Home Forums Non Siasi گوجرانوالہ کے قریب پولیس کی موجودگی میں احمدیوں کی عبادت گاہ کے مینار مسمار کر دیے گئے

Viewing 20 posts - 1 through 20 (of 95 total)
  • Author
    Posts
  • حسن داور
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Expert
    #1

    صوبہ پنجاب کے شہر گوجرانوالہ کے قریب ایک مذہبی جماعت کی شکایت پر پولیس نے اس کے کارکنان کے ہمراہ احمدی برادری کی ایک عبادت گاہ کی چھت پر موجود مینار مسمار کر دیے ہیں۔
    پولیس کی اس کارروائی میں تحصیل میونسپل ایڈمنسٹریشن نوشہرہ ورکاں کے اہلکاروں نے بھی حصہ لیا۔ گوجرانولہ پولیس کے ترجمان کا کہنا ہے کہ یہ کارروائی علاقے میں ’کشیدگی ختم کرنے کے لیے کی گئی ہے۔
    تاہم جماعت احمدیہ پاکستان کے ترجمان عامر محمود نے پولیس کی اس کارروائی کو غیر قانونی قرار دیتے ہوئے کہا کہ پولیس کے پاس ایسا کرنے کا کوئی قانونی اختیار نہیں تھا۔
    پولیس کو کسی عدالت نے حکم جاری نہیں کیا تھا کہ وہ ہمارے مینار گرائے۔
    خیال رہے کہ پاکستان کے قانون میں احمدی برادری کو غیر مسلم قرار دیا گیا ہے، وہ خود کو بالواسطہ یا بلاواسطہ مسلمان نہیں کہلا سکتے، اور اپنی عبادت گاہ کو مسجد کہیں یا اذان دیں تو ایسے شخص کو تین برس قید کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

    واقعہ کب اور کیسے پیش آیا؟

    رواں سال 25 جنوری کو نوشہرہ ورکاں کے ایک قریبی گاؤں گرمولا ورکاں کے شہری سجاد احمد ورک نے ڈپٹی کمشنر گوجرانولہ کو درخواست دی جس میں دعویٰ کیا گیا کہ ان کے علاقے میں احمدی برداری نے ایک ا سکول کھول رکھا ہے جہاں ’وہ سرعام اپنے مذہب کی تبلیغ کرتے‘ ہیں۔
    انھوں نے درخواست میں الزام لگایا کہ یہاں ایک عبادت گاہ بھی موجود ہے جسے پاکستان کے قوانین کے خلاف مسلمانوں کی عبادت گاہ کے طور پر ظاہر کیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ قبرستان کی ایک زمین پر تنازع سے متعلق درخواست میں الزام لگایا گیا کہ ’مسلمانوں کی ملکیت اراضی پر قبضہ کیا گیا ہے۔
    تاہم احمدی برداری ان الزامات کی تردید کرتی ہے۔
    ڈپٹی کمشنر نے یہ درخواست پولیس کے حوالے کی اور ڈی ایس پی نوشہرہ ورکاں خالد اسلم کے مطابق انھوں نے دونوں فریقین کو اپنے دفتر طلب کیا تھا اور دونوں کا موقف سنا تھا۔
    ١٧ مارچ کو ڈی ایس پی کے مطابق پولیس نے ’اسکول کا رجسٹریشن سرٹیفکیٹ نہ ہونے‘ کی بنا پر اس ا سکول کو بند کیا اور ساتھ ہی ساتھ عبادت گاہ کے مینار توڑ دیے اور عبادت گاہ کے سامنے لکھے کلمے کو مٹا دیا۔ اس عمل میں پولیس اہلکاروں کے ساتھ بلدیہ کے ملازمین اور اس مذہبی گروہ کے کارکن شامل تھے۔
    جماعت احمدیہ کے اراکین سنہ انیس سو چوہتر سے پہلے مسلمانوں کا ہی ایک فرقہ گردانے جاتے تھے لیکن ذوالفقار علی بھٹو کے دور میں پارلیمان نے انھیں غیر مسلم قرار دے دیا تھا
    ڈی ایس پی خالد اسلم کا کہنا ہے کہ قانون کے مطابق احمدی برادری کی عبادت گاہ مسلمانوں کی مسجد سے مشابہہ نہیں ہونی چاہیے، اس لیے تھانہ نوشہرہ ورکاں پولیس کے اہلکاروں اور بلدیہ کے ملازمین کی مدد سے اس عبادت گاہ کی چھت پر مینار مسمار کردیے گئے اور عبادت گاہ کے سامنے لکھے کلمہ طیبہ کو بھی مٹا دیا گیا ہے۔
    انتظامیہ نے شرپسند عناصر کے غیر قانونی مطالبات تسلیم کیے
    جماعت احمدیہ کے ترجمان عامر محمود نے ان الزامات کو رد کرتے ہوئے بتایا ہے کہ سکول کی رجسٹریشن کا معاملہ محکمہ تعلیم میں چل رہا ہے اور کسی مسئلے کی صورت میں محکمہ تعلیم ہی اس پر کارروائی کرنے کا مجاز ارادہ تھا۔
    پولیس کے پاس کوئی اختیار نہیں کہ وہ ا سکولوں کی رجسٹریشن چیک کرے اور انھیں بند کرے۔
    ان کا موقف ہے کہ پولیس نے تمام اقلیتوں کی عبادت گاہوں کو تحفظ فراہم کرنے کے سپریم کورٹ کے فیصلے کی خلاف ورزی کی ہے۔ انھوں نے الزام عائد کیا کہ ’سرکاری انتظامیہ شرپسند عناصر کے غیر قانونی مطالبات تسلیم کرلیتی ہے اور ان کی خوشنودی کے مطابق کام کیا جاتا ہے۔
    جماعت احمدیہ پاکستان نے کہا ہے کہ وہ اس معاملے سے وفاقی اور صوبائی حکومت کو آگاہ کریں گے۔
    ڈی ایس پی کا کہنا ہے کہ فریقین کے مابین اراضی کی ملکیت کا کیس سول جج مسعود زمان گوندل کی عدالت میں زیر سماعت ہے جس کی آئندہ تاریخ سماعت 20 مارچ مقرر ہے۔ دونوں فریقین کو پابند کیا گیا ہے کہ وہ عدالتی فیصلہ آنے تک کوئی جھگڑا نہیں کریں گے۔
    پولیس کا موقف ہے کہ اگر ا سکول بند نہ کروایا جاتا اور اس عبادت گاہ کے مینار گرا کر وہاں سے کلمہ نہ مٹایا جاتا تو علاقے میں ’کشیدگی بڑھنے کا خدشہ تھا۔
    علاقے میں احمدی برداری سے تعلق رکھنے والے کچھ افراد نے نام نہ ظاہر کرنے کی شرط پر بتایا کہ وہ خود نقص امن نہیں چاہتے، اسی وجہ سے انھوں نے مخالف فریق کے تمام مطالبات کسی مزاحمت کے بغیر تسلیم کرلیے ہیں۔
    گرمولا ورکاں اور اس سے ملحقہ کچھ دیہاتوں میں احمدی برادری کے سینکڑوں گھرانے آباد ہیں اور دیہی علاقہ ہونے کی وجہ سے لوگوں کی اکثریت کاشتکاری سے وابستہ ہے۔ اس برادری کے کچھ افراد زمیندار ہیں۔
    پاکستان میں اس نوعیت کے واقعات اس سے قبل بھی پیش آچکے ہیں جن میں احمدی برادری کے افراد یا عبادت گاہوں کو توہین مذہب یا قانون کی خلاف ورزی کے الزام میں نقصان پہنچایا گیا ہے۔

    احمدیوں سے متعلق پاکستان میں قانون

    واضح رہے کہ جماعت احمدیہ کے اراکین سنہ انیس سو چوہتر سے پہلے مسلمانوں کا ہی ایک فرقہ گردانے جاتے تھے لیکن ذوالفقار علی بھٹو کے دور میں پارلیمان نے انھیں غیر مسلم قرار دے دیا تھا۔ سنہ انیس سو چوراسی میں صدر جنرل ضیا الحق کے دور میں ان کے خلاف ایک آرڈیننس جاری ہوا تھا۔
    تعزیرات پاکستان کی دفعہ دو سو اٹھانوے سی اور دو سو اٹھانوے بی کے تحت اب جماعت احمدیہ کا کوئی رکن خود کو مسلمان ظاہر کرے، اپنی عبادت گاہوں کے لیے کوئی اسلامی اصطلاح استعمال کرے، اسلام وعلیکم کہے یا بسم اللہ پڑھ لے، اپنی عبادت گاہ کو مسجد کہے یا اذان دے تو اسے تین برس قید کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔
    جماعت احمدیہ کے اراکین اس قانون کو ناانصافی پر مبنی قرار دیتے ہیں۔ انسانی حقوق کی بعض تنظیمیں ان قوانین کے خاتمے کا مطالبہ کرتی رہی ہیں۔

    https://www.bbc.com/urdu/pakistan-56457981

    Anjaan
    Participant
    Offline
    • Professional
    #2

    مجھے ایک پاکستانی کہلانے پر شرم محسوس ہوتی ہے –

    کہنے کو تو ہم مسلمان ہیں لیکن خدا نے جو ہمیں اپنی کتاب (قرآن) دی ہے اسے نہ ہمارے ملا اور نہ ہم کبھی ہم پڑھتے ہیں -خدا نے اسی کتاب مے کہا ہے

    “لکم دینْکم ولے یادین “

    تمھارے لئے تمہارا مذھب مرے لئے میرا مذھب.

    اے پاکستان کے مسلمانو ڈوب مرو -شرم سے ڈوب مرو

    اس فورم پر بھی کوئی تو ہوگا جو یہ کہےگا – کے یہ اچھا نہیں ہوا

    Anjaan
    Participant
    Offline
    • Professional
    #3
    صوبہ پنجاب کے شہر گوجرانوالہ کے قریب ایک مذہبی جماعت کی شکایت پر پولیس نے اس کے کارکنان کے ہمراہ احمدی برادری کی ایک عبادت گاہ کی چھت پر موجود مینار مسمار کر دیے ہیں۔
    پولیس کی اس کارروائی میں تحصیل میونسپل ایڈمنسٹریشن نوشہرہ ورکاں کے اہلکاروں نے بھی حصہ لیا

    How shameful

    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Expert
    #4
    پاکستانی مسلمانوں کی انتہائی غالب اکثریت کے لئے یہ شرمناک حرکت نہیں ہے بلکہ عین ثواب کا باعث ہے
    پاکستان میں صرف احمدیوں کے خلاف اسطرح کی شرمناک حرکتیں نہیں ہوتیں دیگر گروہوں کے خلاف بھی ہوتیں ہیں
    مشاہدے میں آیا ہے کہ جو لوگ احمدیوں کے خلاف اسطرح کی شرمناک حرکتوں پر بین ڈالتے ہیں اور اہل فورم سے اجتماعی بین کی تمنا رکھتے ہیں وہ خود دیگر گروہوں کے خلاف ہونے والی شرمناک حرکتوں پر لڈی ڈالتے ہیں
    فورم انتظامیہ سے بھی گزارش ہے کہ فورم پر ایک احمدی کارنر مختص کردیا جائے تاکہ احمدیوں کے خلاف ہونے والے ہر واقعہ کا یہاں ریکارڈ رکھا جاسکے .
    Anjaan
    Participant
    Offline
    • Professional
    #5
    دیگر گروہوں کے خلاف بھی ہوتیں ہیں

    BOAT is the answer for Deegar Groh

    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Expert
    #6

    I rest my case your honour.

    :bigsmile: :bigsmile: :bigsmile:

    Anjaan
    Participant
    Offline
    • Professional
    #7

    CASE DISMISSED

    shami11
    Participant
    Offline
    • Expert
    #8
    انجان صاحب – آپ اس فورم کے سب سے زیادہ پڑھے لکھے ، با ادب ، جہاندیدہ انسان ہیں ، پھر آپ اس لچے گھوسٹ پروٹوکول کے منہ کیوں لگتے ہیں ؟

    :serious:

    دیگر گروہوں کے خلاف بھی ہوتیں ہیں BOAT is the answer for Deegar Groh
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Expert
    #9

    Due to similar bigotry and hypocrisy, case of Ahmadis is dismissed by the esteemed members so please no more randi rona.

    :bigsmile: :bigsmile: :bigsmile:

    Anjaan
    Participant
    Offline
    • Professional
    #10

    Stick to the TOPIC

    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Expert
    #11

    A bigot is a bigot is a bigot.

    :bigsmile: :bigsmile: :bigsmile:

    Anjaan
    Participant
    Offline
    • Professional
    #12

    STICK TO THE BLODDY TOPIC

    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Expert
    #13

    STICK TO THE BLODDY TOPIC

    University please?

    :bigsmile: :bigsmile: :bigsmile:

    Anjaan
    Participant
    Offline
    • Professional
    #14

    STICK TO THE BLOODY TOPIC

    Anjaan
    Participant
    Offline
    • Professional
    #15

    University please? :bigsmile: :bigsmile: :bigsmile:

    ALTAF 

    کک باکسر
    Participant
    Offline
    • Advanced
    #16
    انجان صاحب – آپ اس فورم کے سب سے زیادہ پڑھے لکھے ، با ادب ، جہاندیدہ انسان ہیں ، پھر آپ اس لچے گھوسٹ پروٹوکول کے منہ کیوں لگتے ہیں ؟ :serious:

    You’re a good deputy.
    :yapping:

    کک باکسر
    Participant
    Offline
    • Advanced
    #17

    STICK TO THE BLOODY TOPIC

    تم پیدائشی دماغی کھسکے ہو یا بعد میں کوئی کورس کیا تھا؟ 

    Asking for a friend. 

    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Expert
    #18

    ALTAF

    Bloddy bigot does not deserve this, hence degree is cancelled. 

    :bigsmile: :bigsmile: :bigsmile:

    Anjaan
    Participant
    Offline
    • Professional
    #19
    انجان صاحب – آپ اس فورم کے سب سے زیادہ پڑھے لکھے ، با ادب ، جہاندیدہ انسان ہیں ، پھر آپ اس لچے گھوسٹ پروٹوکول کے منہ کیوں لگتے ہیں ؟ :serious:

    I am sorry Shami Ji- Got carried away. This is a very serious topic and your friend wanted to hijack it by bringing some Groh(s) of his own.

    • This reply was modified 1 year, 8 months ago by Anjaan.
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Expert
    #20
    I am sorry Shami Ji- Got carried away. This isa very serious topic and your friend wanted to hijack it by bringing some Groh(s) of his own.

    I just wanted to expose your crocodile tears one more time, thanks for being carried away.

    :bigsmile: :bigsmile: :bigsmile:

Viewing 20 posts - 1 through 20 (of 95 total)

You must be logged in to reply to this topic.

×
arrow_upward DanishGardi