Home Forums Siasi Discussion ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

Viewing 20 posts - 1 through 20 (of 46 total)
  • Author
    Posts
  • #1
    Awan
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 152
    • Posts: 2949
    • Total Posts: 3101
    • Join Date:
      10 Jun, 2017

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    تحریک انصاف کو حکومت ملی تو معاشی اعدادوشمار بہتر پوزیشن میں تھے، مگر موجودہ حکومت کے ابتدائی سالوں میں ہی یہ معاشی ترقی زوال پذیر ہوتی ہوئی منفی اعدادوشمار کے ساتھ نظر آنے لگی۔

    تحریک انصاف کی حکومت کی جانب سے بجٹ 21-2020 ایسے وقت لایا گیا جب دنیا بھر میں کورونا نے تباہی مچائی ہوئی ہے اور عالمی معیشت کی بنیادیں اس وبا کی وجہ سے لرز رہی ہیں۔

    عالمی ممالک اپنی معیشت کے بچانے کے لیے جنگی صورتحال سے گزر رہے ہیں۔ ایسے وقت میں تحریک انصاف کی حکومت کی جانب سے بجٹ دینا آسان نہیں تھا۔

    معاشی ترقی کی شرح جو مسلم لیگ (ن) کی حکومت کے آغاز پر 2013ء میں 4.05 فیصد تھی، اسی حکومت کے اختتامی سال 2018ء میں 5.53 تک پہنچ چکی تھی اور جب یہاں سے تحریک انصاف نے حکومت سنبھالی تو پہلے ہی سال 2018ء میں ترقی کی یہ شرح تنزلی کا شکار ہو کر 1.91 فیصد اور اگلے سال یعنی 2019ء میں مزید کم ہو کر صفر کے ہندسے کو پیچھے چھوڑتی ہوئی منفی 0.38 فیصد تک پہنچ گئی۔

    اسی طرح صنعتی ترقی جو تحریک انصاف کے حکومت سنبھالتے وقت 4.61 فیصد تھی، پہلے ہی سال صفر کے ہندسے سے بھی نیچے یعنی منفی 2.27 فیصد اور 2019ء میں منفی 2.64 فیصد تک پہنچ چکی تھی۔

    معاشی تباہی صرف درج بالا سطح تک ہی نہیں تھی بلکہ اس سے کوئی بھی شعبہ محفوظ نہ رہ سکا۔ مینوفیکچرنگ سیکٹر کے اعدادوشمار 5.43 فیصد تھے۔ جب تحریک انصاف نے حکومت سنبھالی تو 2018ء میں یہ نمبر منفی 0.66 فیصد اور 2019ء میں مزید تنزلی کے بعد منفی 5.56 فیصد تک پہنچ گیا۔

    مہنگائی کی شرح جو موجودہ حکومت کے مسند اقتدار سنبھالتے وقت 3.92 فیصد تھی پہلے سال میں ہی 7.34 فیصد اور دوسرے سال میں 11.22 فیصد تک پہنچ گئی۔

    کچھ ایسا ہی حال بیروزگاری کی شرح میں بھی نظر آیا۔ موجودہ حکومت جس نے اقتدار میں آتے ہی کروڑوں نوکریاں دینے کے دعوے کیے ہوئے تھے، بے روزگاری کی شرح میں کمی کے بجائے اس میں مزید اضافے کا باعث بنی اور مسلم لیگ (ن) کی حکومت کے اختتام پر بے روزگاری کی جو شرح 5.70 فیصد تھی، وہ موجودہ حکومت کے پہلے سال 6.10 فیصد اور دوسرے سال 6.20 فیصد تک پہنچ گئی۔

    معاشی اعشاریوں کا اگر تفصیلی جائزہ لیں تو صورتحال انتہائی گھمبیر نظر آتی ہے۔ ہم اس صورتحال کا جائزہ لیں گے کہ ماضی کی حکومتوں نے ترقی کے اعشاریے کہاں چھوڑے تھے اور آنے والی حکومتوں نے انھیں کس حد تک سنبھالا۔

    ذیل میں دیے گئے چارٹس میں عمومی تقابل پاکستان پیپلز پارٹی، مسلم لیگ( ن) اور تحریک انصاف حکومتوں کے مابین کیا گیا ہے۔

    حکومتی کارکردگی

    وفاقی بجٹ برائے مالی سال 20-2019 اسمبلی میں پیش کرتے ہوئے اس وقت کے وزیر مملکت برائے ریونیو حماد اظہر نے دعویٰ کیا تھا کہ  اب وقت ہے لوگوں کی زندگی بدلنے کا، اداروں میں میرٹ لانے کا اور کرپشن ختم کرنے کا ۔

    گزشتہ مالی سال کا بجٹ پیش کرتے ہوئے تحریک انصاف کی حکومت نے جو اہداف مقرر کیے تھے ان میں بیرونی خسارے میں کمی ، کرنٹ اکاو ¿نٹ خسارہ 13 ارب ڈالر سے کم کرکے 6.5 ارب ڈالر تک لانا، درآمدات میں کمی اور برآمدات میں اضافہ ، آزادانہ تجارتی معاہدوں کا فروغ اور سول و عسکری اخراجات میں مثالی کمی کے اہداف نمایاں تھے۔

    اس کے علاوہ ٹیکس وصولی کے نظام میں بہتری، زراعی اور صنعتی ترقی کا حصول ، منی لانڈرنگ کا خاتمہ ،مہنگائی کی شرح میں کمی اور مجموعی طور پر معیشت کو ترقی کی راہ پر گامزن کرنا شامل تھا۔حکومت اپنے متعین اہداف کو حاصل کرنے میں کتنی کامیاب رہی اس کی تفصیلات درجہ ذیل ہیں۔

    فی کس آمدن

    2008-09ء میں پاکستان میں فی کس آمدن1026 ڈالر تھی جس میں سالانہ بتدریج اضافہ ہوتا گیااور گزشتہ حکومت کے آخری مالی سال میں فی کس آمدن 1652 ڈالر تک پہنچ گئی جبکہ اس کے بعد کم ہونا شروع ہوئی۔ معاشی تنزلی اور پیسے کی قدر میں تیزی سے گراوٹ فی کس آمدن میں کمی کی وجہ بنیں۔تحریک انصاف دور حکومت کے پہلے سال میں فی کس آمدن کم ہوکر 1455 ڈالر ہوگئی جبکہ مال سال2019-20 میں مزید کم ہو کر1355 ڈالر پر پہنچ گئی۔اگر ہمسایہ ممالک سے موازنہ کیا جائے تو 2008-09 بھارت کی فی کس آمدن 1049 ڈالر جبکہ بنگلہ دیش کی 728 ڈالر تھی۔ 2008-09 کے مقابلے میں 2019-20 میں پاکستان کی فی کس آمدن 329 ڈالر بڑھی ہے اور بھارت کی فی کس آمدن 1123 ڈالر جبکہ بنگلہ دیش کی1339 ڈالر بڑھی ہے۔2008-09 میں بنگلہ دیش کی فی کس آمدن پاکستان سے 298 ڈالر کم تھی جبکہ 2019-20 میں پاکستان سے 712 ڈالر زیادہ ہے۔

    افراط زر

    جنوری 2019 کے بعد ملک میں مہنگائی کی شرح میں بتدریج اضافہ ہوااور اگست 2019 سے مارچ 2020 تک مہنگائی کی شرح ڈبل ڈیجٹ میں رہی۔ کئی عوامل بشمول مضمر طلبی دباو ¿، تیل کی قیمتوں میں اضافہ اور پاکستانی روپے کی قدر میں کمی سے مہنگائی میں تیزی ا?ئی۔رواں مالی سال میں مہنگائی کی شرح 11.22 فیصد جبکہ گزشتہ مالی سال 7.34 فیصد رہی۔

    بیروزگاری

    پاکستان میں 2018 کے بعد بیروزگاری کی شرح ایک بار پھر بڑھی ہے۔ مالی سال 2013-14 میں پچھلے سال کے مقابلے بیروزگاری کی شرح 0.4 فیصد کم ہوکر 6 فیصد سے 5.6 فیصد پر آئی تھی جبکہ مالی سال 2018-19 میں پچھلے سال کے مقابلے 0.4 فیصد کے اضافے سے 5.7 فیصد سے 6.1 فیصد پر پہنچی تھی۔رواں سال 1 فیصد مزید اضافے کا تخمینہ لگایا گیا ہے۔

    کم از کم اجرت

    آج سے 12 سال پہلے مزدور کی کم از کم اجرت 6 ہزار روپے یا اس دور کے ریٹ کے حساب سے 86 ڈالر تھی جسے 4 سال بعد پیپلز پارٹی دور حکومت کے آخری سال میں 2 ہزار روپوں کا اضافہ کر کے 8 ہزارروپے کر دی گئی ،تاہم تب تک ڈالر اتنا مہنگا ہوا تھا کہ 4 سال میں مزدور کی کم از کم اجرت 2 ڈالر کم ہوکر 84 ڈالر رہ گئی تھی۔ مسلم لیگ (ن) دور کے پہلے مالی سال میں کم از کم اجرت 10 ہزار روپے مقرر کی گئی اور صنعتی و معاشی ترقی میں بہتری آنے کی وجہ سے اجرت 84 ڈالر سے 99 ڈالر ہوئی جبکہ آخری مالی سال میں اجرت بڑھا کر 15 ہزار روپے کر دی گئی۔ امریکی کرنسی کے حساب سے یہ اجرت 142 ڈالر بنتی ہے۔ موجودہ حکومت نے اپنے پہلے مالی سال میں کم از کم اجرت 15 ہزار روپے ہی برقرار رکھا تاہم روپے کی قدر گھٹنے کی وجہ سے کم از کم اجرت میں گزشتہ سال کے مقابلے 12 ڈالر کی کمی ہوئی۔ بڑھتی ہوئی مہنگائی کے پیش نظر رواں مالی سال کم از کم اجرت میں 2500 روپوں کا اضافہ کیا گیا اور ساڑھے 17 ہزارروپے کردی گئی البتہ روپے کی قدر میں نمایاں کمی کی وجہ سے اجرت میں مزید 13 ڈالر کی کمی ہوئی۔

    ایف بی آر کا ٹیکس ہدف اور حصول

    مالی سال 2019-20 کیلئے ٹیکس آمدن کا ہدف 5 ہزار 503 ارب روپے رکھا گیا تھا لیکن معاشی شرح نمو میں کمی اور ایف بی آر کے اپنے ماہانہ اہداف سے پیچھے رہ جانے کی وجہ سے سالانہ ہدف میں نظرثانی کی گئی اور آئی ایم ایف کی مشاورت سے ہدف کم کرکے 5 ہزار 270 ارب کا ہدف تعین کیا گیا۔ معاشی حالات میں مسلسل ابتری کی وجہ سے سالانہ ہدف پر دوسری بار نظرثانی کر کے 48 سو ارب ڈالر کا ہدف رکھا گیا۔ جنوری کے بعد پہلے عالمی سطح پر اور پھر ملک میں کورونا کی وباءپھیلنے کی وجہ سے معاشی حالات مزید ابتر ہوگئے۔ ٹیکس آمدن کے سالانہ ہدف پر تیسری دفعہ بھی نظر ثانی کی گئی اور اصل ہدف سے 1 ہزار595 ارب روپے کم کر کے 3 ہزار 908 ارب روپے کا ہدف متعین کیا گیا۔ ایف بی آر نے مئی 2020 تک 3 ہزار 518 ارب روپے اکھٹا کیا ہے اور نظرثانی شدہ ہدف پورا کرنے کیلئے 390 ارب روپے مزید درکار ہیں۔

    ادائیگیوں کا توازن

    بیلنس آف پیمنٹ یعنی ادائیگیوں کے توازن میں گزشتہ دو سالوں میں نمایاں کمی آئی ہے۔ 2013-14 میں کرنٹ اکاو ¿نٹ خسارہ 3 ہزار 130 ملین ڈالر تھاجو کہ مسلم لیگ (ن) دور حکومت کے آخری مالی سال میں خسارہ 19 ہزار 195 ملین ڈالر کو پہنچا تھا۔ 2018-19 میں بیلنس آف پیمنٹ کا خسارہ کم ہوکر 13 ہزار 434 ملین ڈالر پر آگیااور رواں سال کے آخر تک 3 ہزارملین ڈالر تک پہنچنے کاتخمینہ لگایا گیا ہے۔ درآمدات میں نمایاں کمی ہونا اس خسارے میں کمی کی ایک اہم وجہ ہے۔

    سالانہ تجارتی خسارہ

    حکومت مجموعی طور پر سالانہ تجارتی خسارہ کم کرنے میں بڑی حد تک کامیاب ہوئی ہے۔مسلم لیگ (ن) کے دور حکومت میں تجارتی خسارہ16 ہزار 590 ملین ڈالر سے بڑھ کر 30 ہزار 903 ملین ڈالر تک پہنچ گیا تھا تاہم پچھلے دو سالوں میں اس میں کمی آئی ہے۔ مالی سال 2018-19 میں تجارتی خسارہ 27 ہزار 612 ملین ڈالر تھا جبکہ رواں مالی سال کےاپریل تک مزید کم ہوکر 16 ہزار 441 ملین ڈالر رہ گیا ہے۔

    ملک کی کل برآمدات اور درآمدات کا تفریق اگر مثبت اشاریوں کی طرف بڑھے تو تجارتی خسارے میں کمی واقع ہوتی ہے۔ دو سالوں میں تجارتی خسارے میں کمی آنے کی وجہ برآمدات میں اضافہ نہیں ہے بلکہ درآمدات میں نمایاں کمی ہے۔ مجموعی طور پر ملکی درآمدات کے ساتھ ساتھ برآمدات میں بھی کمی آئی ہے۔

    معیشت پر قرضوں کا بوجھ

    ملکی معیشت پر قرضوں کے بوجھ میں تواتر سے اضافہ ہورہا ہے تاہم موجودہ حکومت کے پہلے دو سالوں میں قرضے اکھٹا کرنے کی رفتار میں تیزی آئی اور ملک کے مجموعی قرضہ جات میں اس دوران تقریباً 13 ہزار ارب روپے کا اضافہ ہوا ہے۔ جون 2008 میں پاکستان کا کل قرضہ 6 ہزار 691 ارب روپے تھا، جون 2013 میں 16 ہزار 339جبکہ جون 2018 میں 29 ہزار879 ارب روپے تک پہنچ گیا۔پاکستان پیپلز پارٹی کے پانچ سالہ دور حکومت میں مجموعی قرضہ جات میں تقریباً ساڑھے 9 ہزار ارب روپے کا اضافہ ہوا یعنی کہ تقریباً 2 ہزار ارب روپے سالانہ اضافہ ہوا۔ مسلم لیگ (ن) کے پانچ سالہ دور حکومت میں ملکی قرض میں تقریباً ساڑھے 13 ہزار ارب روپے کا اضافہ ہوا یعنی کہ سالانہ تقریباً 2700 ارب روپے کا اضافہ ہوا۔ پاکستان تحریک انصاف کے پہلے دوبڑھنے والے قرضے کاجائزہ لیا جائے تو سالانہ تقریباً ساڑھے 6 ہزار ارب کی رفتار سے اضافہ ہو رہا ہے۔

    گردشی قرضے

    2008 ء میں پاکستان پیپلز پارٹی نے حکومت کی باگ ڈور سنبھالی تو گردشی قرضہ 106 ارب روپے تھا۔ جون 2013 تک اس میں 397 ارب روپے کا اضافہ ہوا جبکہ جون 2018 تک مزید 697 ارب روپے کے اضافے سے کل گردشی قرضہ 1200 ارب روپے تک جا پہنچا۔ گزشتہ دو سالوں میں گردشی قرضے مزید 700 ارب کے اضافے کے بعد 1900 ارب روپے سے تجاوز کر گئے ہیں۔

    سٹاک مارکیٹ

    پاکستان اسٹاک ایکسچینج کیلئے رواں سال مارچ کا مہینہ سب سے زیادہ مشکل ثابت ہوا۔ پاکستان میں 26 فروری 2020 کو کورونا وائرس کا پہلامریض سامنے آمنے کے بعد KSE-100 میں 24.8 فیصد گراوٹ ریکارڈ کی گئی اور انڈکس 31 مارچ 2020 کو 29231.6 پر آ گرا۔ تاہم حکومت کے کورونا معاشی پیکج اور سٹیٹ بنک کے مانیٹیری پالیسی میں 525 بیسز پوانٹس کی کمی کے بعد اسٹاک مارکیٹ میں ریکوری دیکھنے کو ملی اور یکم جون 2020 کو KSE-100 انڈکس 34021 پر بند ہوا۔

    روپے کی قدر

    جون 2013 میں ڈالر کی قیمت 100 روپے تھی اور پانچ سال بعد جون 2018 میں اس کی قیمت میں صرف 15 روپے اضافہ ہوا تھا۔ اس کے بعدپاکستانی روپیہ کی قدر میں ایک سال میں تیس فیصد کمی ہوئی اور جون 2019 میں ڈالر 150 روپے کی سطح پر پہنچ گیا۔اگلے ایک سال کے دوران ڈالر کی قدر میں مزید اضافہ ہوا اور مئی 2020 میں فی ڈالر 165 روپے تک جا پہنچا۔

    https://urdu.dunyanews.tv/index.php/ur/Business/549411

    • This topic was modified 1 year, 1 month ago by Awan.
    #2
    Awan
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 152
    • Posts: 2949
    • Total Posts: 3101
    • Join Date:
      10 Jun, 2017

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    موجودہ اور پرانی حکومتوں کا نمبروں کے ساتھ اچھا موازنہ ہے – مجھے اچھا لگا اس لئے دوستوں سے شیئر کر رہا ہوں – آسان زبان میں بھی ہے اسلئے اس کی تشریح کے لئے شاہد عباسی بھائی کے ضرورت نہیں – ویسے میرا خیال ہے شاہد بھائی کے بحد جیو جی بھائی محیشت کو ہم سب میں سے بہترین سمجھتے ہیں – ان سے بھی کومنٹس کی درخواست ہے –

    Bawa

    GeoG

    Ghost Protocol

    Atif Qazi

    JMP

    Athar

    Guilty

    shami11

    Believer12

    SaleemRaza

    کک باکسر

    Aamir Siddique

    نادان

    Zed

    #3
    Bawa
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 154
    • Posts: 15514
    • Total Posts: 15668
    • Join Date:
      24 Aug, 2016

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    اعوان بھائی

    ریفرنس بھی دے دیا کریں

    کوئی نہیں جانتا ہے کہ طارق حبیب، احمد ندیم اور مہروز علی خان کس ادارے سے وابستہ ہیں اور یہ آرٹیکل کہاں چھپا ہے؟

    Awan

    • This reply was modified 1 year, 1 month ago by Bawa.
    #4
    Awan
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 152
    • Posts: 2949
    • Total Posts: 3101
    • Join Date:
      10 Jun, 2017

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    اعوان بھائی ریفرنس بھی دے دیا کریں کوئی نہیں جانتا ہے کہ طارق حبیب، احمد ندیم اور مہروز علی خان کس ادارے سے وابستہ ہیں اور یہ آرٹیکل کہاں چھپا ہے؟ Awan

    باوا بھائی میں ابھی لگا رہا تھا آپ نے جلد پڑھ لیا – مجھ سے تصویری شکل میں لگاتے ہوئے کچھ غیر ضروری مواد بھی کاپی ہو جاتا ہے – مہربانی کر کے آپ تصویری شکل میں لگا دیں – شکریہ –

    #5
    Zed
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 136
    • Posts: 1705
    • Total Posts: 1841
    • Join Date:
      17 Feb, 2017

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    تحریک انصاف کو حکومت ملی تو معاشی اعدادوشمار بہتر پوزیشن میں تھے

    I stopped reading after just the first sentence.

    What a crock of BS? There are numerous threads on this forum filled with the economic mess left behind by PMLN and still Awan sb. comes up with this nonsense.

    • This reply was modified 1 year, 1 month ago by Zed.
    #6
    Guilty
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 0
    • Posts: 5390
    • Total Posts: 5390
    • Join Date:
      6 Nov, 2016

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    میں زاتی طورپر ۔۔۔۔ پا کستان کی ۔۔۔  معاشیات ۔۔۔ اقتصادیا ت ۔۔۔ پر بات کرنے کو ۔۔۔۔۔ پا نی میں وٹے مارنے کی سوا کچھ نہیں سمجھتا ہوں ۔۔۔۔

    اس لیے میں نہ کبھی معاشیات پر گفتگو کرتا ہوں نہ  کالےہوئے صفحات پڑھاتا ہوں نہ دلچپسی  لینا گوارہ  ہوں ۔۔۔۔

    #7
    Bawa
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 154
    • Posts: 15514
    • Total Posts: 15668
    • Join Date:
      24 Aug, 2016

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    باوا بھائی میں ابھی لگا رہا تھا آپ نے جلد پڑھ لیا – مجھ سے تصویری شکل میں لگاتے ہوئے کچھ غیر ضروری مواد بھی کاپی ہو جاتا ہے – مہربانی کر کے آپ تصویری شکل میں لگا دیں – شکریہ –

    اعوان بھائی

    آپ نے ٹھیک ہی تو پوسٹ کیا ہے، صرف ریفرنس کی ضرورت تھی جو آپ نے اب دے دیا ہے

    تصویری شکل میں دنیا نیوز کے ای پیپر میں اسے چیک کرتا ہوں

    #8
    GeoG
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 83
    • Posts: 5574
    • Total Posts: 5657
    • Join Date:
      12 Oct, 2016

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    I stopped reading after reading just the first sentence. What a a crock of BS? There numerous threads on this forum filled with the ecnomic mess left behind by PMLN and still Awan sb. comes up with this nonsense.

    صحیح آندے او سرکار

    پٹواری جاندی دفعہ لوکاں نوں ٹیکس دین توں وی منع کر گیے سی

    #9
    Awan
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 152
    • Posts: 2949
    • Total Posts: 3101
    • Join Date:
      10 Jun, 2017

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    I stopped reading after reading just the first sentence. What a a crock of BS? There numerous threads on this forum filled with the ecnomic mess left behind by PMLN and still Awan sb. comes up with this nonsense.

    Please read entire article and see full comparison of everything. There is some truth in it that PML(N) left economic mess for PTI but it does not take two years to come out high imports impact. Your entire logic is standing on high import and low trade balance; please see entire financial history of Pakistan where on numerous occasions we had this imbalance but GDP never went close to zero (before corona number). Shahid Bhai has written on this forum that on several occasions Pakistan has to reduce import in past to bring balance back in trade. Do you think while reducing imports economy will be messed up for ever? Why we cannot increase exports while devaluation of our rupee more than 30%? Is it the only way to improve finances by reducing imports? cannot you bring dollars in investment? There are so many questions PTI government has no any answer. This excuse of high imports cannot be accepted for ever.

    #10
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 164
    • Posts: 5438
    • Total Posts: 5602
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    موجودہ اور پرانی حکومتوں کا نمبروں کے ساتھ اچھا موازنہ ہے – مجھے اچھا لگا اس لئے دوستوں سے شیئر کر رہا ہوں – آسان زبان میں بھی ہے اسلئے اس کی تشریح کے لئے شاہد عباسی بھائی کے ضرورت نہیں – ویسے میرا خیال ہے شاہد بھائی کے بحد جیو جی بھائی محیشت کو ہم سب میں سے بہترین سمجھتے ہیں – ان سے بھی کومنٹس کی درخواست ہے – Bawa GeoG Ghost Protocol Atif Qazi JMP Athar Guilty shami11 Believer12 SaleemRaza کک باکسر Aamir Siddique نادان Zed

    اعوان بھائی،
    معیشت پر جب بھی بات ہوگی ہمارے نونی بھائی جی ڈی پی کے درخت سے نہیں اتریں گے اور انصافی بھائی کرنٹ اکاونٹ خسارے میں پناہ ڈھونڈے گیں . عوام اس صورتحال کی بہترین جج ہو گی اور جب بھی انکو موقع ملے گا تو اپنا فیصلہ سنا دیں گے بشر طیہ کہ آر ٹی ایس کا نظام بیٹھ نہ جائے

    #11
    shami11
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 752
    • Posts: 8937
    • Total Posts: 9689
    • Join Date:
      12 Oct, 2016
    • Location: Pakistan

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    زیڈ – تمہیں نہی لگتا بڑی نازک صورتحال ہے ، حالات بد سے بدتر ہوتے جا رہے ہیں

    I stopped reading after reading just the first sentence. What a a crock of BS? There numerous threads on this forum filled with the ecnomic mess left behind by PMLN and still Awan sb. comes up with this nonsense.
    #12
    Awan
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 152
    • Posts: 2949
    • Total Posts: 3101
    • Join Date:
      10 Jun, 2017

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    صحیح آندے او سرکار پٹواری جاندی دفعہ لوکاں نوں ٹیکس دین توں وی منع کر گیے سی

    میں نے اسلئے زیڈ صاحب کو پورا آرٹیکل پڑھنے کو کہا ہے – ان کی کھوتی دو سال سے صرف زیادہ امپورٹ پر پھنسی ہوئی ہے جب کے محیشت کے کچھ اعداد و شمار اور طریقوں سے بھی بہتر ہو سکتے تھے – میرے خیال سے حکومت اب تک سرمایہ کاروں ، صنعت کاروں اور کاروباری حضرات کا اعتماد حاصل کرنے میں ناکام ہے بلکے یہ تو بیو کریسی کو بھی اعتماد دینے میں ناکام ہوئے ہیں – مجموھی محاشی ماحول کرونا سے پہلے ہی ابتر تھا گویا پہلے ستیا ناس اور اب سوا ستیا ناس

    #13
    shami11
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 752
    • Posts: 8937
    • Total Posts: 9689
    • Join Date:
      12 Oct, 2016
    • Location: Pakistan

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    اعوان بھائی – جیو جی بھائی کا نام لکھنے کے بعد میرا نام لکھنے میں کیا مضائقہ تھا ؟

    shahidabassi

    شاہد بھائی کا ان پٹ ضروری ہے ، ان کی لاجک کے مطابق اس میں بھی میاں صاحب نے جو گچ پانچ سالوں میں ماری ہے اس کا اثر معشیت اور کرونا کی صورت میں پوری دنیا کو بھگتنا پڑ رہا ہے

    بہرحال ، معشیت کی بگڑتی ہوئی صورتحال کا کچھ کریڈٹ کرونا کو بھی دینا پڑے گا ، حالیہ انتخابات کے بعد معشیت کو پروان چڑھانے کے جو خواب اور دعوے کئے جا رہے تھے اس میں سے کچھ بھی پورا ہوتا نظر نہی آ رہا – پاکستان کی ایکسپورٹ کا ٹارگٹ کسی بھی حکومت میں پورا نہی ہوا ، مگر اس حکومت میں اس کا بیڑا غرق ہی ہو گیا

    کچھ اچھے پوائنٹس

    کرنٹ اکاؤنٹ ڈیفیسٹ نیچے آیا ہے ، مگر ہم نے جی ڈی پی کی قربانی دی ہے

    https://www.worldbank.org/en/country/pakistan/overview

    Pakistan: Growth rate of the real gross domestic product (GDP) from 2009 to 2021*

    موجودہ اور پرانی حکومتوں کا نمبروں کے ساتھ اچھا موازنہ ہے – مجھے اچھا لگا اس لئے دوستوں سے شیئر کر رہا ہوں – آسان زبان میں بھی ہے اسلئے اس کی تشریح کے لئے شاہد عباسی بھائی کے ضرورت نہیں – ویسے میرا خیال ہے شاہد بھائی کے بحد جیو جی بھائی محیشت کو ہم سب میں سے بہترین سمجھتے ہیں – ان سے بھی کومنٹس کی درخواست ہے – Bawa GeoG Ghost Protocol Atif Qazi JMP Athar Guilty shami11 Believer12 SaleemRaza کک باکسر Aamir Siddique نادان Zed
    #14
    Awan
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 152
    • Posts: 2949
    • Total Posts: 3101
    • Join Date:
      10 Jun, 2017

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    اعوان بھائی، معیشت پر جب بھی بات ہوگی ہمارے نونی بھائی جی ڈی پی کے درخت سے نہیں اتریں گے اور انصافی بھائی کرنٹ اکاونٹ خسارے میں پناہ ڈھونڈے گیں . عوام اس صورتحال کی بہترین جج ہو گی اور جب بھی انکو موقع ملے گا تو اپنا فیصلہ سنا دیں گے بشر طیہ کہ آر ٹی ایس کا نظام بیٹھ نہ جائے

    آپ کو تو پتا ہے عام عوام تو کیا اچھے خاصے پڑھے لکھے لوگ بھی محیشت کے گورکھ دھندوں کو نہیں سمجھتے – پاکستان میں تو لوگ صرف غربت اور مہنگائی کو دیکھتے ہیں کیونکے ان دو چیزوں کا اثر برائے راست عوام پر پڑتا ہے – ترقیاتی کاموں سے بھی عوام کو حوصلہ ہوتا تھا کہ چلو کچھ تو کر رہے ہیں ہمارے لئے کچھ تو بنا کر جا رہے ہیں – مہنگائی بیروزگاری اور ترقیاتی کاموں کی غیر موجودگی میں میرا دعویٰ ہے کہ حکومت اتنی غیر مقبول ہو چکی ہے کہ پنجاب میں ضمنی انتخاب جیتنے میں بھی اسے شدید مشکلات کا سامنا ہو گا – آپ کا پتا ہے ضمنی انتخاب ہر حکومت چٹکی بجانے میں جیتتی ہے – لوکل باڈی اور گلگت کے الیکشن جیتنے میں بھی حکومت کو شدید مشکلات ہونگی جو اسی سال ہونے ہیں مگر کرونا کی وجہ سے ملتوی بھی ہو سکتے ہیں –

    #15
    shami11
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 752
    • Posts: 8937
    • Total Posts: 9689
    • Join Date:
      12 Oct, 2016
    • Location: Pakistan

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    بنگلہ دیش کی ٹیکسٹائل ایکسپورٹ اس وقت انتالیس ارب ڈالر ہے اور ہماری چھ ارب ڈالر

    #16
    shami11
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 752
    • Posts: 8937
    • Total Posts: 9689
    • Join Date:
      12 Oct, 2016
    • Location: Pakistan

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    مجھے یہ سمجھ نہی آتی ، پاکستان کے کرتا دھرتاؤ ں کو اپنی معشیت کی فکر کے بجائے پڑوسی ملک سے انگل کرنے کی کیا ضرورت ہے

    ہندوستان ٹائمز کا آرٹیکل 

    #17
    Awan
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 152
    • Posts: 2949
    • Total Posts: 3101
    • Join Date:
      10 Jun, 2017

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    اعوان بھائی – جیو جی بھائی کا نام لکھنے کے بعد میرا نام لکھنے میں کیا مضائقہ تھا ؟ shahidabassi شاہد بھائی کا ان پٹ ضروری ہے ، ان کی لاجک کے مطابق اس میں بھی میاں صاحب نے جو گچ پانچ سالوں میں ماری ہے اس کا اثر معشیت اور کرونا کی صورت میں پوری دنیا کو بھگتنا پڑ رہا ہے بہرحال ، معشیت کی بگڑتی ہوئی صورتحال کا کچھ کریڈٹ کرونا کو بھی دینا پڑے گا ، حالیہ انتخابات کے بعد معشیت کو پروان چڑھانے کے جو خواب اور دعوے کئے جا رہے تھے اس میں سے کچھ بھی پورا ہوتا نظر نہی آ رہا – پاکستان کی ایکسپورٹ کا ٹارگٹ کسی بھی حکومت میں پورا نہی ہوا ، مگر اس حکومت میں اس کا بیڑا غرق ہی ہو گیا کچھ اچھے پوائنٹس کرنٹ اکاؤنٹ ڈیفیسٹ نیچے آیا ہے ، مگر ہم نے جی ڈی پی کی قربانی دی ہے https://www.worldbank.org/en/country/pakistan/overview Pakistan: Growth rate of the real gross domestic product (GDP) from 2009 to 2021*

    شامی بھائی آپ ہر فن مولا ہیں خالی محیشت میں آپ کی صلاحیتوں کا اعتراف زیادتی ہو گی – آپ مجھے یہ سمجھا دیں یہ سلسلہ کب تک چلے گا کیا ہم امپورٹ گراتے رہیں گے اور کرنٹ اکاؤنٹ بہتر ہوتا رہے گا مگر جی ڈی ہمیشہ ہی کیا گرتی رہے گی ؟ بہتری کب آئے گی اور کیسے آئے گی ؟ مہنگائی کیسے کم ہو گی اور روزگار کب بہتر ہونگے –

    #18
    shami11
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 752
    • Posts: 8937
    • Total Posts: 9689
    • Join Date:
      12 Oct, 2016
    • Location: Pakistan

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    اعوان بھائی – آپ نے تو پٹھا وار کر دیا

    جس طرح کے حالات ہیں ، ڈالر دو سو کراس جائے گا اور معشیت کی بہتری کے کوئی آثار نہی ہیں ، مجھے خان صاحب پر ترس آتا ہے ان کے ہاتھ میں ٹھلو کے علاوہ کچھ بھی نہی

    شامی بھائی آپ ہر فن مولا ہیں خالی محیشت میں آپ کی صلاحیتوں کا اعتراف زیادتی ہو گی – آپ مجھے یہ سمجھا دیں یہ سلسلہ کب تک چلے گا کیا ہم امپورٹ گراتے رہیں گے اور کرنٹ اکاؤنٹ بہتر ہوتا رہے گا مگر جی ڈی ہمیشہ ہی کیا گرتی رہے گی ؟ بہتری کب آئے گی اور کیسے آئے گی ؟ مہنگائی کیسے کم ہو گی اور روزگار کب بہتر ہونگے –
    #19
    EasyGo
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 4
    • Posts: 1116
    • Total Posts: 1120
    • Join Date:
      5 Nov, 2016
    • Location: -

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    اب اور کیا کرے

    جان دے دے کیا

    #20
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 164
    • Posts: 5438
    • Total Posts: 5602
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: ایک اور مالی سال گزر گیا، حکومت نے کیا کھویا کیا پایا؟

    آپ کو تو پتا ہے عام عوام تو کیا اچھے خاصے پڑھے لکھے لوگ بھی محیشت کے گورکھ دھندوں کو نہیں سمجھتے – پاکستان میں تو لوگ صرف غربت اور مہنگائی کو دیکھتے ہیں کیونکے ان دو چیزوں کا اثر برائے راست عوام پر پڑتا ہے – ترقیاتی کاموں سے بھی عوام کو حوصلہ ہوتا تھا کہ چلو کچھ تو کر رہے ہیں ہمارے لئے کچھ تو بنا کر جا رہے ہیں – مہنگائی بیروزگاری اور ترقیاتی کاموں کی غیر موجودگی میں میرا دعویٰ ہے کہ حکومت اتنی غیر مقبول ہو چکی ہے کہ پنجاب میں ضمنی انتخاب جیتنے میں بھی اسے شدید مشکلات کا سامنا ہو گا – آپ کا پتا ہے ضمنی انتخاب ہر حکومت چٹکی بجانے میں جیتتی ہے – لوکل باڈی اور گلگت کے الیکشن جیتنے میں بھی حکومت کو شدید مشکلات ہونگی جو اسی سال ہونے ہیں مگر کرونا کی وجہ سے ملتوی بھی ہو سکتے ہیں –

    اعوان بھائی،
    عوام معیشت کو سمجھیں یا نہ سمجھیں مگر محسوس ضرور کرتے ہیں مگر خوش کسی سے نہیں ہوتے . اگر اپنے تعصبات اور دیگر سیاست کو ایک طرف رکھیں تو مشرف کے دور میں ہر معاشی اعشاریہ بہتر ہوا تھا چاہے جی ڈی پی ہو ، بر آمدات ہوں، صنعتی ترقی ہو بڑے پراجیکٹس ہوں ، قومی ادارے ہوں، لوگوں کی نیٹ ورتھ ہو ، ایف ڈی آئ ہو ، نج کاری ہو ، میڈیا ہو ، ٹیلی کمیونیکیشن ہو . غرض ہر محاذ پر معاشی بہتری آی تھی مگر مہنگائی ضرور بڑھی تھی جو کہ تیز رفتار ترقی کا ایک ضمنی اثر ہوتا ہے . مگر چونکہ اس حکومت کی اپنی سیاسی بنیادیں نہیں تھیں تو لوگ اس وقت بھی روتے رہتے تھے
    اس بات میں کچھ شبہ نہیں ہے کہ زرداری دور کے مقابلہ میں کٹھن حالت ہو نے کے باوجود نون کے دور میں معاشی بہتری آی تھی معاشی سر گرمی کا ماحول بنا تھا مگر سیاسی عدم استحکام اور محلاتی سازشوں نے معاشی کشتی کو چٹان سے ٹکرانے پر مجبور کردیا ہے
    کرنٹ اکاونٹ میں خسارہ نون کے تاج میں کانٹا ہے مگر جہاں تک میری سمجھ ہے تیز رفتار ترقی کی صورت میں یہ خسارہ ضرور آے گا حالیہ دنوں میں اس خسارہ میں جو کمی آی ہے وہ معاشی سرگرمیوں کی قربانی دیکر ہی آی ہے خسارہ میں ٢٠ ارب ڈالر کی کمی آجاے مگر معیشت میں ساٹھ ارب ڈالر کی کمی واقع ہوجاے تو اس کارکردگی پر سوال ضرور اٹھتے ہیں

Viewing 20 posts - 1 through 20 (of 46 total)

You must be logged in to reply to this topic.

×
arrow_upward DanishGardi