Home Forums Siasi Discussion عوام نے فیصلہ دے دیا، سلیکٹڈ کو اب جانا ہوگا، آصفہ بھٹو زرداری

  • This topic has 2 replies, 3 voices, and was last updated 2 years ago by unsafe. This post has been viewed 344 times
Viewing 3 posts - 1 through 3 (of 3 total)
  • Author
    Posts
  • حسن داور
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Expert
    #1

    پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کی ہمشیرہ آصفہ بھٹو زرداری اپنے سیاسی کیریئر کا آغاز کرتے ہوئے کہا ہے کہ آج عوام نے حکومت کے خلاف فیصلہ دے دیا، اب حکومت کو جانا ہوگا
    ملتان میں گھنٹہ گھر چوک پر پی ڈی ایم کے جلسے میں پیپلز پارٹی کی نمائندگی کرنے والی آصفہ بھٹو زرداری نے کہا کہ میں خراج تحسین پیش کرتی ہوں کہ سلکیٹڈ حکومت کے ظلم و جبر کے باوجود اتنی بڑی تعداد میں جمع ہوئے۔
    انہوں نے کہا کہ آج عوام نے حکومت کے خلاف فیصلہ دے دیا، اب حکومت کو جانا ہوگا۔
    انہوں نے پیپلز پارٹی کے یوم تاسیس پر جیالوں کی آمد پر ان کا شکریہ بھی ادا کیا۔
    آصفہ بھٹو زرداری نے کہا کہ ذوالفقار علی بھٹو نے اس پارٹی کی بنیاد عوامی جمہوری اور فلاحی ریاست کے لیے رکھی تھی اور وہ اس مقصد سے کبھی پیچھے نہیں ہٹے۔
    انہوں نے کہا کہ بے نظیر بھٹو نے اپنے والد کا مشن جاری رکھا اور اس راہ میں شہادتیں قبول کیں۔
    آصفہ بھٹو زرداری نے کہا کہ سابق صدر آصف علی زرداری نے 18ویں ترمیم کے ذریعے عوامی جدوجہد جاری رکھی۔
    انہوں نے کہا کہ میں ایسے وقت پر آپ کے سامنے آئی ہوں جب پارٹی چیئرمین اور میرے بھائی بلاول کورونا وائرس میں مبتلا ہیں۔
    آصفہ بھٹو زرداری نے کہا کہ ایم آر ڈی کی طرح پی ڈی ایم کی تحریک میں بلاول بھٹو زرداری کا ساتھ دیں گے۔
    انہوں نے کہا کہ ہم گرفتاریوں سے نہیں ڈرتے، اگر ہمارے بھائیوں کو گرفتار کیا تو پیپلز پارٹی کی ہر عورت اپنی گرفتاری دینے اور اس عمل میں جدوجہد کے لیے تیار ہے۔
    ان کا کہنا تھا کہ ہم اس سلیکٹڈ حکومت سے عوام کو بچائیں گے۔
    واضح رہے کہ سابق وزیر اعظم اور پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے وائس چیئرمین یوسف رضا گیلانی نے کہا تھا کہ بلاول بھٹو زرداری کورونا میں مبتلا ہونے کے باعث جلسے میں شریک نہیں ہوسکتے، لہٰذا آصفہ بھٹو یوم تاسیس کے موقع پر پی ڈی ایم جلسے سے خطاب کریں گی۔
    ملتان کی ضلعی انتظامیہ نے پی ڈی ایم کے جلسے کی درخواست کورونا کی دوسری لہر کے پیش نظر مسترد کردی تھی، تاہم پی ڈی ایم رہنما جلسہ کرنے پر بضد تھے جس کے بعد پولیس نے گزشتہ رات قلعہ کہنہ قاسم باغ کو کنٹینرز لگا کر سیل کر دیا تھا۔
    تاہم پیر کی صبح پی ڈی ایم کو جلسے کے انعقاد کی اجازت دے دی گئی تھی لیکن قلعہ کہنہ قاسم باغ سیل ہونے کے باعث اپوزیشن جماعتوں نے گھنٹہ گھر چوک کو ہی جلسہ گاہ بنا لیا۔
    خیال رہے کہ ملک میں کورونا وائرس کی بڑھتی لہر اور انتظامیہ کی جانب سے اجازت نہ دینے کے باوجود اپوزیشن جماعتوں کے اتحاد پی ڈی ایم نے 22 نومبر کو پشاور میں اپنی سیاسی طاقت کا مظاہرہ کیا تھا۔
    22 نومبر کو ہونے والا پشاور کا جلسہ حکومت مخالف پی ڈی ایم کا چوتھا سیاسی پاور شو تھا۔
    اس سے قبل اپوزیشن اتحاد نے اپنے جلسوں کا باقاعدہ آغاز 16 اکتوبر کو گوجرانوالہ سے کیا تھا، جس کے بعد 18 اکتوبر کو کراچی میں جلسہ کیا گیا تھا جبکہ 25 اکتوبر کو پی ڈی ایم نے کوئٹہ میں سیاسی طاقت دکھائی تھی۔

    https://www.dawnnews.tv/news/1148049/

    Believer12
    Participant
    Offline
    • Expert
    #2
    آصفہ میں بے نظیر کی جھلک دکھای دیتی ہے مگر صحیح معنوں میں بے نظیر بننے کیلئے اسے بے نظیرکیطرح فی البدیہہ تقاریر کرنی ہونگی کرنٹ افئیرز اور سیاست کے اہم پہلو اس کے دماغ میں خودبخود آنے چاہیئں، آئینی موشگافیاں اور موقع پرستوں کی پہچان ہونی چاہئے اگر یہ سارا کچھ ہوجاے تو پی پی کا ایک ہی ریلا  اس چوں چوں کے مربے کیلئے کافی ہوگا
    unsafe
    Participant
    Offline
    • Advanced
    #3

    آصفہ اور مریم کو اپنے باؤ جی کی قربانی فوج کی قربان گاہ پر دینی ہو گی تب دونوں جا کر کہیں بے نظیر کے مقام کو پونچھ سکتی ہیں … . پر دونوں باؤ جی ہو سکتا ہے اپنی بیٹوں کو قربان کر کے پھر فوج کے لئے وزیر عظم بننے کے لئے تیار ہو جایں

Viewing 3 posts - 1 through 3 (of 3 total)

You must be logged in to reply to this topic.

×
arrow_upward DanishGardi