Thread: ٣ برس میں وزیر اعظم کی آمدن کم، بلاول، زرداری اور شہباز کی آمدنی میں اضافہ

Home Forums Siasi Discussion ٣ برس میں وزیر اعظم کی آمدن کم، بلاول، زرداری اور شہباز کی آمدنی میں اضافہ

This topic contains 0 replies, has 1 voice, and was last updated by  حسن داور 1 week, 5 days ago. This post has been viewed 35 times

Viewing 1 post (of 1 total)
  • Author
    Posts
  • #1
    حسن داور
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Expert
    • Threads: 3754
    • Posts: 2029
    • Total Posts: 5783
    • Join Date:
      8 Nov, 2016

    Re: ٣ برس میں وزیر اعظم کی آمدن کم، بلاول، زرداری اور شہباز کی آمدنی میں اضافہ

    سرکاری دستاویزات کے مطابق اہم و سرکردہ سیاستدانوں کی حالیہ سالوں میں زراعت اور دیگر ذرائع سے کُل آمدن میں کمی و بیشی کی مختلف کہانیوں کے ساتھ واضح فرق سامنے آیا۔
    وزیر اعظم عمران خان کی 2015 میں کُل آمدن 3 کروڑ 56 لاکھ روپے تھی جو 2016 میں کم ہوکر 1 کروڑ 29 لاکھ ہوئی اور 2017 میں یہ مزید کم ہوکر صرف 47 لاکھ روپے ہوگئی۔
    ٢٠١٥ میں عمران خان کی آمدن کا بڑا حصہ ان کے اسلام آباد کے ڈپلومیٹک انکلیو میں واقع 2 کروڑ کے فلیٹ کی فروخت سے حاصل ہوا تھا جبکہ 98 لاکھ روپے انہیں بیرون ممالک سے رقم کی مد میں ملے تھے۔
    دستاویزات میں 34 لاکھ ان کی زراعت سے آمدنی، رکن قومی اسمبلی کی حیثیت سے تنخواہ کی مد میں 9 لاکھ 21 ہزار روپے، پی ایل ایس منافع 7 لاکھ 62 ہزار روپے اور پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کی پینشن 4 لاکھ 10 ہزار روپے بتایا گیا۔
    رواں سال ان کی کُل آمدنی کم ہوکر 1 کروڑ 29 لاکھ روپے ہوگئی جس میں سے انہوں نے 74 لاکھ روپے صرف غیر ملکی خدمات سے حاصل کیے۔
    ان کی زرعی آمدنی میں بھی کمی سامنے آئی جو گزشتہ سال 34 لاکھ کے مقابلے میں اس سال 33 لاکھ روپے ہوئی۔
    انہوں نے رکن قومی اسمبلی ہونے کے ناطے 9 لاکھ 54 ہزار روپے تنخواہ لی، پی ایل ایس منافع میں انہیں 7 لاکھ 33 ہزار روپے ملے اور پی سی بی کی پینشن 5 لاکھ 40 ہزار روپے ملی۔
    ٢٠١٧ میں عمران خان کی زرعی آمدنی اور پی ایل ایس منافع میں کمی سامنے آئی جو بالترتیب گزشتہ سال کے 33 لاکھ سے 23 لاکھ اور 7 لاکھ 33 ہزار سے 67 ہزار ٦٢٠ روپے ہوگئے تھے۔
    رکن قومی اسمبلی ہونے کی حیثیت سے ان کی تنخواہ میں 18 لاکھ روپے کا اضافہ ہوا اور پی سی بی کی پینشن کی مد میں انہیں 5 لاکھ 40 ہزار روپے ملے۔
    اس کے بر عکس قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر شہباز شریف کی کُل آمدنی میں مسلسل اضافہ دیکھا گیا جو 2015 میں 76 لاکھ تھی، 2016 میں 95 لاکھ ہوئی اور 2017 میں ایک کروڑ روپے سے بھی زائد رہی۔
    تاہم ان کی زرعی آمدنی میں کمی سامنے آئی جو 2015 میں 65 لاکھ، 2016 میں 50 لاکھ اور 2017 میں مزید کم ہوکر 35 لاکھ روپے رہ گئی تھی جبکہ ان کی زمینوں میں بھی اس عرصے میں اضافہ سامنے آیا جو 585 کنال سے بڑھ کر 673 کنال ہوگئی۔
    ان کے بیٹے حمزہ شہباز کی زرعی آمدنی سمیت کل آمدنی دونوں میں ہی اضافہ دیکھنے میں آیا۔
    حمزہ شہباز کی 2015 میں کل آمدن ایک کروڑ 91 لاکھ روپے تھی، 2016 میں یہ 2 کروڑ 15 لاکھ اور 2017 میں یہ 2 کروڑ 54 لاکھ روپے رہی۔
    ان کی 154 کینال کی زمین سے زرعی آمدنی 2015 میں 20 لاکھ سے معمولی حد تک زیادہ رہی تھی تاہم 2017 میں ان کی زمین میں کمی کے باوجود ان کی زرعی آمدنی میں واضح تبدیلی سامنے آئی جسے 35 لاکھ روپے کے قریب بتایا گیا۔
    سابق صدر آصف علی زرداری کی زرعی آمدن جو ان کی کل آمدن کا زیادہ تر حصہ ہے، 2015 میں 10 کروڑ 50 لاکھ سے بڑھتے ہوئے 2016 میں 11 کروڑ 40 لاکھ اور ٢٠١٧ میں 13 کروڑ 40 لاکھ روپے تک پہنچ گئی۔
    ان کے پاس 7 ہزار 748 ایکڑ زمین ہے جن میں سے 349 ایکڑ ان کی ذاتی ملکیت میں ہیں اور دیگر 7 ہزار 399 ایکڑ لیز شدہ زمین ہے۔
    ان کے دیگر ذرائع سے آمدنی 2015 میں 76 لاکھ 60 ہزار رہی تھی جو 2016 میں 82 لاکھ 40 ہزار ہوئی اور عام انتخابات سے قبل سال میں وہ 97 لاکھ 50 ہزار رہی۔
    ان کے صاحبزادے بلاول بھٹو زرداری پاکستان اور دیگر ممالک میں اثاثوں کے اعتبار سے ان سے امیر نظر آئے تاہم وہ آمدن میں ان سے کم رہے۔
    بلاول زرداری کی 2015 میں کل آمدن 2 کروڑ 30 لاکھ رہی جس میں 34 لاکھ روپے کرائے کی مد میں آمدن تھی اور 2 کروڑ سے زائد انہوں نے زراعت کی مد میں کمائے تھے۔
    ان کی کُل آمدن میں ایک سال میں 100 فیصد اضافہ سامنے آیا جو 2 کروڑ 30 لاکھ سے بڑھ کر 2016 میں 4 کروڑ 73 لاکھ ہوگئی۔
    ریکارڈ کے مطابق ان کی آمدن میں اضافہ زراعت اور کرائے کی مد میں آمدن کے علاوہ 1 کروڑ 66 لاکھ روپے کے غیر ملکی آمدن سے ہوا۔
    ٢٠١٦ میں ان کی زرعی آمدن 2 کروڑ سے بڑھ کر 2 کروڑ 66 لاکھ ہوئی کرائے کی مد میں آمدن 34 لاکھ 50 ہزار سے بڑھ کر 41 لاکھ 40 ہزار ہوئی۔
    ان کی غیر ملکی آمدن میں کمی سامنے آئی جو 2016 میں ایک کروڑ 66 لاکھ سے کم ہوکر 2017 میں ایک کروڑ 63 لاکھ ہوئی جبکہ زرعی آمدن بغیر کسی تبدیلی کے 2 کروڑ 66 لاکھ رہی۔
    ان کی کرائے کی مد میں سالانہ آمدنی میں 2017 میں انتہائی معمولی سی کمی واقع ہوئی جبکہ 2017 میں ان کی آمدنی کا ایک اور ذریعہ بھی بڑھا اور انہوں نے بینک منافع کے ذریعے ایک لاکھ 73 ہزار روپے کمائے۔

    https://www.dawnnews.tv/news/1099206/

Viewing 1 post (of 1 total)

You must be logged in to reply to this topic.

Navigation