Home Forums Non Siasi خدا کی دوا

  • This topic has 8 replies, 5 voices, and was last updated 2 months ago by shami11. This post has been viewed 247 times
Viewing 9 posts - 1 through 9 (of 9 total)
  • Author
    Posts
  • #1
    Sardar Sajid
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Advanced
    • Threads: 13
    • Posts: 98
    • Total Posts: 111
    • Join Date:
      9 Jul, 2020
    • Location: Rawalpindi

    Re: خدا کی دوا

    مان لیجئے کہ ہماری دعاؤں, دواؤں اور اداؤں کا آپس میں کوئی ربط نہیں, کوئی میل نہیں, تفاوت ہی تفاوت. قصہ کچھ یوں کہ رو رو کر اشاروں, آہوں اور سسکیوں کی مدد سے ڈاکٹر کو اپنے پیچیدہ مرض کی باریکیوں سے آگاہ کیا جائے, باریک بینی سے معائنے اور تشخیص کے بعد ڈاکٹر صاحب دوا اور ایکسرسائز تجویز کریں اور مریض گھر پہنچتے ہی وہ تمام ادویات کوڑے کی ٹوکری میں ڈالنے کے بعد چادر تان کر استراحت فرمانے لگے. اللہ اللہ خیر صلا

    عقیدہ یہ کہ خانہ خدا میں کی گئی دعا کسی صورت رد نہیں ہوتی. خدا کے بندو! ہر سال خدا کے لاکھوں بندے گزشتہ ستر برس سے گڑگڑا گڑگڑا کر کشمیر اور فلسطین کی آزادی مانگ رہے ہیں تو پھر یہ دعائیں قبول کیوں نہیں ہوتیں? فقط اس لیے کہ خدا کو تو آپ کی دعا قبول ہے لیکن آپ کو خدا کی دوا قبول نہیں

    شافی کامل نے تو اپنے نسخے کے پہلے ہی لفظ میں آپ کی تمام بیماریوں, پریشانیوں اور الجھنوں کا حل تجویز کردیا تھا. یہی وہ نسخہ ہے جس کی بدولت حضرت انسان نے دوسری تمام مخلوقات پر برتری حاصل کی. علم, تجسس, آگہی اور کھوج کے ذریعے خطرناک جانوروں, سمندروں صحراؤں اور طوفانوں پر قابو پانا سیکھا

    اور یہ حقیقت روز روشن کی طرح عیاں ہے کہ علم اور آگہی کے میدان میں ترقی پا کر ہی آپ ممتاز حیثیت حاصل کر سکتے ہیں. نیل کے ساحل سے لے کر تابخاک کاشغر کے یکجا ہونے کی خواہش اپنی جگہ, گزشتہ ایک ہزار برس میں آپ نے بنی نوع انسان کو چند خوبصورت عمارتوں کے سوا دیا ہی کیا ہے

    دوائی کو کوڑے کی ٹوکری کی نذر کرنے کے بعد اب ماتم کاہے کا

    #2
    Guilty
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 0
    • Posts: 5393
    • Total Posts: 5393
    • Join Date:
      6 Nov, 2016

    Re: خدا کی دوا

    دعا کے بارے لوگ بہت سے لوگوں کے اپنے اپنے طور پر خیالات پائے گئے ہیں ۔۔۔۔

    کچھ لوگ کہتے ہیں کہ ۔۔۔ دعا قبول ہوتیں لیکن ۔۔۔۔ مقررہ وقت پر پوری ہوتی ہیں ۔۔۔

    کچھ لوگ کہتے ہیں ۔۔۔ کہ ۔۔۔۔ ضروری نہیں کہ ھر دعا قبولیت کا شرف حاصل کرسکے ۔۔۔۔

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    دعا کے بارے میرا زاتی تجربہ بھی بہت دلچسپ ہے ۔۔۔۔۔۔۔

    میں نے زندگی میں دو تین مرتبہ ہی شدت سے دعا مانگی ۔۔۔ ورنہ ۔۔۔۔ نماز یا عام زندگی میں ۔۔۔ عام دعائیں ہیں مانگتا رھاہوں ۔۔۔۔

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    میں نے اپنی زاتی تجربے سے یہ دیکھا ہے کہ ۔۔۔۔ انسان دعا اپنے طور پر اپنے زاویے سے مانگتا ہے ۔۔۔۔ لیکن دعا کو پورا کرنے والا رب ۔۔۔۔ بندے کی دعا کو اپنے ہی انداز میں پوری کرتا ہے ۔۔۔۔

    یہ ضروری نہیں ہے کہ ۔۔۔۔ انسان جس زاویے سے دعا ما نگ رھا ہے ۔۔۔۔ رب بندے کو اسی طرح ۔۔۔ من عن ۔۔۔۔ دعا پوری کرے ۔۔۔۔

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    بہت سال پہلے ۔۔۔ اسلام آباد میں ۔۔۔۔ ایک بہت با اثر شخص نے ۔۔۔۔  میرے صرف تین سو ۔۔۔ روپے دینے تھے ۔۔۔

    وہ شخص سرگودھا کا رھنے والا تھا ۔۔۔ بہت بااثر تھا ۔۔۔ اس کے بھائی رشتہ دار ۔۔۔ افسر۔۔۔ اداروں ۔۔۔ ایف اآئی اے ۔۔۔ میں لگے ہوئے تھے ۔۔۔

    نوکروں کی فوج ہی ۔۔۔۔ پچیس تیس ۔۔۔سرگودھا کے مشٹنڈوں کی تھی ۔۔۔۔

    میں جب اس کے پاس پیسے مانگنے جاتا وہ شخص مجھے ٹال دیتا ۔۔۔۔ مہینے کا وقت دے دیتا ۔۔۔

    پھر جاتا وہ پھر ۔۔۔ نیا وقت دے دیتا ۔۔ اس طرح دو سال گزر گئے۔۔۔

    میں خود بھی کھاتا پیتا انسان تھا ۔۔۔۔ کسی چیز کی کمی نہیں تھی ۔۔۔۔ لیکن اس شخص سے میں دل برداشتہ سا ہوگیا ۔۔۔۔

    اور ایک دن میں ۔۔۔ اپنے دل میں فیصلہ کیا ۔۔۔۔ جو عموماً میں کرتا نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔
    میں نے اپنے دل میں یہ کہا کہ ۔۔۔۔ میں آج کے بعد اس شخس کے پاس نہیں آؤن گا ۔۔۔۔ لیکن میں اس کی چودھراٹ اور بد معاشی
    سے تنگ آکر ۔۔۔۔ اس شخص کو ۔۔۔۔ قیامت میں ۔۔۔ تین سو ۔۔۔ روپے ۔۔۔ معاف نہیں کروں گا ۔۔۔۔۔
    یہ مغرور اور بگڑا ہوا شخص ۔۔۔ جب قیامت کے روز اٹھے گا تب اس کے کے گلے میں میرے تین سر روے ۔۔۔ کا حساب ہوگا ۔۔۔۔
    میں نے بہت تنگ آکر یہ پہلی اس قسم کی دعا یا فیصلہ کرلیا ۔۔۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    کچھ ھفتے گزر گئے ۔۔۔۔ ایک دن صبح حسب معمول جنگ اخبار اتھا یا ۔۔۔۔ اور پڑھنا شروع کیا ۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    کسی اچھی خاصی بڑی سرخ میں خبر درج تھی ۔۔۔ سرگودھا سے واپس آتے ہوئے ۔۔۔۔ اسلام کے قریب پیچارو گاڑی ۔۔۔ الٹ گئی ۔۔۔ اور ۔۔۔ سرگودھا کا ۔۔۔ چوھدری صاحب ھلا ک ہو گئے ۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔م
    مجھے یہ پڑھ کر رنج سا ہوا ۔۔۔ کہ ۔۔۔ چوھدری سے سرے سے فوت ہی ہوگیا ۔۔۔ میرا غصہ تھا جس پر ۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔
    مجھے خود بھی خدا سے ڈر لگا ۔۔۔۔ کہ یہ کیسا واقع ہے ۔۔۔۔۔۔
    میں نے پھر سوچا ۔۔۔ چوھدری مر گیا ہے ۔۔۔۔ میں اپنے دل کا عہد ختم کرلیتا ہوں ۔۔۔۔
    یہ سوچ کر کہ چوھدری کو ۔۔۔ قیامت میں تین سو روپے کا بوجھ نہ رھے ۔۔۔۔
    میں ایک دن ۔۔۔ چوھدری کے بیٹے کے پاس چلا گیا ۔۔۔۔ اس کے نوکر نے پوچھا کیا کام ہے ۔۔۔۔ میں نے پیغام بجھوایا کہ ۔۔۔
    چوھدری صاحب کے تین سو روپے ۔۔۔۔ دے دیں ۔۔۔۔ ان کے زمے تھے ۔۔۔۔ نوکر بہت حیران ہوا ۔۔۔۔
    آپ صرف تین سو روپے لینے آئے ہیں ۔۔۔ میں نے کہا ۔۔۔۔ھان ۔۔۔۔ یہ میرا زاتی سے معاملہ ہے ۔۔۔ آپ تین سر روپے دے دیں ۔۔۔
    نوکر نے کہا کہ ۔۔۔ رقم بہت تھوڑی سی ہے ۔۔۔۔ میں آپ کی بات پر یقین کرلیتا ہوں ۔۔۔۔ لیکن اس وقت صاحب گھر پر نہیں ہیں ۔۔۔
    آپ پھر کسی وقت آجائیں میں اآپ کا پیغا م دے دوں گا ۔۔۔۔
    میں نے جواب دیا ۔۔۔ میں اب نہیں آؤں گا ۔۔۔۔۔
    میں گھر واپس آیا ۔۔۔ اور خدا کے خوف ۔۔۔سے ۔۔۔۔ چوھدری کو تین سو روپے ۔۔۔ اپنے دل میں معاف کردیئے ۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    اس کے علا وہ ۔۔۔۔ پندرہ سال پہلے بھی ایک شخص نے کینیڈا میں مجھے بہت تنگ کررکھا تھا ۔۔۔۔
    میں عموماً ۔۔۔ شدت سے دعائیں ما نگتا نہیں ہوں ۔۔۔۔ عام ریگولر دعا ئیں ما نگتا ہوں ۔۔۔۔
    بحرحال ۔۔۔۔ پندرہ سال پہلے میں پھر ایک دعا مانگی جو ۔۔۔۔ میرے دل و دما غ کے حساب سے میری دعا تھا ۔۔۔
    ۔۔ لیکن وہ دعا ۔۔۔ کسی کے لیئے ۔۔۔ بد دعا ۔۔۔ بن جائے گی ۔۔۔ یہ مجھے پہلے معلوم نہ تھا ۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    لیکن کچھ سال بعد ۔۔۔۔ اس دعا ۔۔۔ کا یہ ۔۔۔ نتیجہ نکلا کہ ۔۔۔۔
    جس سے میرا کام تو ہوگیا ۔۔۔ لیکن بندے کے ساتھ جو ھوا ۔۔۔۔ وہ مجھے پسند نہیں اآیا ۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    اسی طریقے سے بہت سارے لوگ ۔۔۔۔ فلسطین کے لیئے دعائیں کرتے ہیں ۔۔۔۔ لیکن یہ ضروری نہیں ہے ۔۔۔۔
    لوگوں کی دعا ؤؤں کے حساب سے ۔۔۔۔ فلسطین آزاد ہوجائے ۔۔۔ اسرائیل کا بارود ٹھنڈ پڑ جائے ۔۔۔۔ یہ بالکل بھی ضروری نہیں ہے ۔۔۔۔
    لوگوں کی دعا ئیں پوری ہونے کے لیئے ۔۔۔۔ بہت سارے ۔۔۔ مختلف زاویے بھی ہوسکتے ہیں ۔۔۔
    جو ان کے وھم و گمان بھی نہ ہوں ۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    دو صدی پہلے کالے افریقی غلاموں نے ۔۔۔ ٹیکساس میں ۔۔۔ دعا مانگی تھی کہ ۔۔۔۔ ھمیں غلا می سے نجا ت دے دے ۔ اور واپس اپنے ملک بھیج دے ۔۔۔
    ۔۔۔۔
    خدا نے افریقن غلاموں کی دعا سن لی ۔۔۔۔۔۔ خدا نے ۔۔۔۔ دعا کی تعبیر میں ۔۔۔ کئی دھائیاں ۔۔۔ انتظار کروا یا ۔۔۔۔
    لیکن خدا نے ۔۔۔۔افریقن غلا موں کو ۔۔۔ آزاد کرکے واپس ۔۔۔ افریقہ نہیں بجھوایا ۔۔۔۔ بلکہ ۔۔۔ خدا نے اپنے زاویے سے ۔۔۔۔ دعا قبول کرتے ہوئے ۔۔۔۔
    افریقن غلاموں ۔۔۔۔ کو ۔۔۔۔ امریکہ ۔۔۔۔ کی ملکیت عطا فرما دی ۔۔۔۔ او ر ۔۔۔۔ امریکہ کی ۔۔۔ گوریاں ۔۔۔اور ۔۔۔۔ برگر بھی عطا فرماد یے ۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    کس کو پتہ ۔۔۔ ہے ۔۔۔ فلسطین ۔۔۔ کی دعائیں ۔۔۔۔ فلسطین میں ہی پوری ہوتی ہیں ۔۔۔۔ یا ۔۔۔۔ یورپ میں ۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    دعائیں مذاق نہیں ہوتیں ۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    جب پوری ہوتی ہیں ۔۔۔ غلام ۔۔۔۔ ما لک بن جاتے ہیں ۔۔۔ اور ۔۔۔ ما لک ۔۔۔ غلاموں سے ڈر کر رھتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔

    • This reply was modified 2 months, 1 week ago by Guilty.
    #3
    Qarar
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 110
    • Posts: 2770
    • Total Posts: 2880
    • Join Date:
      5 Jan, 2017

    Re: خدا کی دوا

    چنگیز خان اور ہلاکو خان کے پاس کونسا دنیاوی علم تھا …بس جنگجو تھے جو سخت جان تھے …علم تو سارا بغداد والوں کے پاس تھا جن کی لائبریری کتابوں سے بھری پڑی تھیں

    بدر میں تین سو تیرا لوگوں کے پاس کون سا علم تھا …دنیاوی علم تو عمر بن ہشام المعروف ابو الحکم کے پاس تھا

    آپ کے اکا دکا پوسٹس پڑھ کر اندازہ ہورہا ہے کہ آپ امت مسلمہ کو طالبانی راستے سے بھٹکانے کی ناکام کوشش کر رہے ہیں …خدا آپ کو ہدایت دے

    #4
    Sardar Sajid
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Advanced
    • Threads: 13
    • Posts: 98
    • Total Posts: 111
    • Join Date:
      9 Jul, 2020
    • Location: Rawalpindi

    Re: خدا کی دوا

    چنگیز خان اور ہلاکو خان کے پاس کونسا دنیاوی علم تھا …بس جنگجو تھے جو سخت جان تھے …علم تو سارا بغداد والوں کے پاس تھا جن کی لائبریری کتابوں سے بھری پڑی تھیں بدر میں تین سو تیرا لوگوں کے پاس کون سا علم تھا …دنیاوی علم تو عمر بن ہشام المعروف ابو الحکم کے پاس تھا آپ کے اکا دکا پوسٹس پڑھ کر اندازہ ہورہا ہے کہ آپ امت مسلمہ کو طالبانی راستے سے بھٹکانے کی ناکام کوشش کر رہے ہیں …خدا آپ کو ہدایت دے

    وار سائنس ایک بہت بڑا میدان ہے اور یہ بھی علم کی ایک شاخ ہے یونیورسٹی کی سطح پر پڑھائی جاتی ہے

    سکندر اعظم سمیت سب بڑے بڑے فاتحین نے اسی فن میں مہارت کے باعث کامیابیاں حاصل کیں ورنہ ان کی فوج کے ساتھ کوئی سرخاب کے پر نہیں لگے ہوئے تھے

    • This reply was modified 2 months, 1 week ago by Sardar Sajid.
    #5
    Qarar
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 110
    • Posts: 2770
    • Total Posts: 2880
    • Join Date:
      5 Jan, 2017

    Re: خدا کی دوا

    وار سائنس ایک بہت بڑا میدان ہے اور یہ بھی علم کی ایک شاخ ہے یونیورسٹی کی سطح پر پڑھائی جاتی ہے سکندر اعظم سمیت سب بڑے بڑے فاتحین نے اسی فن میں مہارت کے باعث کامیابیاں حاصل کیں ورنہ ان کی فوج کے ساتھ کوئی سرخاب کے پر نہیں لگے ہوئے تھے

    چلیں ان کے پاس سکندر تھا تو ہمارے پاس باجوہ بھی تو ہے

    #6
    unsafe
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 54
    • Posts: 1032
    • Total Posts: 1086
    • Join Date:
      8 Jun, 2020
    • Location: چولوں کی بستی

    Re: خدا کی دوا

    دعا کے بارے میرا زاتی تجربہ بھی بہت دلچسپ ہے ۔۔۔۔۔۔۔میں نے زندگی میں دو تین مرتبہ ہی شدت سے دعا مانگی ۔۔۔ ورنہ ۔۔۔۔ نماز یا عام زندگی میں ۔۔۔ عام دعائیں ہیں مانگتا رھاہوں ۔۔۔۔

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    میں نے اپنی زاتی تجربے سے یہ دیکھا ہے کہ ۔۔۔۔ انسان دعا اپنے طور پر اپنے زاویے سے مانگتا ہے ۔۔۔۔ لیکن دعا کو پورا کرنے والا رب ۔۔۔۔ بندے کی دعا کو اپنے ہی انداز میں پوری کرتا ہے ۔۔۔۔

    یہ ضروری نہیں ہے کہ ۔۔۔۔ انسان جس زاویے سے دعا ما نگ رھا ہے ۔۔۔۔ رب بندے کو اسی طرح ۔۔۔ من عن ۔۔۔۔ دعا پوری کرے ۔۔۔۔

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    بہت سال پہلے ۔۔۔ اسلام آباد میں ۔۔۔۔ ایک بہت با اثر شخص نے ۔۔۔۔ میرے صرف تین سو ۔۔۔ روپے دینے تھے ۔۔۔

    وہ شخص سرگودھا کا رھنے والا تھا ۔۔۔ بہت بااثر تھا ۔۔۔ اس کے بھائی رشتہ دار ۔۔۔ افسر۔۔۔ اداروں ۔۔۔ ایف اآئی اے ۔۔۔ میں لگے ہوئے تھے ۔۔۔

    نوکروں کی فوج ہی ۔۔۔۔ پچیس تیس ۔۔۔سرگودھا کے مشٹنڈوں کی تھی ۔۔۔۔

    میں جب اس کے پاس پیسے مانگنے جاتا وہ شخص مجھے ٹال دیتا ۔۔۔۔ مہینے کا وقت دے دیتا ۔۔۔

    پھر جاتا وہ پھر ۔۔۔ نیا وقت دے دیتا ۔۔ اس طرح دو سال گزر گئے۔۔۔

    میں خود بھی کھاتا پیتا انسان تھا ۔۔۔۔ کسی چیز کی کمی نہیں تھی ۔۔۔۔ لیکن اس شخص سے میں دل برداشتہ سا ہوگیا ۔۔۔۔

    اور ایک دن میں ۔۔۔ اپنے دل میں فیصلہ کیا ۔۔۔۔ جو عموماً میں کرتا نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔
    میں نے اپنے دل میں یہ کہا کہ ۔۔۔۔ میں آج کے بعد اس شخس کے پاس نہیں آؤن گا ۔۔۔۔ لیکن میں اس کی چودھراٹ اور بد معاشی
    سے تنگ آکر ۔۔۔۔ اس شخص کو ۔۔۔۔ قیامت میں ۔۔۔ تین سو ۔۔۔ روپے ۔۔۔ معاف نہیں کروں گا ۔۔۔۔۔
    یہ مغرور اور بگڑا ہوا شخص ۔۔۔ جب قیامت کے روز اٹھے گا تب اس کے کے گلے میں میرے تین سر روے ۔۔۔ کا حساب ہوگا ۔۔۔۔
    میں نے بہت تنگ آکر یہ پہلی اس قسم کی دعا یا فیصلہ کرلیا ۔۔۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    کچھ ھفتے گزر گئے ۔۔۔۔ ایک دن صبح حسب معمول جنگ اخبار اتھا یا ۔۔۔۔ اور پڑھنا شروع کیا ۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    کسی اچھی خاصی بڑی سرخ میں خبر درج تھی ۔۔۔ سرگودھا سے واپس آتے ہوئے ۔۔۔۔ اسلام کے قریب پیچارو گاڑی ۔۔۔ الٹ گئی ۔۔۔ اور ۔۔۔ سرگودھا کا ۔۔۔ چوھدری صاحب ھلا ک ہو گئے ۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔م
    مجھے یہ پڑھ کر رنج سا ہوا ۔۔۔ کہ ۔۔۔ چوھدری سے سرے سے فوت ہی ہوگیا ۔۔۔ میرا غصہ تھا جس پر ۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔
    مجھے خود بھی خدا سے ڈر لگا ۔۔۔۔ کہ یہ کیسا واقع ہے ۔۔۔۔۔۔
    میں نے پھر سوچا ۔۔۔ چوھدری مر گیا ہے ۔۔۔۔ میں اپنے دل کا عہد ختم کرلیتا ہوں ۔۔۔۔
    یہ سوچ کر کہ چوھدری کو ۔۔۔ قیامت میں تین سو روپے کا بوجھ نہ رھے ۔۔۔۔
    میں ایک دن ۔۔۔ چوھدری کے بیٹے کے پاس چلا گیا ۔۔۔۔ اس کے نوکر نے پوچھا کیا کام ہے ۔۔۔۔ میں نے پیغام بجھوایا کہ ۔۔۔
    چوھدری صاحب کے تین سو روپے ۔۔۔۔ دے دیں ۔۔۔۔ ان کے زمے تھے ۔۔۔۔ نوکر بہت حیران ہوا ۔۔۔۔
    آپ صرف تین سو روپے لینے آئے ہیں ۔۔۔ میں نے کہا ۔۔۔۔ھان ۔۔۔۔ یہ میرا زاتی سے معاملہ ہے ۔۔۔ آپ تین سر روپے دے دیں ۔۔۔
    نوکر نے کہا کہ ۔۔۔ رقم بہت تھوڑی سی ہے ۔۔۔۔ میں آپ کی بات پر یقین کرلیتا ہوں ۔۔۔۔ لیکن اس وقت صاحب گھر پر نہیں ہیں ۔۔۔
    آپ پھر کسی وقت آجائیں میں اآپ کا پیغا م دے دوں گا ۔۔۔۔
    میں نے جواب دیا ۔۔۔ میں اب نہیں آؤں گا ۔۔۔۔۔
    میں گھر واپس آیا ۔۔۔ اور خدا کے خوف ۔۔۔سے ۔۔۔۔ چوھدری کو تین سو روپے ۔۔۔ اپنے دل میں معاف کردیئے ۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    اس کے علا وہ ۔۔۔۔ پندرہ سال پہلے بھی ایک شخص نے کینیڈا میں مجھے بہت تنگ کررکھا تھا ۔۔۔۔
    میں عموماً ۔۔۔ شدت سے دعائیں ما نگتا نہیں ہوں ۔۔۔۔ عام ریگولر دعا ئیں ما نگتا ہوں ۔۔۔۔
    بحرحال ۔۔۔۔ پندرہ سال پہلے میں پھر ایک دعا مانگی جو ۔۔۔۔ میرے دل و دما غ کے حساب سے میری دعا تھا ۔۔۔
    ۔۔ لیکن وہ دعا ۔۔۔ کسی کے لیئے ۔۔۔ بد دعا ۔۔۔ بن جائے گی ۔۔۔ یہ مجھے پہلے معلوم نہ تھا ۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    لیکن کچھ سال بعد ۔۔۔۔ اس دعا ۔۔۔ کا یہ ۔۔۔ نتیجہ نکلا کہ ۔۔۔۔
    جس سے میرا کام تو ہوگیا ۔۔۔ لیکن بندے کے ساتھ جو ھوا ۔۔۔۔ وہ مجھے پسند نہیں اآیا ۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    اسی طریقے سے بہت سارے لوگ ۔۔۔۔ فلسطین کے لیئے دعائیں کرتے ہیں ۔۔۔۔ لیکن یہ ضروری نہیں ہے ۔۔۔۔
    لوگوں کی دعا ؤؤں کے حساب سے ۔۔۔۔ فلسطین آزاد ہوجائے ۔۔۔ اسرائیل کا بارود ٹھنڈ پڑ جائے ۔۔۔۔ یہ بالکل بھی ضروری نہیں ہے ۔۔۔۔
    لوگوں کی دعا ئیں پوری ہونے کے لیئے ۔۔۔۔ بہت سارے ۔۔۔ مختلف زاویے بھی ہوسکتے ہیں ۔۔۔
    جو ان کے وھم و گمان بھی نہ ہوں ۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    دو صدی پہلے کالے افریقی غلاموں نے ۔۔۔ ٹیکساس میں ۔۔۔ دعا مانگی تھی کہ ۔۔۔۔ ھمیں غلا می سے نجا ت دے دے ۔ اور واپس اپنے ملک بھیج دے ۔۔۔
    ۔۔۔۔
    خدا نے افریقن غلاموں کی دعا سن لی ۔۔۔۔۔۔ خدا نے ۔۔۔۔ دعا کی تعبیر میں ۔۔۔ کئی دھائیاں ۔۔۔ انتظار کروا یا ۔۔۔۔
    لیکن خدا نے ۔۔۔۔افریقن غلا موں کو ۔۔۔ آزاد کرکے واپس ۔۔۔ افریقہ نہیں بجھوایا ۔۔۔۔ بلکہ ۔۔۔ خدا نے اپنے زاویے سے ۔۔۔۔ دعا قبول کرتے ہوئے ۔۔۔۔
    افریقن غلاموں ۔۔۔۔ کو ۔۔۔۔ امریکہ ۔۔۔۔ کی ملکیت عطا فرما دی ۔۔۔۔ او ر ۔۔۔۔ امریکہ کی ۔۔۔ گوریاں ۔۔۔اور ۔۔۔۔ برگر بھی عطا فرماد یے ۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    کس کو پتہ ۔۔۔ ہے ۔۔۔ فلسطین ۔۔۔ کی دعائیں ۔۔۔۔ فلسطین میں ہی پوری ہوتی ہیں ۔۔۔۔ یا ۔۔۔۔ یورپ میں ۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    دعائیں مذاق نہیں ہوتیں ۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    جب پوری ہوتی ہیں ۔۔۔ غلام ۔۔۔۔ ما لک بن جاتے ہیں ۔۔۔ اور ۔۔۔ ما لک ۔۔۔ غلاموں سے ڈر کر رھتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔

    موحترم آپ نے تو تین سو  روپیہ کے پیچھے جو میرے خیال میں اتنی بڑی رقم نہیں ہے . اس کے حصول کے لئے یہودی سے بھی دو ہاتھ آگے نکل گۓ . کہ آپ نے وہ رقم قیامت تک اس آدمی کو معاف نہیں کی اور بیچارے کا اکیسڈنٹ ہو گیا .. اپ کو کیا معلوم اس کے اکسیڈنٹ سے کتنے لوگ متاثر ہوے ہوں گے … کیا آپ نے ایمانداری سے اس کے ایکسیڈنٹ کی جانچ پڑتال کی ہے غریبوں کی کفالت کا خیال رکھا ، اس کے نوکروں کی خریت پوچھی . اپ کے ہاتھ تو خون سے رنگے جا چکے ہیں

    Believers have never worshiped without prayer, without reward and without guarantee of reward
    Religion look a commercial service of sales of unseen goods of reward of punishment. What a trangerssion against the holiness of Mankind

    تم عبادت بھی تجارت کی طرح کرتے ہو،
    ہم محبت بھی عبادت کی طرح کرتے ہیں
    واعظو! ہم کو عبادت نہ سکھاؤ، جاؤ
    ہے ہمیں راس یہ گم نام جزیرے کی فضا
    گر کمانا ہے تمہیں نام، کماؤ، جاؤ
    ہم نے ہم وار بنا ڈالا ہے اُس کا رستہ
    وادیِ عشق میں آرام سے آؤ ، جاؤ

    • This reply was modified 2 months ago by unsafe.
    #7
    unsafe
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 54
    • Posts: 1032
    • Total Posts: 1086
    • Join Date:
      8 Jun, 2020
    • Location: چولوں کی بستی

    Re: خدا کی دوا

    ملا گر اثر ہے دعا میں، تواسریل کو ہلا کے دکھا
    گر نہیں ہلا سکتا تو دو گھونٹ پی اور سارے جہاں کو ہلتا دیکھ

    #8
    Guilty
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 0
    • Posts: 5393
    • Total Posts: 5393
    • Join Date:
      6 Nov, 2016

    Re: خدا کی دوا

    موحترم آپ نے تو تین سو روپیہ کے پیچھے جو میرے خیال میں اتنی بڑی رقم نہیں ہے . اس کے حصول کے لئے یہودی سے بھی دو ہاتھ آگے نکل گۓ . کہ آپ نے وہ رقم قیامت تک اس آدمی کو معاف نہیں کی اور بیچارے کا اکیسڈنٹ ہو گیا .. اپ کو کیا معلوم اس کے اکسیڈنٹ سے کتنے لوگ متاثر ہوے ہوں گے … کیا آپ نے ایمانداری سے اس کے ایکسیڈنٹ کی جانچ پڑتال کی ہے غریبوں کی کفالت کا خیال رکھا ، اس کے نوکروں کی خریت پوچھی . اپ کے ہاتھ تو خون سے رنگے جا چکے ہیں

    Believers have never worshiped without prayer, without reward and without guarantee of reward
    Religion look a commercial service of sales of unseen goods of reward of punishment. What a trangerssion against the holiness of Mankind

    تم عبادت بھی تجارت کی طرح کرتے ہو،
    ہم محبت بھی عبادت کی طرح کرتے ہیں
    واعظو! ہم کو عبادت نہ سکھاؤ، جاؤ
    ہے ہمیں راس یہ گم نام جزیرے کی فضا
    گر کمانا ہے تمہیں نام، کماؤ، جاؤ
    ہم نے ہم وار بنا ڈالا ہے اُس کا رستہ
    وادیِ عشق میں آرام سے آؤ ، جاؤ

    ۔۔۔۔
    بات شاید تین سو روپے کی نہیں تھی ۔۔۔۔ بات شاید رویوں ھٹ دھرمی اور حرامی پن کی تھی ۔۔۔۔۔
    ایکسیڈ ینٹ کی میں نے دعا نہیں کی تھی ۔۔۔۔ نہ میں اس کا زمہ دار ہوں ۔۔ مجھے نہیں معلوم ایکسیڈ ینٹ کس نے اور کیوں کیا ۔۔
    دوسرے وہ غریب لوگ نہیں تھے ۔۔۔۔۔ اچھے خا صے کرک تھے ۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    دوسرے آپ نے ۔۔۔ عبا دت اور تجارت کا فرما یا ۔۔۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    میرا خیال ۔۔۔ انسانی پوری زندگی کا گزر ۔۔۔۔ تجارت سے ہی عبارت ہے ۔۔۔
    آپ اپنے ملحدین کو ہی دیکھ لیں ۔۔۔ ان کو اکثر ۔۔۔۔ عورتوں کے حقوق کا دورہ پڑا رھتا ہے ۔۔۔۔
    اس قسم کے جدید ماڈرن ۔۔۔ انسانی دورے ۔۔۔ سے ۔۔۔۔ کسی کو کیا ملتا ہے ۔۔۔۔
    جواب ۔۔۔ محظ معاشرے کو اپنے لیئے ساز گار بنا نا ۔۔۔۔ مغرب زدہ جیسا معاشرہ ان کو چاھیے ۔۔۔۔ اپنی اس زاتی خواہش کو پانے کے
    لیئے ۔۔۔۔ ان کو اس قسم کے ۔۔۔۔ این جی ۔۔۔ ٹائپ دورے پڑتے رھتے ہیں ۔۔۔
    اور یہ سب ڈھونگ اپنے ۔۔۔ مفادات کے لیئے رچا ئے جاتے ہیں اپنی خواہشات ۔۔۔ اپنے نظریات کو پورا کرنے کی طلب ہوتی ہے ۔۔۔۔
    سو سڑکوں ۔۔۔ کانفرسوں میں ۔۔۔ تجارت کرتے ہیں ۔۔۔ کہ ھم عورتوں کے حمایت کررھے ہیں ۔۔۔ بد لے میں ھماری مرضی کا معاشرہ ھمیں دے دیا جائے ۔۔۔
    ۔۔ورنہ انہوں نے عورت کی ھیلپ کرنی ہوتی ۔۔۔
    آٹھ دس ۔۔۔ بوڑھیوں کو اپنے گھر کی چھت پر رکھ لیں اور کریں خدمت پتہ چل جائے گا ۔۔۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    #9
    shami11
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 752
    • Posts: 8937
    • Total Posts: 9689
    • Join Date:
      12 Oct, 2016
    • Location: Pakistan

    Re: خدا کی دوا

    اب تمہیں خوش کرنے کے لئے ہم اپنا باجوہ تو قربان کرنے سے رہے ، پہلے ایک کو بڑی مشکل سے ایک چھوٹی سی نوکری پر منایا ہے ، اب بڑے باجوہ کے لئے کوئی اچھا سا کام ڈھونڈنا ہے

    چلیں ان کے پاس سکندر تھا تو ہمارے پاس باجوہ بھی تو ہے
Viewing 9 posts - 1 through 9 (of 9 total)

You must be logged in to reply to this topic.

×
arrow_upward DanishGardi