہ لازمی اٹھارہ میں ہی لڑکی اور لڑکا بلوغت کو پنہچیں گے بعض بارہ تیرہ اور گیارہ سال کی عمر میں بھی بلوغت کو پنہچ جاتی ہیں، یہ اتنی عام بات ہے کہ کسی بھی لیڈی ڈاکٹر سے پوچھ لیں بتا دے گی کہ اس کے علم میں کتنی لڑکیاں ہونگی جو بارہ کی عمر میں بالغ ہوگئیں

    حضرت عائشہ ام المومنین تھیں ان کے بارے زیادہ ذکر نہ ہی کیاجاے تو بہتر ہے، مولویوں کی سو مجبوریاں ہوتی ہیں مساجد  اور مدرسے بھی چلانے ہوتے ہیں ان پر اظہار خیال کرکے بندہ اپنا وقت ہی ضائع کرے گا

    #115
    Zaidi
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 19
    • Posts: 938
    • Total Posts: 957
    • Join Date:
      30 May, 2020
    • Location: دل کی بستی

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    سر جی … اپ سے مادام والی تعصبانہ رویہ کی توقع نہیں تھی …-ویڈیو میں اگر آپ نے غامدی صاحب کا نقطہ نظر پورا سن لیا ہوتا تو آپ کو مجھ سے یہ سوال کرنے کی گنجائش نہ رہتی … – اس ویڈیو میں چار علما بیٹھے ہیں … جس میں غامدی کا نقطہ نظر پورا کا پورا بیان کیا ہے … ویڈیو پروگرام لمبا ہے .. باقی لوگوں کی آرا پوسٹ کرنے کا مقصد نہیں تھا ….غامدی صاحب کے مطابق مسلمانوں میں تصوف کی دو ارا پائی جاتی ہیں.. ایک تصوف جس میں لوگ اس کو دین کی سب اعلی تعبیر سمجتھے ہیں .. اور دوسری مخالف والی … .. .. اور یہ بات کوئی ان کے بچپنے کی نہیں بلکے پروگام الف میں ان کے بال سفید ہیں تب انہوں نے اپنا نقطہ نظر بیان کیا تھا … …. اور پھر انہوں نے کچھ شخصیات جن کے تصوف سے بہت متاثر ہیں ان کے نام تصنیف کے ساتھ لئے ہیں جن کو وہ بہت پڑھتے ہیں …. جن میں چشتی ، غزالی اور کچھ بزرگوں کے نام لئے ہیں… اور کہتے ہیں ان کی وجہ سے وہ تصوف قابل احترام ہے اور دین کا حصہ سمجتھے ہیں ؟… ….. ایسی ہی وی ڈیو جس میں تھریڈ لگا ہے جس میں شیخ اعرابی کا نقطہ نظر پیش کر رہے تھے ……

    انسیف بھائ ،میری رائے کے مطابق اس وڈیو میں کہیں بھی غامدی صاحب نے یہ نہیں کہہا کہ وہ تصوف کے نقطہ نظر سے متفق ہیں، کم ازکم وڈیو کے اس حصے میں وہ کہیں بھی یہ کہتے ہوئے نہیں پائے گئے ہیں ۔ بلاشبہ انہوں نے اس کے قابل احترام ہونے کا کہا ہے لیکن اس حوالے سے وہ تو عیسائیت کو بھی قابل احترام سمجھتے ہیں ۔ معلوم نہیں آپ کیوں خفا ہو رہے ہیں ، جیسا کہ میں نے عرض کیا ایک مبہم وڈیو کے دس منٹ کے حصے کو ثبوت کے طور پر پیش کرکے ان کے مکمل انداز فکر کا احاطہ نہہیں کیا جاسکتا ۔ اس سلسلے میں کسی واضح ثبوت کی ضرورت ہے ، اگر اس سے بہتر اور واضح وڈیو موجود ہے تو ضرور شیئر کریں ۔ مجھے ان اس وڈیو سے اس بات کا ٹھوس ثبوت نہیں ملتا ۔

    #116
    Zaidi
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 19
    • Posts: 938
    • Total Posts: 957
    • Join Date:
      30 May, 2020
    • Location: دل کی بستی

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    میرا تاثر غامدی صاحب ، ڈاکٹر اسرار اور مولانہ موددی کے حوالے سے کچھ اسطرح ہے مولانہ موددی اور ڈاکٹر اسرار احمد دونوں ملک اور جہاں جہاں ممکن ہو شریعت کے نفاذ کے حامی ہیں اسکو تقاضہ ایمان سمجھتے ہیں شریعت کے نفاذ کے لئے ضروری ہے کہ طاقت میں آیا جائے اور اقتدار حاصل کیا جائے. کیوں کہ وہ سمجھتے ہیں کہ اسلامی نظام کے اصل فوائد عوام ا لناس تک اس وقت تک نہیں پہنچ سکتے جب تک شریعت پورے طریقہ سے نافظ نہ ہو جائے. جہاں ان دونوں اصحاب کا اختلاف ہوتا ہے وہ اقتدار کے حصول کا راستہ ہے . مولانہ موددی پاکستان کی حد تک اقتدار میں آنے کے لئے سیاست کا راستہ اپنانا چاہتے تھے اور انکا خیال تھا کہ عوام الناس تک اپنا پیغام پہنچا کر انکی حمایت سے اقتدار حاصل کرکے ملک میں قانون سازی کے ذرئیے شریعت کا نفاذ کیا جائے. ڈاکٹر اسرار احمد اقتدار کے حصول کے لئے سیاست کو ضروری نہیں سمجھتے ہیں کیوں کہ سیاست میں فیصلہ نظری لحاظ سے عوام کی مرضی کے طابع ہوتا ہے جبکہ شریعت کا نفاذ حکم خدا وندی کے مطابق لازمی ہے اور عوام کی حمایت کے حصول کا محتاج نہیں ہے لہذا وہ حصول اقتدار کے لئے تلوار کا استعمال درست سمجھتے ہیں اسکی مثال طالبان کے حصول اقتدار میں ڈھونڈھی جاسکتی ہے جنہوں نے اقتدار کے حصول میں حائل ہر رکاوٹ کو بزور طاقت ختم کردیا القاعدہ، الشباب، اخوان المسلمین، داعیش جیسی تنظیمیں شاید ڈاکٹر اسرار کے مکتبہ فکر سے زیادہ نزدیک ہیں غامدی صاحب کی راہیں ان دونوں اکابرین سے جوہری طور پر مختلف ہیں غامدی صاحب نفاذ شریعت کو تقاضہ اسلام نہیں سمجتھے ہیں لہٰذا وہ اقتدار کے حصول کی جدوجہد کو غیر ضروری سمجھتے ہیں انکے خیال میں قیامت تک مسلمانوں کا کام محض دین کا پیغام دیگر انسانوں تک پہنچانے تک محدود ہے اتفاق سے اگر کسی جگہ مسلمانوں کی اکثریت کی حکومت قائم ہو جائے تو شریعت کے نفاذ میں کویی مضایقہ نہیں ہے غامدی صاحب کے مطابق عسکری جہاد کی کویی گنجائش نہیں ہے اور حضور کے دور میں لڑی گئی جنگیں اتمام حجت کے قانون کے مطابق تھیں اور اس ہی زمانہ تک محدود تھیں پس تحریر- جیسا کہ ابتدائیہ میں عرض کیا ہے کہ درج بالا میری حتمی راے نہیں ہے بلکہ مختلف اوقات میں ان حضرات کو سن اور پڑھ کر ایک قسم کا میرا تاثر ہے .اگر کویی صاحب اس کی تصحیح کرنا چاہییں چشم ماروشن دل ماشاد

    آپ نے تقریبا” ٹھیک ٹھیک دونوں کے انداز فکر کی تعبیر کی ہے ، ڈاکٹر اسرار احمد کے نزدیک ،پاکستان کی حد تک، ایسی کون کون سی طاقتیں موجود ہیں، جن کے ھاتھ میں اصل اقتدارہے اور جو آج تک پاکستان کے ٹھیکیدار بنے ہوئے ہیں اور ڈاکٹر صاحب کی رائے میں اسلامی شرعی نظام کی راہ میں رکاوٹ ہیں ؟۔۔

    #117
    نادان
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 109
    • Posts: 15156
    • Total Posts: 15265
    • Join Date:
      31 Aug, 2016

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    چندا ..ذرا صوفی ازم کے بارے معلومات اکٹھی کر لو ..پھر پوچھوں گی ..میری تو اپنی آنکھیں کھل گئیں …مرزا قادیانی نے وہاں سے ہی لیا ہے

    ریڈ ہائی لائٹ لائن کے بارے میں آپ کیا کہتی ہیں …. آپ ہی کہ رہی ہیں کے مرزا غلام احمد قادیانی نے وہاں سے لیا ہے (وہاں کا مطلب تصوف یا ابن عربی کے بیان کردہ الفاظوں سے ہے) …. یا آپ کا ماننا ہے یا غامدی کا ؟؟؟

    میرا ..کچھ کچھ ..غامدی صاحب بے تو صرف بیان کیا ہے کہ صوفی ازم ہے کیا .

    #118
    نادان
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 109
    • Posts: 15156
    • Total Posts: 15265
    • Join Date:
      31 Aug, 2016

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    میرا تاثر غامدی صاحب ، ڈاکٹر اسرار اور مولانہ موددی کے حوالے سے کچھ اسطرح ہے مولانہ موددی اور ڈاکٹر اسرار احمد دونوں ملک اور جہاں جہاں ممکن ہو شریعت کے نفاذ کے حامی ہیں اسکو تقاضہ ایمان سمجھتے ہیں شریعت کے نفاذ کے لئے ضروری ہے کہ طاقت میں آیا جائے اور اقتدار حاصل کیا جائے. کیوں کہ وہ سمجھتے ہیں کہ اسلامی نظام کے اصل فوائد عوام ا لناس تک اس وقت تک نہیں پہنچ سکتے جب تک شریعت پورے طریقہ سے نافظ نہ ہو جائے. جہاں ان دونوں اصحاب کا اختلاف ہوتا ہے وہ اقتدار کے حصول کا راستہ ہے . مولانہ موددی پاکستان کی حد تک اقتدار میں آنے کے لئے سیاست کا راستہ اپنانا چاہتے تھے اور انکا خیال تھا کہ عوام الناس تک اپنا پیغام پہنچا کر انکی حمایت سے اقتدار حاصل کرکے ملک میں قانون سازی کے ذرئیے شریعت کا نفاذ کیا جائے. ڈاکٹر اسرار احمد اقتدار کے حصول کے لئے سیاست کو ضروری نہیں سمجھتے ہیں کیوں کہ سیاست میں فیصلہ نظری لحاظ سے عوام کی مرضی کے طابع ہوتا ہے جبکہ شریعت کا نفاذ حکم خدا وندی کے مطابق لازمی ہے اور عوام کی حمایت کے حصول کا محتاج نہیں ہے لہذا وہ حصول اقتدار کے لئے تلوار کا استعمال درست سمجھتے ہیں اسکی مثال طالبان کے حصول اقتدار میں ڈھونڈھی جاسکتی ہے جنہوں نے اقتدار کے حصول میں حائل ہر رکاوٹ کو بزور طاقت ختم کردیا القاعدہ، الشباب، اخوان المسلمین، داعیش جیسی تنظیمیں شاید ڈاکٹر اسرار کے مکتبہ فکر سے زیادہ نزدیک ہیں غامدی صاحب کی راہیں ان دونوں اکابرین سے جوہری طور پر مختلف ہیں غامدی صاحب نفاذ شریعت کو تقاضہ اسلام نہیں سمجتھے ہیں لہٰذا وہ اقتدار کے حصول کی جدوجہد کو غیر ضروری سمجھتے ہیں انکے خیال میں قیامت تک مسلمانوں کا کام محض دین کا پیغام دیگر انسانوں تک پہنچانے تک محدود ہے اتفاق سے اگر کسی جگہ مسلمانوں کی اکثریت کی حکومت قائم ہو جائے تو شریعت کے نفاذ میں کویی مضایقہ نہیں ہے غامدی صاحب کے مطابق عسکری جہاد کی کویی گنجائش نہیں ہے اور حضور کے دور میں لڑی گئی جنگیں اتمام حجت کے قانون کے مطابق تھیں اور اس ہی زمانہ تک محدود تھیں پس تحریر- جیسا کہ ابتدائیہ میں عرض کیا ہے کہ درج بالا میری حتمی راے نہیں ہے بلکہ مختلف اوقات میں ان حضرات کو سن اور پڑھ کر ایک قسم کا میرا تاثر ہے .اگر کویی صاحب اس کی تصحیح کرنا چاہییں چشم ماروشن دل ماشاد

    میں آپ کی بات سے سو فیصد متفق ہوں ..

    شکر ہے کہیں تو ایک پیج پر پنڈی اور کراچی ایک ہوئے

    :bigsmile:

    #119
    نادان
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 109
    • Posts: 15156
    • Total Posts: 15265
    • Join Date:
      31 Aug, 2016

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    پریشان کر گئ ؟ جو حالیہ خون خرابہ ہورہا ہے ، اس پر تبصرہ نہیں فرمایا ۔ مطیع اللہ کا دن دھاڑے اسلام آباد کے مشہور علاقے سے زبردستی اغوا ، آپ کے نزدیک معمولی بات ہے ۔اور جس طرح ہمارے ملک میں سیکوریٹی ایجنسیوں نے جانفشانی سے سپریم کورٹ میں معصومانہ رپورٹ پیش کی ہے ، کیا وہ اتنی ہی سادہ بات ہے ؟ ان واقعات کے ہونے کے بعد اورمعلوم مجرموں کو پکڑنے سے حکومتی روایتی بزدلانا گریز کے بعد آپ کس منہ سے شاہراہ کشمیر کو شاہراہ سرینگر پکار سکتی ہیں ؟ اسرار احمد شاید ان ہی معلوم دہشتگروں سے آخری معرکہ کی بات کررہے ہوں جنہوں نے ملک میں خوف وہراس کا ماحول قائم کر رکھا ہے ۔

    زیدی صاحب ..ہر بات میں فوج کو نہیں لاتے ..ملک میں آندھی طوفان آئے تو لازمی نہیں فوج کا کردار ہوگا

    یہاں اسرار صاحب ملک میں شریعت نافذ کرنے کے بارے میں اپنے خیالات کا اظہار کر رہے ہیں ..جو ان کے نزدیک تلوار کے زور پر ہی ممکن ہے ..یعنی طالبانی نظام ..یعنی جو سر  نہ ڈھکے ..داڑھی نہ رکھے اس کا سر قلم کر دو ..اسلام اس طریقے سے نہیں آیا تھا ..دعوت کے ذریعے پیغمبر نے اللہ  کا پیغام پہنچایا تھا

    صرف الله کا رسول الله کی اجازت سے صرف اپنے زمانے میں منکروں کو سزا دے سکتا تھا .

    اب ایسی کوئی صورت نہیں ہے

    #120
    نادان
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 109
    • Posts: 15156
    • Total Posts: 15265
    • Join Date:
      31 Aug, 2016

    Re: ghamidi Accepts Qadiani Viewpoint – khatam e nabuwat

    …. آپ خود کو غامدی صاحب کی بہت بڑی فین سمجی ہیں لیکن اسلام کی طرح غامدی کے مطلق بھی آپ کا علم کوئی خاص نہیں ہے …میں غامدی صاحب کی ویڈیو لگا رہا ہوں یہ ان کے اپنے الفاظ ہیں ….. “جب کے مرے والد قادری جنید چشتی کے شیخ تھے میں نے اپنے دودھ کے دانت بھی اسی پر توڑے ہے اور ابتدائی تعلیم بھی ارباب تصوف سے پائی ہے .. مرے والد کے شیخ بھی مجھ پر خاص عنایات فرماتے تھے .. اور آپ نے یہ اتنی بڑی بات بغیر تحقیق کیسے لکھ دی …. میڈم آپ کو اسلام کے ساتھ ساتھ غامدی کے اوپر بھی تحقیق کرنی چاہے ….
    :hilar: :lol: مادام جو ویڈیو میں نے آپ کے غامدی صاحب کے اوپر ایک متضاد بیان کے اوپر لگائی ہے اس کے بارے میں کیا کہنا پسند کریں گی …

    مادام بیچاری کیا کہے .

    یا تو آپ کی سمجھ کم ہے یا آپ ہیرا  پھیری کرتے ہیں ..دانستہ

    میرا خیال سمجھ بارے زیادہ ہے ..جب گھوسٹ صاحب نے گائے کے مسلہ  پر ہندوں کے مسلمانوں پر تشدد کی وڈیو لگائی تھی اور جو آپ کا ری ایکشن تھا ..اس بارے لگتا ہے آپ کو سمجھانا کسی کے بس کی بات نہیں ..آپ سے عقلی  لیول پر گفتگو پہاڑ  سے نہر کھودنے سے زیادہ مشکل ہے

    :serious:

    Ghost Protocol

Viewing 20 posts - 101 through 120 (of 272 total)

You must be logged in to reply to this topic.

×
arrow_upward DanishGardi