Thread: ٣٠ ستمبر ١٩٨٨- حیدرآباد قتل عام

Home Forums Hyde Park / گوشہ لفنگاں ٣٠ ستمبر ١٩٨٨- حیدرآباد قتل عام

This topic contains 6 replies, has 4 voices, and was last updated by  Ghost Protocol 1 year, 6 months ago. This post has been viewed 430 times

Viewing 7 posts - 1 through 7 (of 7 total)
  • Author
    Posts
  • #1
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 142
    • Posts: 4533
    • Total Posts: 4675
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: ٣٠ ستمبر ١٩٨٨- حیدرآباد قتل عام

    #2
    JMP
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 241
    • Posts: 4272
    • Total Posts: 4513
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: ٣٠ ستمبر ١٩٨٨- حیدرآباد قتل عام

    Ghost Protocol sahib

    محترم عزیز پروٹوکول صاحب

    کیا یاد دلا دیا مگر کیوں یاد دلایا

    نہ پشیمانی ہوئی ، نہ آنکھ نم ہوئی . نہ دل بھر آیا ، نہ لب کپکپاۓ . نہ کوئی صدا بلند ہوئی ، نہ کوئی آہ نکلی ، نہ کوئی ملامت ہوئی

    #3
    JMP
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 241
    • Posts: 4272
    • Total Posts: 4513
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: ٣٠ ستمبر ١٩٨٨- حیدرآباد قتل عام

    اکستان کی آزادی کے وقت انسانیت کا قتل ہو، سقوط پاکستان کی قتل اور غارت ہو ، سندھی کو سندھ کی سرکاری زبان بنانے پر فسادات ہوں، قصبہ قالونی کا سانحہ ہو، پکا قلعہ کا گھناؤنا جرم ہو، ، گجرات (بھارت) میں مسلمانوں کا خون ہو ،داتا دربار پر عقیدمندوں پر حملہ ہو ، عیسایئوں کے مذہبی مقام پر درجنوں کا قتل ہو، احمدیوں کی عبادتگاہ کی خونریزی، پشاور میں معصوم بچوں کا خوں ہو، بلوچستان میں رہنے والے پاکستانیوں کا خوں ہو یہ چند مثالیں ہیں. اس خطے کی پچھلی ستر سالہ تاریخ کو دیکھ لیں سانس لینے والوں نہ سانس لینے والوں کا مذہب کے نام پر، آزادی کے نام پر، حقوق کا نام پر، زبان کے نام پر، محب وطنی اور غداری کی سندوں کے نام پر، کبھی گاۓ کتنے کے نام پر اور ہر اس نام پر قتل کیا جو انسان کا سرنگوں کرنے کے لئے کافی ہے

    یا شاید نہیں کے سر ابھی بھی بلند ہیں، سینے ابھی بھی چوڑے ہیں، نفرتیں اتنی ہی گھناؤنی ہیں، ضمیر اور اصول اتنے ہی مردہ ہیں

    #4
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 142
    • Posts: 4533
    • Total Posts: 4675
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: ٣٠ ستمبر ١٩٨٨- حیدرآباد قتل عام

    Ghost Protocol sahib محترم عزیز پروٹوکول صاحب کیا یاد دلا دیا مگر کیوں یاد دلایا نہ پشیمانی ہوئی ، نہ آنکھ نم ہوئی . نہ دل بھر آیا ، نہ لب کپکپاۓ . نہ کوئی صدا بلند ہوئی ، نہ کوئی آہ نکلی ، نہ کوئی ملامت ہوئی

    جے بھیا،
    آنکھ کیوں پرنم ہوتی
    لب کیوں کپکپاتے
    ،دل کیوں بھر آتے
    آہ کیوں نکلتی
    ملامت کیوں ہوتی
    جن کے آبا نے اپنی ہزاروں سال کی ثقافت کو خیر باد کہ دیا
    اپنے پر کھوں کی قبروں کا سودا کرلیا
    مذہبی جنونیت کے زیر اثر
    انسانوں میں تفریق کی بنیاد ڈلوادی
    اپنی نسلوں کو متوقع غلامی سے نجات دلانے کے واسطے
    ان سے بڑے شیطانوں کے حوالے کردیا
    ان کو سزا تو ملنی تھی
    گردنیں تو کٹنی تھیں
    آبا کا خراج تو دینا تھا
    سو دیا اور دے رہے ہیں
    طعنے سن رہے ہیں
    مگر اپنی آواز پھر بھی بلند کررہے ہیں

    #5
    Democrat
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 47
    • Posts: 1312
    • Total Posts: 1359
    • Join Date:
      17 Oct, 2016

    Re: ٣٠ ستمبر ١٩٨٨- حیدرآباد قتل عام

    جے بھیا، آنکھ کیوں پرنم ہوتی لب کیوں کپکپاتے ،دل کیوں بھر آتے آہ کیوں نکلتی ملامت کیوں ہوتی جن کے آبا نے اپنی ہزاروں سال کی ثقافت کو خیر باد کہ دیا اپنے پر کھوں کی قبروں کا سودا کرلیا مذہبی جنونیت کے زیر اثر انسانوں میں تفریق کی بنیاد ڈلوادی اپنی نسلوں کو متوقع غلامی سے نجات دلانے کے واسطے ان سے بڑے شیطانوں کے حوالے کردیا ان کو سزا تو ملنی تھی گردنیں تو کٹنی تھیں آبا کا خراج تو دینا تھا سو دیا اور دے رہے ہیں طعنے سن رہے ہیں مگر اپنی آواز پھر بھی بلند کررہے ہیں

    تو کیوں کیا یہ سب کچھ؟

    کیا خبر نہیں تھی کہ یہ ملک استعماریت اور کلونزم کے مقاصد کی تکمیل کرنے کو وجود میں آیا ھے

    ھم سب بھگت رھے ھیں اور اس وقت تک بھگتیں گے جب تک ھمارے اندر اجتماعیت نہیں آتی یا ان کلونزم کے نمائندگان کو اپنے حاکم بلا چوں چراں تسلیم نہیں کر لیتے

    #6
    لُڈن نیپالی
    Participant
    Offline
    • Member
    • Threads: 4
    • Posts: 76
    • Total Posts: 80
    • Join Date:
      27 Sep, 2018

    Re: ٣٠ ستمبر ١٩٨٨- حیدرآباد قتل عام

    اب اپنے ان سادہ لوح بزرگوں پر لعنت کو جی چاہتا ہے جو جھانسے میں آکر یہاں آگئے اور انگریزوں کے خدمتگار آج ہمیں پالنے کا دعوی کرتے ہیں۔

    ضیا ہو، نواز گنجم یا پھر عمران خان، مہاجروں کے حق میں سب ہی قبلائی خان ہیں۔

    #7
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 142
    • Posts: 4533
    • Total Posts: 4675
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: ٣٠ ستمبر ١٩٨٨- حیدرآباد قتل عام

    تو کیوں کیا یہ سب کچھ؟ کیا خبر نہیں تھی کہ یہ ملک استعماریت اور کلونزم کے مقاصد کی تکمیل کرنے کو وجود میں آیا ھے ھم سب بھگت رھے ھیں اور اس وقت تک بھگتیں گے جب تک ھمارے اندر اجتماعیت نہیں آتی یا ان کلونزم کے نمائندگان کو اپنے حاکم بلا چوں چراں تسلیم نہیں کر لیتے

    بیشک ذہنوں میں خناس تھا
    مذہبی برتری کا خمار تھا
    ذہنوں میں خیالی ریاست کے جھوٹے خدوخال تھے
    آپ کی بات درست ہے سب بھگت رہے ہیں
    پنجاب سندھ بنگال افغان سب تقسیم ہوے
    کچھ مگر زیادہ اورکچھ بہت زیادہ بھگت رہے ہیں
    مگر سب سے زیادہ ڈھائی تین ارب افراد کو بقا کا مسلہ درپیش ہوگیا ہے

Viewing 7 posts - 1 through 7 (of 7 total)

You must be logged in to reply to this topic.

Navigation

Do NOT follow this link or you will be banned from the site!