Thread: India's Divider In Chief

Home Forums Hyde Park / گوشہ لفنگاں India's Divider In Chief

This topic contains 32 replies, has 12 voices, and was last updated by  JMP 1 month, 4 weeks ago. This post has been viewed 1119 times

Viewing 20 posts - 1 through 20 (of 33 total)
  • Author
    Posts
  • #1
    BlackSheep
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 15
    • Posts: 1972
    • Total Posts: 1987
    • Join Date:
      11 Feb, 2017
    • Location: عالمِ غیب

    Re: India's Divider In Chief

    India’s Divider In Chief

    Can the World’s Largest Democracy Endure Another Five Years of a Modi Government?

    As India goes to the polls, the world’s biggest democracy is more divided than ever

    By Aatish Taseer

    Of the great democracies to fall to populism, India was the first.

    In 2014, Narendra Modi, then the longtime chief minister of the western state of Gujarat and leader of the Hindu nationalist Bharatiya Janata Party (BJP), was elected to power by the greatest mandate the country had seen in 30 years. India until then had been ruled primarily by one party–the Congress, the party of Indira Gandhi and Jawaharlal Nehru–for 54 of the 67 years that the country had been free.

    Now, India is voting to determine if Modi and the BJP will continue to control its destiny. It is a massive seven-phase exercise spread over 5½ weeks in which the largest electorate on earth–some 900 million–goes to the polls. To understand the deeper promptings of this enormous expression of franchise–not just the politics, but the underlying cultural fissures–we need to go back to the first season of the Modi story. It is only then that we can see why the advent of Modi is at once an inevitability and a calamity for India. The country offers a unique glimpse into both the validity and the fantasy of populism. It forces us to reckon with how in India, as well as in societies as far apart as Turkey and Brazil, Britain and the U.S., populism has given voice to a sense of grievance among majorities that is too widespread to be ignored, while at the same time bringing into being a world that is neither more just, nor more appealing.

    The story starts at independence. In 1947, British India was split in two. Pakistan was founded as a homeland for Indian Muslims. But India, under the leadership of its Cambridge-educated Prime Minister, Jawaharlal Nehru, chose not to be symmetrically Hindu. The country had a substantial Muslim population (then around 35 million, now more than 172 million), and the ideology Nehru bequeathed to the newly independent nation was secularism. This secularism was more than merely a separation between religion and state; in India, it means the equal treatment of all religions by the state, although to many of its critics, that could translate into Orwell’s maxim of some being more equal than others. Indian Muslims were allowed to keep Shari’a-based family law, while Hindus were subject to the law of the land. Arcane practices–such as the man’s right to divorce a woman by repudiating her three times and paying a minuscule compensation–were allowed for Indian Muslims, while Hindus were bound by reformed family law and often found their places of worship taken over by the Indian state. (Modi made the so-called Triple Talaq instant divorce a punishable offense through an executive order in 2018.)

    Nehru’s political heirs, who ruled India for the great majority of those post-independence years, established a feudal dynasty, while outwardly proclaiming democratic norms and principles. India, under their rule, was clubbish, anglicized and fearful of the rabble at the gates. In May 2014 those gates were breached when the BJP, under Modi, won 282 of the 543 available seats in Parliament, reducing the Congress to 44 seats, a number so small that India’s oldest party no longer even had the right to lead the opposition.

    Populists come in two stripes: those who are of the people they represent (Erdogan in Turkey, Bolsonaro in Brazil), and those who are merely exploiting the passions of those they are not actually part of (the champagne neo-fascists: the Brexiteers, Donald Trump, Imran Khan in Pakistan). Narendra Modi belongs very firmly to the first camp. He is the son of a tea seller, and his election was nothing short of a class revolt at the ballot box. It exposed what American historian Anne Applebaum has described as “unresolvable divisions between people who had previously not known that they disagreed with one another.” There had, of course, been political differences before, but what Modi’s election revealed was a cultural chasm. It was no longer about left, or right, but something more fundamental.

    The nation’s most basic norms, such as the character of the Indian state, its founding fathers, the place of minorities and its institutions, from universities to corporate houses to the media, were shown to be severely distrusted. The cherished achievements of independent India–secularism, liberalism, a free press–came to be seen in the eyes of many as part of a grand conspiracy in which a deracinated Hindu elite, in cahoots with minorities from the monotheistic faiths, such as Christianity and Islam, maintained its dominion over India’s Hindu majority.

    .

    .

    .

    http://time.com/5586415/india-election-narendra-modi-2019/

    #2
    BlackSheep
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 15
    • Posts: 1972
    • Total Posts: 1987
    • Join Date:
      11 Feb, 2017
    • Location: عالمِ غیب

    Re: India's Divider In Chief

    ٹائم میگزین کا یہ آرٹیکل اچھا ہے۔۔۔۔۔

    کسی وجہ سے یہ پورا آرٹیکل پوسٹ نہیں پا رہا ہے۔۔۔۔۔

    Shirazi, Qarar, Zinda Rood, Ghost Protocol, shahidabassi, JMP, صحرائی, Rustamshah, Zed

    • This reply was modified 2 months, 1 week ago by  BlackSheep.
    #3
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 123
    • Posts: 3710
    • Total Posts: 3833
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: India's Divider In Chief

    تقسیم کے ستر سالوں کے بعد ہندوستان اپنی اصل کو لوٹ رہا ہے
    یہ کہنا مشکل ہے کہ تقسیم کی وجہ سے ایسا ہو رہا ہے یا ہر حال میں ایسا ہونا ہی تھا

    #4
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 123
    • Posts: 3710
    • Total Posts: 3833
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: India's Divider In Chief

    میرا ایک دوست مودی کا بہت بڑا فین ہے
    کہتا ہے دنیا کے ہر مذھب کا ایک مرکز ہے سواے ہندو مذھب کے
    مزید کہتا ہے کہ ہم کو کیوں سیکولر ازم کا ڈھکوسلہ رچانا ہے جس کو مسلہ ہے وہ پاکستان چلا جائے
    میں سوچتا ہوں کہ کہہ تو درست رہا ہے

    #5
    Shirazi
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 158
    • Posts: 2101
    • Total Posts: 2259
    • Join Date:
      6 Jan, 2017

    Re: India's Divider In Chief

    Interestingly, the article is written by Aatish Taseer, is a British-born writer-journalist, and the son of Indian journalist Tavleen Singh and late Pakistani politician and businessman Salmaan Taseer.

    #6
    bluesheep
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 13
    • Posts: 268
    • Total Posts: 281
    • Join Date:
      7 Dec, 2018
    • Location: Pindi HQ

    Re: India's Divider In Chief

    کچھ عرصے پہلے مجھے شوق ہوا کے میں جانوں کے دنیا میں اوسط آئ قیو لوگوں کا کیا ہوگا تو جو ریسرچ میں کرسکا اسکے مطابق تو لگتا یہی ہے کے دنیا میں اسی سے نوے فیصد لوگوں کا آئ قیو نوے سے نیچے یا اسکے اس پاس ہے، اب ظاہر ہے کے میرے پاس ایسی کوئی چیز نہیں جس پر میں اس بات کو ثابت کرسکوں مگر لگتا کچھ ایسا ہی ہے اور اسکی بہت سی مثالیں ہم اپنے اردگرد بھی آسانی سے دیکھ سکتے ہیں.

    بات کچھ یہ ہے کے کچھ عقلمند لوگوں نے سیکھ لیا ہے کے ماسز کو کس طریقہ سے قابو کرنا ہے، اور یہ کوئی بہت مشکل کام بھی نہیں ہے، انسانی نفسیات پر اس قدر کام ہوچکا ہے کے آپ بہت سکون سے اس بات کی پیشن گوئی کرسکتے ہیں کے کسی خاص ماحول میں انسان کس طرح کا رد عمل دیگا اور اگر آپ کو یہ پتا ہو تو آپ پھر اپنی سیاسی، مذہبی، معاشی حکمت عملی اسی ہی طریقہ سے بنا کر کامیابی حاصل کرسکتے ہیں. اب یہ کامیابی کیا ہوگا یہ آپ کے اپنے مفاد پر اساس کرتا ہے لیکن آپ چاہیں تو لوگوں کو اپنے خیالات سے متاثر کرسکتے ہیں.

    بدقسمتی سے ہم پچھلے کچھ سالوں سے ہم اس کاری گری، جھوٹے پروپیگنڈہ یا جھوٹ کو جس طریقے سے استعمال کیا جارہا ہے اسکا مشاہدہ کر رہے ہیں اور خاص طور پر جس طریقہ سے امریکی انتخابات میں اور پھر یورپ میں لوگوں کے خیالات سے چھیڑ خانی کرکے نتائج پر اثر انداز ہوا گیا اسکا رد عمل اب ہمیں بہت لمبے عرصے تک نظر آے گا.

    بھارت کی اشرافیہ بھی کسی بند خول میں نہیں رہتی، وہاں بھی اس بات کر فورا ادرک ہوگیا تھا آپ کس طریقے سے لوگوں کو آپس میں ایک دوسرے سے لڑا کر اپنے فائدے کیلئے استعمال کرسکتے ہیں. بھارت میں باجپا یا بی جے پی کے پروپیگنڈہ کرنے والوں نے اس بات کو جس خوبصورتی سے اپنے فائدے کیلئے استعمال کیا تھا اور کر رہے ہیں وہ واقع بہترین تھا اور ہے. میرا کی دفا بھارت سے آنے والوں سے رابطہ ہوتا رھتا ہے اور اپ جب بھی ان سے پوچھیں کے مودی کیا اس دفا انتخابات میں جیت جائے گا تو انکا یہی خیال ہوتا ہے کے ہاں، یہ وہ صرف اس بات کے زیر اثر کہتے ہیں جو انکو اپنے اردگرد ماحول میں، میڈیا پر، سوشیل میڈیا پر جو بنا ہوا ہے نظر آتا ہے.

    جب آج کل کے دورمیں آپ ہر آدمی تک بذریعہ موبائل فون ڈائریکٹ پہنچ سکتے ہوں تو اگر آپ اس طریقے کی کاری گری نہیں کریں گے تو پھر آپ غلطی ہی کر رہے ہونگے، کیوں کے آپ کے مقابل میں لوگ یقینا اس منیپولشن کا استعمال کرکے آپ کو تباہ کردیں گے.

    تو بنیادی طور پر ٹیکنولوجی ایک ایسا دو دھاری تلوار ہے جسکی بائی پراڈکٹ شاید یہ جھوٹ بھی ہے جو آج کل دنیا میں بالعموم اور بھارت جیسے ملکوں میں بلخصوص مفادات کے لئے استعمال کیا جارہا ہے. مودی مجھے صرف اگر اس لئے برا لگے کے وہ ہندو ہے یا میری مخالف سیاسی سوچ کا مالک ہے تو اس بات کو میں اپنے حق کیلئے استعمال نہیں کرسکتا، اگر میرے مفادات ہیں تو میں انکو کس بنیاد پر جسٹی فائی کروں گا ؟ صرف اسلئے کے مودی بھارت میں تقسیم کی سیاست کر رہا ہے ؟ میرا نہیں خیال کے اس بات میں کوئی وزن ہوگا، کیوں کے اگر حمام میں سب ہی ننگے ہوں تو پھر آپ کس بنیاد پر لوگوں کو شرم کی اہمیت کا احساس دلائیں گے ؟

    میرا ایک ہی اعتراض ہوگا اس آرٹیکل پر اور وہ یہ کے اس کو لکھنا والا ایک انسان ہے جس پر شبہ ہوسکتا ہے کے وہ متعصب ہے کیوں کا خود پاکستان میں اس وقت اس تقسیم کی سیاست چمک رہی ہے، ہم بھی اس پریڈ سے گزر رہے ہیں جہاں ٹیکنولوجی کے اثر کا اور استعمال کا رد عمل نظر آرہا ہے، ہم سیکھ رہے ہیں اور بہتر ہورہے ہیں اور ابھی اس میں کافی وقت لگے گا جب تمام دنیا مجموعی طور پر اس بات کا ادرک کرلے گی کے تقسیم کرکے رہنے میں اور ساتھ رہنے کے کیا فائدے اور نقصان ہیں اور کونسی راہ بتہر ہوگی. فلحال دنیا میں تقسیم کی سیاست عروج پر ہے اور مجھے نہیں لگتا کےہم بہت جلدی اس تقسیم کی سیاست سے نجات حاصل کرسکتے ہیں، ہاں ہم اسی ٹیکنولجی کا استعمال کرکے شاید اس کے اثر کو کم ضرور کرسکتے ہیں.

    • This reply was modified 2 months, 1 week ago by  bluesheep.
    #7
    Zinda Rood
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 13
    • Posts: 1649
    • Total Posts: 1662
    • Join Date:
      3 Apr, 2018
    • Location: NorthPole

    Re: India's Divider In Chief

    پاکستان اور ہندوستان کے لوگ تقریباً ایک جیسے ہی ہیں، دونوں میں زیادہ فرق نہیں، دونوں کی اکثریت پست ذہنیت کی مالک ہے۔ پاکستان میں چونکہ اقلیتیں بہت ہی کم تعداد میں ہیں، اس لئے یہاں مسلمانوں نے ان کا اچھی طرح گلہ گھونٹ رکھا ہے اور صرف ذرا سی سانس نکلنے کو رستہ چھوڑ رکھا ہے، باقی آواز نکلنے کا تو کوئی امکان نہیں۔ اس لئے یہاں اقلیت مخالف سیاست زیادہ کی جاتی ہے نہ ہی چلتی ہے۔ ہندوستان میں چونکہ مسلمان اقلیت سترہ اٹھارہ کروڑ کے قریب ہے، اس لئے مسلمان مخالف نعرہ کافی بکتا ہے۔ دونوں قوموں کو وطن پرستی یا مذہب پرستی کے نام پر بڑی آسانی سے بھڑکایا جاسکتا ہے۔ ہندوستان میں اگرچہ سیکولرزم ہے، اور پاکستان کی نسبت وہاں بات کرنے کی آزادی بھی زیادہ ہے، مگروہاں کے ہندوؤں کی اکثریت اب بھی وہاں کے مسلمانوں کو پاکستان کا طعنہ دیتے ہیں۔ مودی کا پاکستان مخالف اور مسلمان مخالف نعرہ وہاں بک رہا ہے کیونکہ اس کے خریدار موجود ہیں۔  میرے خیال میں پاکستان اور ہندوستان اپنے آغاز (آزادی) سے ایک قدم بھی آگے نہیں بڑھے، دونوں چھوٹے چھوٹے لایعنی مسائل میں پھنسے ہوئے ہیں۔۔۔ 

    #8
    Guilty
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 0
    • Posts: 3799
    • Total Posts: 3799
    • Join Date:
      6 Nov, 2016

    Re: India's Divider In Chief

    لطیفہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    کہتے ہیں ایک قبا ئلی پٹھان اپنے قبیلے سے نکل کر کسی دور کے شہر میں پہنچا ۔۔۔۔۔۔

    محرم کا مہینہ تھا ۔۔۔۔۔۔ شہر میں شیعہ حضرات محرم کا جلوس نکال رھے تھے ۔۔۔۔۔ سٹرکوں پر خوب ماتم ہورھا تھا ۔۔۔۔

    پٹھان نے شہر میں  ماتم ۔۔۔ خون چھریاں ۔۔۔۔ دیکھیں تو بہت حیران ہوا سوچنے لگا یہ کیا ہورھا ہے ۔۔۔

    پٹھان نے کسی سے پوچھا کہ لوگ ماتم کیوں کررھے ہیں ۔۔۔

    جواب ملا کہ ۔۔۔۔ لوگ کربلا کے شہیدوں کے غم میں ۔۔۔۔۔۔ ما تم کررھے ہیں ۔۔۔۔۔

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    پٹھان نے جواب دیا ۔۔۔۔۔ کربلا کے شہیدوں کو شہید ہوئے تو صد یاں گزرچکی ہیں  ۔۔۔۔۔۔۔ ان لوگوں اتنی صدیاں بعد شہیدوں کی خبرملی ہے 

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    کچھ ایسی ہی  مثال ہے ۔۔۔۔ ٹائم ۔۔۔۔ میں چھپنے والے اس آرٹیکل کی ۔۔۔

    ۔۔۔۔۔ تقیسم کی گیم شروع ہوئے ۔۔۔۔۔ صد یاں ہوچکیں ۔۔۔۔ برصغیر ۔۔۔  سن سینتا لیس میں دو حصوں اور سن ستر میں تین حصوں میں تقسیم ہوچکا ۔۔۔۔

    ۔۔۔۔۔

    کشمیر ۔۔۔ آسام ۔۔۔۔۔۔۔ خالصتان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سندھو دیش ۔۔۔۔ جنا ح پور ۔۔۔۔ آزاد بلوچستان ۔۔۔۔۔ کے نقشے پمفلٹ کب کے چھپ چکے کر بنٹ بھی چکے ۔۔۔۔۔

    ۔۔۔۔ ھندو ۔۔۔ مسلم  ۔۔۔۔۔ پنجا بی ۔۔۔ سندھی ۔۔۔ مہا جر ۔۔۔۔ ۔۔۔  دھا ئیاں پہلے ۔۔۔۔ نفاق و تعصب اپنی اولادوں ۔۔۔۔ اپنی نسلوں ۔۔۔۔ کو ۔۔ فیڈ کرچکے ۔۔۔  ۔۔۔۔۔۔

    ۔۔۔۔۔۔۔

    اس پھدو ۔۔۔ رائٹر ۔۔۔۔۔ کو ۔۔۔۔۔ آج پتہ چلا ہے ۔۔۔۔۔۔ کہ ۔۔۔۔۔ ڈ یوائڈر ان چیف ۔۔۔۔۔ کے بارے میں ۔۔۔۔۔۔

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    • This reply was modified 2 months, 1 week ago by  Guilty.
    #9
    Shirazi
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 158
    • Posts: 2101
    • Total Posts: 2259
    • Join Date:
      6 Jan, 2017

    Re: India's Divider In Chief

    This divider in chief tag can stick in almost any politician unless of course you can win 96% seats like Haseena Wajid. I have serious reservations on Modi, his fundoism and communal outlook. But he is the true populist leader from lower class that India ever had. He will win again, unfortunately

    #10
    JMP
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 214
    • Posts: 3924
    • Total Posts: 4138
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: India's Divider In Chief

    BlackSheep

    محترم

    میں تذبب میں ہوں کے آپ مجھے اس مضمون کو پڑھنے کی ترغیب دے رہے ہیں یا مجھ سے توقع لگا بیٹھے ہیں کے میں کوئی تبصرہ کروں . اپنا نام ان نامی گرامی تبصرہ نگاروں اور بہترین لکھنے والوں کی فہرست میں دیکھ کر لگ تو رہا ہے کہ شاید آپ چاہتے ہیں کے میں صرف مضمون پڑھوں مگر پھر سوچتا ہوں کے اس موقع کا نا جائز فائدہ اٹھا کر کچھ بے معنی لکھا جاۓ تو جناب آپ اپنی غلطی کا خمیازہ بھگتیں اور آپ کے توسط سے باقی دانشگرد بھی

    اس تحریر کو پڑھتے ہوے کچھ باتیں ذھن نشیں رکھئیے گا

    ١) اوپر والے کی ایک میری سمجھ میں نہ آنے والی حکمت کے تحت میں ایک مومن نہیں ہوں بلکہ ایک کافر ہوں.
    ٢) میں اپنے آپکو پاکستانی سمجھتا ہوں اور گو کے بھارت میں کافر اکثریت میں ہیں، میں بھارت کے ساتھ کبھی بھی قلبی اور روحانی لگاؤ نہیں بنا سکا ہوں ، نہ بنانا چاہتا ہوں نہ کبھی بنا پاؤں گا
    ٣) میرے نزدیک ایک انسان اپنی جاۓ پیدائش سے جو لگاؤ ہوتا ہے وہ کسی اور جگہہ سے نہیں ہو سکتا
    ٤) میرے نزدیک انسانوں کو ملانے اور جوڑنے میں جو کردار جاۓ پیدائش اور زبان ادا کرتے ہیں وہ مذہب کبھی بھی نہیں کرتا
    ٥) میں انسان میں مذہب، زبان، علاقیت ، رنگ، نسل وغیرہ وغیر کی بنیاد پر تقسیم کے خلاف ہوں . میرے نزدیک ہر ملک کے شہری کو یکساں حقوق اور مواقع ملنے چاہیں
    ٦) ممکن ہے کے مومنین اس بات سے سخت ناراض ہو جائیں. میری نظر میں مذہب افضل نہیں ہے انسان ہے
    ٧) میرا تعلق اس علاقے سے ہے جو ہمیشہ سے موجودہ پاکستان کا حصہ رہا ہے اور اس علاقہ میں کم از کم آج تک مومنین اور کافروں میں کسی قسم کے سنگین تو چھوڑیں کوئی بھی تشدد یا نفرت کا واقعہ پیدا نہیں ہو سکا ہے بلوچستان میں بھی ایسا ہی ہے اور اگر سمجھنے والے سمجھنا چاہیں کے کیسے مومن اور کافر ایک ساتھ رہ سکتے ہیں اور اچھی طرح رہ سکتے ہیں تو ان علاقوں کی طرف دیکھیں البتہ بلوچستان میں آج کل ایک مومن دوسرے کو اس لئے مار رہا ہے کے انکے نزدیک دوسرا مومن مبینہ طور پر غاصب ہے. .
    ٩) میں کبھی بھارت نہیں گیا ہوں اور بہت کم بھارتیوں سے سلام دعا ہے . جو کچھ جانتا ہوں وہ یا تو پڑھا ہے اور شاید پڑھ کر تھوڑا بہت سمجھا ہے (لہٰذا بہت غلط ہو سکتا ہوں) یا کچھ مشھائدہ ہے
    ١٠) لکھ کر پڑھتا نہیں ہوں لہٰذا املا کی غلطیاں اور ربط کا فقدان عام ہو گا

    پاکستان بننے کے دو تین سال بعد جب میں کوئی پانچ چھ سال کا ہونگا تو اپنے پھوپھی زد بھائی کے ساتھ مل کر ہمیشہ منصوبے بناتا تھا کے بڑا ہو کر اپنے پھوپھی زاد بھائی کے ساتھ مل کر بھارت پر حملہ کروں گا اور اسکو نیست اور نابود کر دوں گا اور پھر جیسے جیسے بڑا ہوتا گیا ( جسمانی طور پر کیونکہ آج تک ذہنی طور پر بچہ ہی رہا ہوں اور شاید اچھا ہے کے بچہ ہوں کیونکہ جو بالغ کرتے ہیں وہ سمجھ نہیں آتا کیسے کر لیتے ہیں اور بالغ تفریق بہت زیادہ کرتے ہیں کیونکہ انکی خواھشات بہت ہوتی ہیں جبکہ بچے تفریق سے تقریباً نا بلد ہوتے ہیں) دیکھا کے “پاکستان اسلام کے نام پر بنایا گیا ہے ” کے کیا معنی ہیں. دیکھا کے ملک میں شہریوں کے درمیان تفریق ہے. ایک کافر کبھی ملک کا سربراہ نہیں بن سکتا نہ کبھی فوج میں اعلیٰ عہدے پر فائز ہو سکتا ہے نہ کبھی عدالت عظمیٰ میں ( گو محترم نواز شریف کے زمانہ اقتدار میں مرحوم بھگوان داس کو عدالت عظمیٰ میں سب سے بڑے عہدے فر فائز دیکھ کر ملک کے حوالے سے سر فخر سے بلند ہو گیا ) اور پھر آسیہ بی بی جیسے واقعیات دیکھے .یہ سب دیکھ کر بہت عجیب سا لگا . ایسا لگا کے جیسے مجھ کافر کا جنت میں داخلہ منع ہے اور جنت پر صرف مومنین کی اجارہ داری ہے ایسے ہی ایسا ہی اس پاک سر زمین پر بھی ہے

    جیسا کے پہلے گوش گزار کر چکا ہوں بھارت سے کبھی لگاؤ نہیں رہا . کبھی دل نہیں چاہا کے بھارت کی طرف نقل مکانی کروں . مگر بھارت کا سیکولر ہونا ہمیشہ اچھا لگا . شاید کاغذ کی حد تک ہی ہے مگر دل کو اطمینان ہوا کے پڑوس میں انسان کو مذہب کے حوالے سے نہیں بلکہ انسان کے حوالے سے برابر سمجھا جاتا ہے (کاغذ پر ہی سہی). اچھا لگا دیکھ کر کے بھارت میں مومن صدر بنے اور عدالت عظمیٰ اور فوج میں اعلیٰ عہدوں پر برجمان ہوۓ . جب کبھی بھارت میں فرقہ وارانہ فساد ہوے تو بہت برا لگا مگر یہ فسادات اتنے لگاتار نہیں تھے کے دھڑکا لگے کے بھارت اپنا سیکولر تشخص برقرار نہیں رکھ سکے گا . ہمیشہ یہ خواہش رہی کے ایک دن اس پاک لوگوں کی دھرتی میں بھی انسان کی برابری مقدم ہو گی

    اور پھر مودی نمودار ہوتا ہے . مودی جس پر بد عنوانی کا کوئی دھبہ نہیں ہے. مودی جو ایک عام آدمی سے ملک کا وزیر اعظم بن جاتا ہے . یہ تو بہت اچھا ہے کے ایک ایسا شخص جو بد عنوان نہیں ہے اور عام ہے ایک اعلیٰ مرتبے پر پہنچ جاتا جاتا ہے مگر یہی مودی بھارت کو ہندوستان بنانے لگ جاتا ہے. وہ بھارت جہاں انسان کو برابر سمجھنے کا دعویٰ کیا جاتا ہے وہاں خود بکرے کا گوشت شوق سے کھانے والے کسی اور انسان کی جان کے اس لئے درپے ہو جاتے ہیں کے وہ گاۓ کا گوشت کھاتے ہیں ( بحیثیت ایک سبزی خور کے مجھے کسی بھی جانور کے گوشت کھانے کا کوئی شوق نہیں ہے نہ رنج کے یہ فضیلت میرے حصے میں نہیں ہے البتہ گوشت کے نام پر کسی دوسرے انسان کی جان لینے کا تصور بھی بہت بھیانک لگتا ہے مجھے )

    میری نظر میں مودی نے کافی حد تک بھارت کو ہندوستان بنا دیا ہے اور اگر یہ مزید پانچ سال حکمرانرہا جس کہ قوی امکانات ہیں تو بھارت بھارت نہیں رہے گا اور ہندوستان بن جاۓ گا اور شاید پھر کبھی بھارت نہ بن سکے . بھارت اپنا سیکولر اور انسانی برابری کا تشخص کھو دے گا یر یہ میرے نزدیک ایک بہت بڑا سانحہ ہو گا ایک ارب کی آبادی کے ملک کے لئے اور آس پاس کے ملکوں کے لئے

    ایک اور موضوع میں کہیں لکھا ہے کے انسان کی نفسیات سمجھ کر کچھ بیچنا مشکل نہیں ہوتا/ مودی نے بھارتیوں کی نفسیات کی سمجھ کر تشخص بیچا ہے اور کامیابی سے بیچا ہے اور اپنا مقصد بھی حاصل کر لیا ہے . جیسا ہمارے ملک میں بھی کئی کئی طرح کے تشخص بیچے گئے ہیں اور ایک پاکستانی قوم کی جگہہ کئی کئی قومیں بن گئی ہیں جو نہ ایک دوسرے سے نفرت کرتی ہیں بلکہ دوسرے کی جان لینے سے بھی گرازی نہیں کرتیں اس طرح ایک ارب کے ملک میں کتنا ظلم ہو سکتا ہے اگر انسان کی برابری ختم ہو کر مذہب کے نام پر افضلیت کی سندیں بٹنے لگ جائیں . اور مودی ایسا کر رہا ہے. ممکن ہے کے کافر اس کو صحیح سمجھیں مگر انسان اس کو کبھی صحیح نہیں سمجھ سکتا . . مودی جس کے جماعت میں بہت کم مسلمان پارلیمنٹ کا حصہ ہیں تو وہ کیسے کہہ سکتے ہیں کے بھارت میں جمہوریت ہے . بھارت جہاں ایک کافر ایک مومن سے نفرت کرنے لگ جاۓ تو کہاں بھارت اور کہاں سیکولر . یہی وجہ ہے کے کافی عالمی جریدوں میں مودی اور بھارت کا تشخص بگڑ رہا ہے. عالمی سطح پر اس بات پر تشویش کا اظہار متواتر ہو رہا ہے اب

    مودی میرے خیال میں اس خطے کے لئے نقصاندہ ہے .

    #11
    JMP
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 214
    • Posts: 3924
    • Total Posts: 4138
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: India's Divider In Chief

    This divider in chief tag can stick in almost any politician unless of course you can win 96% seats like Haseena Wajid. I have serious reservations on Modi, his fundoism and communal outlook. But he is the true populist leader from lower class that India ever had. He will win again, unfortunately

    Shirazisahib

    An example of one of the ills of democracy and selection (I deliberately used the word selection) of choice through the process of popular voting.

    #12
    صحرائی
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 7
    • Posts: 434
    • Total Posts: 441
    • Join Date:
      27 Oct, 2018
    • Location: Bermuda

    Re: India's Divider In Chief

    مودی ایک  غیر مقبول  اور انتہا پسند سوچ کا نمائندہ ہے ، یہ نظریہ ڈیفنڈ تو نہیں کیا جا سکتا اور اس کے حامی کھل کر اس کا اظہار بھی نہیں کر سکتے

    لیکن ایک خاموش اور واضخ اکثریت اسے سپورٹ کرتی ہے

    ہندوستان صرف ہندؤں کا اس کا مرکزی خاکہ اور یہاں سے سپورٹ بیس ابھرتی ہے ، باقی نوٹ بندی ، کرپشن ، وکاس سب ایڈ آنز

    #13
    BlackSheep
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 15
    • Posts: 1972
    • Total Posts: 1987
    • Join Date:
      11 Feb, 2017
    • Location: عالمِ غیب

    Re: India's Divider In Chief

    میرا تعلق اس علاقے سے ہے جو ہمیشہ سے موجودہ پاکستان کا حصہ رہا ہے اور اس علاقہ میں کم از کم آج تک مومنین اور کافروں میں کسی قسم کے سنگین تو چھوڑیں کوئی بھی تشدد یا نفرت کا واقعہ پیدا نہیں ہو سکا ہے بلوچستان میں بھی ایسا ہی ہے اور اگر سمجھنے والے سمجھنا چاہیں کے کیسے مومن اور کافر ایک ساتھ رہ سکتے ہیں اور اچھی طرح رہ سکتے ہیں تو ان علاقوں کی طرف دیکھیں

    ایاز امیر نے ایک دفعہ اپنے کالم میں بڑی دلچسپ بات لکھی تھی۔۔۔۔۔

    پاکستان میں دو ہی آزاد اور لبرل قومیں ہیں۔۔۔۔۔ بلوچ اور سندھی۔۔۔۔۔

    نظریہ پاکستان اور اِس قسم کی ملتی جلتی بیماریاں، ہم پنجابیوں کو زیادہ لاحق ہیں۔۔۔۔۔

    ;-) :) ;-)

    #14
    BlackSheep
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 15
    • Posts: 1972
    • Total Posts: 1987
    • Join Date:
      11 Feb, 2017
    • Location: عالمِ غیب

    Re: India's Divider In Chief

    تقسیم کے ستر سالوں کے بعد ہندوستان اپنی اصل کو لوٹ رہا ہے

    یہ بھی کہا جاسکتا ہے کہ جو کام پاکستان والوں نے دو سال کے اندر اندر قراردادِ مقاصد منظور کر کے کیا تھا ویسا ہی کام کرنے کیلئے انڈیا نے ساٹھ پینسٹھ سال لئے۔۔۔۔۔

    کہا جاسکتا ہے کہ یہاں پاکستان نے انڈیا پر واضح برتری دکھائی۔۔۔۔۔

    ویسے بھی پاکستان انڈیا کے لوگ ایک ہی ریشئل اسٹاک کے ہیں۔۔۔۔۔

    • This reply was modified 2 months ago by  BlackSheep.
    #15
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 123
    • Posts: 3710
    • Total Posts: 3833
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: India's Divider In Chief

    #16
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 123
    • Posts: 3710
    • Total Posts: 3833
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: India's Divider In Chief

    یہ بھی کہا جاسکتا ہے کہ جو کام پاکستان والوں نے دو سال کے اندر اندر قراردادِ مقاصد منظور کر کے کیا تھا ویسا ہی کام کرنے کیلئے انڈیا نے ساٹھ پینسٹھ سال لئے۔۔۔۔۔ کہا جاسکتا ہے کہ یہاں پاکستان نے انڈیا پر واضح برتری دکھائی۔۔۔۔۔ ویسے بھی پاکستان انڈیا کے لوگ ایک ہی ریشئل اسٹاک کے ہیں۔۔۔۔۔

    پاکستان کی تو بنیاد ہی مذھب تھا پتا نہیں دو سال کا عرصہ کسطرح گزار لیا شایدمنزل کے حصول کے بعد مقاصد کا تعین ہو رہا تھا کہ جھوٹے خابوں کی تعبیر نہیں تھی

    مسلمان خون ہزار سال اقتدار کے نشہ میں تھا ٹھیک ہے دو سو سال انگریز کے غلام رہے مگر کھال اسکی سفید تھی

    :cwl: :cwl: :cwl:

    ہندوستان کا مقدمہ فرق ہے تاریخ میں شاید پہلی مرتبہ ہندو بغیر ڈرے سہمے پولیٹیکل کریکٹنس کے بغیر بطور ہندو خطہ پر حکمرانی کرنے جارہا ہے جب ایک ہجوم کسی مسلم کو نذر آتش کرتا ہے تو شاید نسل در نسل غلامی کا بدلہ بھی ساتھ ہی چکاتا ہے
    یہاں ایک بہت بڑا مسلہ ہے اقلیت بھی بہت بڑی تعداد میں ہے اتنی بڑی کہ کسی ایک بوٹ میں بھی نہیں سما سکتی کہ سمندر برد کرنے کے شوقین اپنا شوق پورا کرسکیں

    :cwl: :cwl: :cwl:
    مجھے پھر بھی امید ہے کہ ستر سالوں کی جمہوریت ،خصوصا آزادی اظہار کی آزادی اس پاگل پن پر قابو پانے میں کچھ مدد کر پاے گی

    #17
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 123
    • Posts: 3710
    • Total Posts: 3833
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: India's Divider In Chief

    ایاز امیر نے ایک دفعہ اپنے کالم میں بڑی دلچسپ بات لکھی تھی۔۔۔۔۔ پاکستان میں دو ہی آزاد اور لبرل قومیں ہیں۔۔۔۔۔ بلوچ اور سندھی۔۔۔۔۔ نظریہ پاکستان اور اِس قسم کی ملتی جلتی بیماریاں، ہم پنجابیوں کو زیادہ لاحق ہیں۔۔۔۔۔ ;-) :) ;-)

    یہ بات درست ہے کہ سندھی اور بلوچی اقوام میں مذہبی انتہا پسندی نہ ہونے کے برابر ہے بلوچوں کا تو مجھے علم نہیں ہے کہ وہاں مذہبی اقلیت اور انسے اکثریت کا کسطرح تعلق ہے مگر سندھ میں ہندووں کی کثیر تعداد ہونے کے باوجود مذہبی بنیادوں پر تقسیم اتنی واضح نظر نہیں آتی انتہائی قابل ستائش بات ہے

    ان عوامل پر بھی گفتگو ہوسکتی ہے کہ ایسا کیوں ہے مگر معروف معنوں میں ان کو لبرل کہنا ایک تہمت ہی محسوس ہوتی ہے

    #18
    Bawa
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 138
    • Posts: 10843
    • Total Posts: 10981
    • Join Date:
      24 Aug, 2016

    Re: India's Divider In Chief

    پاکستان بننے کے دو تین سال بعد جب میں کوئی پانچ چھ سال کا ہونگا 

    :thinking:

    پچھلے سال تک جو میرے ساتھ انڈر نائن ٹین میں کھیلتا رہا ہے، پھروہ کون تھا؟

    :)

    #19
    BlackSheep
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 15
    • Posts: 1972
    • Total Posts: 1987
    • Join Date:
      11 Feb, 2017
    • Location: عالمِ غیب

    Re: India's Divider In Chief

    آتش تاثیر کا ایک پرانا مضمون پہلے بھی یہاں لگایا ہے۔۔۔۔۔ مَیں سمجھتا ہوں پاکستان کا شناختی بحران پاکستان کے بہت بڑے مسائل میں سے ایک ہے۔۔۔۔۔ اور ہم اِس موضوع پر بحث کرنے سے ڈرتے ہیں۔۔۔۔۔  شاید منافقت ہمارے گھٹی میں شامل ہے۔۔۔۔۔ مغربی سیکولر ممالک میں رہ سکتے ہیں وہاں کی شہریت کا حلف اٹھاسکتے ہیں لیکن پاکستان کیلئے سیکولرازم کو بُرا سمجھتے ہیں اور پاکستان میں اسلامی نظام کا نفاذ چاہتے ہیں۔۔۔۔۔

    پاکستان بنتے وقت پاکستان میں کوئی لگ بھگ بائیس تئیس فیصد آبادی غیر مسلم تھی۔۔۔۔۔ آج کوئی تین چار فیصد۔۔۔۔۔ غیر مسلم کیوں نہیں رہنا چاہتے پاکستان میں۔۔۔۔۔

    اگر مَیں پاکستان کی تاریخ پر غور کروں تو ایک واقعہ جس نے پاکستان کیلئے ایک ترقی یافتہ مملکت بننے کا موقع بری طریقے سے ضائع کیا تو وہ میرے نزدیک قراردادِ مقاصد تھی۔۔۔۔۔ اُس وقت کے جو ہندو ممبرانِ اسمبلی تھے انہوں نے شور مچایا تھا کہ جناح صاحب نے ہم سے یہ سب کا نہیں کہا تھا، اُنہوں نے تو کچھ اور وعدہ کیا تھا۔۔۔۔۔ خیر اُن ہندو ممبران کی آواز دبا دی گئی۔۔۔۔۔ اپنے سَر ظفر اللہ خان نے بھی قراردادِ مقاصد کے حق میں بڑی جوشیلی تقریر کی۔۔۔۔۔  پھر جب انیس سو چوہتر میں احمدیوں کو غیر مسلم قرار دیا گیا تو یہ تو ہونا ہی تھا۔۔۔۔۔

    اِس صفحہ پر جے ایم پی صاحب نے اپنی بات شروع کرنے سے پہلے کچھ وضاحتیں دی ہیں۔۔۔۔۔ اُن کو آخر یہ وضاحتیں دینے کی ضرورت کیوں پیش آئی۔۔۔۔۔

    جہاں تک میرا خیال ہے کہ مسئلہ پاکستان نامی عمارت کی بنیادوں میں ہے۔۔۔۔۔ کچھ اسٹرکچرل فالٹس ہیں۔۔۔۔۔ پاکستان مسلمانوں کیلئے بنا تھا یا اسلام کیلئے۔۔۔۔۔ ثقافت مذہب کے اوپر ہے یا مذہب ثقافت کے اوپر ہے۔۔۔۔۔۔ کیا پاکستانی ایک قوم ہیں یا دنیا بھر کے مسلمان ایک قوم ہیں۔۔۔۔۔ کیا ہمارا جغرافیہ کراچی سے خیبر تک ہے یا پھر نیل کے ساحل سے لیکر تابخاکِ کاشغر تک۔۔۔۔۔ کیا ہم پاکستان میں اسلامی نظام کا نفاذ چاہتے ہیں یا سیکولرازم کا۔۔۔۔۔ ہم پاکستان کو کیا بنانا چاہتے ہیں۔۔۔۔۔۔ یہ وہ چند سوالات ہیں جن کے جوابات پر اتفاق نہ ہو تو وہی دائروں کا سَفر جو پچھلے ساٹھ ستر سالوں سے جاری ہے مزید جاری رہے گا اور وقتاً فوقتاً ریاست بھی مشرف بہ اسلام ہوتی رہے گی۔۔۔۔۔۔ میرے پسندیدہ صحافیوں میں سے ایک، نصرت جاوید جب اپنے سابقہ پروگرام میں یہ کہتا ہے کہ میرا تعلق عرب سے نہیں بلکہ ڈانسنگ گرل آف موئن جودڑو کی ثقافت سے ہے تو ساتھ بیٹھے مشتاق منہاس کی جانب سے کافی مزاحمت ملتی ہے۔۔۔۔۔

    Why My Father Hated India

    By Aatish Taseer

    Ten days before he was assassinated in January, my father, Salman Taseer, sent out a tweet about an Indian rocket that had come down over the Bay of Bengal: “Why does India make fools of themselves messing in space technology? Stick 2 bollywood my advice.”

    My father was the governor of Punjab, Pakistan’s largest province, and his tweet, with its taunt at India’s misfortune, would have delighted his many thousands of followers. It fed straight into Pakistan’s unhealthy obsession with India, the country from which it was carved in 1947.

    Though my father’s attitude went down well in Pakistan, it had caused considerable tension between us. I am half-Indian, raised in Delhi by my Indian mother: India is a country that I consider my own. When my father was killed by one of his own bodyguards for defending a Christian woman accused of blasphemy, we had not spoken for three years.

    To understand the Pakistani obsession with India, to get a sense of its special edge—its hysteria—it is necessary to understand the rejection of India, its culture and past, that lies at the heart of the idea of Pakistan. This is not merely an academic question. Pakistan’s animus toward India is the cause of both its unwillingness to fight Islamic extremism and its active complicity in undermining the aims of its ostensible ally, the United States.

    The idea of Pakistan was first seriously formulated by neither a cleric nor a politician but by a poet. In 1930, Muhammad Iqbal, addressing the All-India Muslim league, made the case for a state in which India’s Muslims would realize their “political and ethical essence.” Though he was always vague about what the new state would be, he was quite clear about what it would not be: the old pluralistic society of India, with its composite culture.

    Iqbal’s vision took concrete shape in August 1947. Despite the partition of British India, it had seemed at first that there would be no transfer of populations. But violence erupted, and it quickly became clear that in the new homeland for India’s Muslims, there would be no place for its non-Muslim communities. Pakistan and India came into being at the cost of a million lives and the largest migration in history.

    This shared experience of carnage and loss is the foundation of the modern relationship between the two countries. In human terms, it meant that each of my parents, my father in Pakistan and my mother in India, grew up around symmetrically violent stories of uprooting and homelessness.

    But in Pakistan, the partition had another, deeper meaning. It raised big questions, in cultural and civilizational terms, about what its separation from India would mean.

    In the absence of a true national identity, Pakistan defined itself by its opposition to India. It turned its back on all that had been common between Muslims and non-Muslims in the era before partition. Everything came under suspicion, from dress to customs to festivals, marriage rituals and literature. The new country set itself the task of erasing its association with the subcontinent, an association that many came to view as a contamination.

    Had this assertion of national identity meant the casting out of something alien or foreign in favor of an organic or homegrown identity, it might have had an empowering effect. What made it self-wounding, even nihilistic, was that Pakistan, by asserting a new Arabized Islamic identity, rejected its own local and regional culture. In trying to turn its back on its shared past with India, Pakistan turned its back on itself.

    But there was one problem: India was just across the border, and it was still its composite, pluralistic self, a place where nearly as many Muslims lived as in Pakistan. It was a daily reminder of the past that Pakistan had tried to erase.
    Pakistan’s existential confusion made itself apparent in the political turmoil of the decades after partition. The state failed to perform a single legal transfer of power; coups were commonplace. And yet, in 1980, my father would still have felt that the partition had not been a mistake, for one critical reason: India, for all its democracy and pluralism, was an economic disaster.
    Pakistan had better roads, better cars; Pakistani businesses were thriving; its citizens could take foreign currency abroad. Compared with starving, socialist India, they were on much surer ground. So what if India had democracy? It had brought nothing but drought and famine.

    But in the early 1990s, a reversal began to occur in the fortunes of the two countries. The advantage that Pakistan had seemed to enjoy in the years after independence evaporated, as it became clear that the quest to rid itself of its Indian identity had come at a price: the emergence of a new and dangerous brand of Islam.

    As India rose, thanks to economic liberalization, Pakistan withered. The country that had begun as a poet’s utopia was reduced to ruin and insolvency.

    The primary agent of this decline has been the Pakistani army. The beneficiary of vast amounts of American assistance and money—$11 billion since 9/11—the military has diverted a significant amount of these resources to arming itself against India. In Afghanistan, it has sought neither security nor stability but rather a backyard, which—once the Americans leave—might provide Pakistan with “strategic depth” against India.

    In order to realize these objectives, the Pakistani army has led the U.S. in a dance, in which it had to be seen to be fighting the war on terror, but never so much as to actually win it, for its extension meant the continuing flow of American money. All this time the army kept alive a double game, in which some terror was fought and some—such as Laskhar-e-Tayyba’s 2008 attack on Mumbai—actively supported.

    The army’s duplicity was exposed decisively this May, with the killing of Osama bin Laden in the garrison town of Abbottabad. It was only the last and most incriminating charge against an institution whose activities over the years have included the creation of the Taliban, the financing of international terrorism and the running of a lucrative trade in nuclear secrets.

    This army, whose might has always been justified by the imaginary threat from India, has been more harmful to Pakistan than to anybody else. It has consumed annually a quarter of the country’s wealth, undermined one civilian government after another and enriched itself through a range of economic interests, from bakeries and shopping malls to huge property holdings.

    The reversal in the fortunes of the two countries—India’s sudden prosperity and cultural power, seen next to the calamity of Muhammad Iqbal’s unrealized utopia—is what explains the bitterness of my father’s tweet just days before he died. It captures the rage of being forced to reject a culture of which you feel effortlessly a part—a culture that Pakistanis, via Bollywood, experience daily in their homes.

    This rage is what makes it impossible to reduce Pakistan’s obsession with India to matters of security or a land dispute in Kashmir. It can heal only when the wounds of 1947 are healed. And it should provoke no triumphalism in India, for behind the bluster and the bravado, there is arid pain and sadness.

    https://www.wsj.com/articles/SB10001424052702304911104576445862242908294

    • This reply was modified 2 months ago by  BlackSheep.
    #20
    صحرائی
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 7
    • Posts: 434
    • Total Posts: 441
    • Join Date:
      27 Oct, 2018
    • Location: Bermuda

    Re: India's Divider In Chief

    ایک سوال

    کیا قائد اعظم اپنی شخصیت کے برعکس خود بھی نظام ریاست کے لیے تضادات کا شکار نہیں تھے ، اس نے مولیوں کے لیے بھی کافی سپورٹنگ میٹریل چھوڑا ہے جس پر وہ خلافت کی رٹ لگائے رہتے ہے اور لبرلز کے لیے بھی جس پر وہ ایک سیکولر ریاست کے درپے ہے ؟

Viewing 20 posts - 1 through 20 (of 33 total)

You must be logged in to reply to this topic.

Navigation