Thread: مَیں

This topic contains 241 replies, has 24 voices, and was last updated by  Ghost Protocol 1 month, 3 weeks ago. This post has been viewed 6376 times

Viewing 20 posts - 141 through 160 (of 242 total)
  • Author
    Posts
  • #141
    Zinda Rood
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 13
    • Posts: 1649
    • Total Posts: 1662
    • Join Date:
      3 Apr, 2018
    • Location: NorthPole

    Re: مَیں

    زندہ رود صاحب، اس قسم کی زیادہ تر تحقیقات دفاعی اور جارحانہ مقاصد کے لئے ہوتی ہے بعد میں ان تحقیقات سے مالی فوائد کے لئے انکو عوام کے لئے پیش کردیا جاتا ہے ان بہت زیادہ ٹیکس سے حاصل شدہ رقوم سے حکومتوں نے انسانیت کو تباہ کرنے کے اتنے سامان پیدا کرلئے ہیں کہ بقا کے لالے پڑ چکے ہیں خلا میں تحقیقات کے لئے آپ کو امرا کی حمایت کی ضرورت نہیں بلکہ بزنس کیس کی ضرورت ہے بزنس کیس ہو تو سرمایہ خود بخود اسکا رخ کرلیتا ہے

    گھوسٹ صاحب۔۔ میرا خیال ہے سبھی پراجیکٹس دفاعی یا جارحانہ مقاصد کیلئے نہیں ہوتے، کچھ عرصہ پہلے کیسینی مشن کے ذریعے آئین سٹائن کی گریویٹی کے روشنی پر اثر انداز ہونے والی تھیوری کا عملی طور پر درست ثابت ہونے کا تجربہ کیا گیا، ابھی حال ہی میں خلا میں آٹھ ٹیلی سکوپس کے ذریعے بلیک ہول کے ایونٹ ہورائزن کی تصویر لی گئی، اس کے علاوہ دیگر سیاروں پر زندگی کی تلاش یا پھر ان کے ماحول کا معائنہ وغیرہ، اوربھی بے شمار مثالیں دی جاسکتی ہیں۔ یہ سب پوری بنی نوع انسان کے فائدے کے کام ہیں۔  

    #142
    bluesheep
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 13
    • Posts: 268
    • Total Posts: 281
    • Join Date:
      7 Dec, 2018
    • Location: Pindi HQ

    Re: مَیں

    بلیک شیپ صاحب۔۔۔ آپ میری ذات اور نفسیات پر کھل کر لکھ سکتے ہیں، میری طرف سے کوئی قدغن نہیں۔۔۔۔

    رضیہ سلطانہ کا ناول چھپنے والا ہے

    #143
    BlackSheep
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 15
    • Posts: 1972
    • Total Posts: 1987
    • Join Date:
      11 Feb, 2017
    • Location: عالمِ غیب

    Re: مَیں

    بلیک شیپ صاحب۔۔۔ آپ میری ذات اور نفسیات پر کھل کر لکھ سکتے ہیں، میری طرف سے کوئی قدغن نہیں۔۔۔۔

    زندہ رُود۔۔۔۔۔

    نوٹ:  مَیں یہ تحریر یہاں صرف اِس لئے لکھ رہا ہوں کہ آپ نے بارہا یہ لکھا ہے کہ آپ کو پولیٹیکل کریکٹ نیس پسند نہیں ہے اور آپ کھل کر بات کرنا پسند کرتے ہیں۔۔۔۔۔ ورنہ یہ آپ کو پرسنل میسج میں بھی لکھ سکتا تھا۔۔۔۔۔ خیر آپ نے اجازت دی ہے تو شکریہ بنتا ہے۔۔۔۔۔

    انسانوں کو پڑھنا، اُن کی عادات کو سمجھنا، اُن عادات کے پیچھے چھپی انتہائی گہری وجوہات کو سمجھنا میرا شوق ہے۔۔۔۔۔

    کچھ عرصہ پہلے مَیں نے گھوسٹ صاحب کی نفسیات کے بارے میں ایک تجزیہ دیا تھا۔۔۔۔۔ گھوسٹ صاحب کا شکریہ کہ اُنہوں نے اُس تجزیہ کا ایک ایک لفظ دُرست ثابت کر کے دکھایا۔۔۔۔۔

    جہاں تک آپ کی بات ہے تو میرے خیال میں اِس بحث میں آپ کا معاملہ دوسروں سے الگ ہے۔۔۔۔۔ کچھ عرصہ پہلے گھوسٹ صاحب کے ساتھ بات کرتے مَیں نے نظریاتی نازک حصوں پر بات کی تھی۔۔۔۔۔ کہ انسانوں کی شخصیات کے کچھ پہلو ایسے ہوتے ہیں جن پر بات آتے ہی وہ اچھا بھلا منطقی انسان ایک دم بیک فُٹ پر چلا جاتا ہے اور غیر منطقی جذباتی سی گفتگو شروع کردیتا ہے۔۔۔۔۔ مَیں یہ تو بالکل نہیں کہوں گا کہ آپ کے ساتھ گھوسٹ صاحب جیسا ہی شدید مسئلہ ہے بلکہ یہ کہوں گا کہ آپ کے خیالات کی خصوصاً ایک لَٹ ذرا اُلجھی ہوئی ہے جو آپ کے دیگر خیالات کے ساتھ اسٹریم لائن نہیں ہے۔۔۔۔۔

    آپ کے اندر ایک بہت ہی شدید خواہش ہے کہ دُنیا میں ہر شخص کو ہر لحاظ سے برابر ہونا چاہئے۔۔۔۔۔ اور زندگی کے بارے میں آپ کا عمومی رویہ پَیسیمِسٹک ہے۔۔۔۔۔ اگر کوئی شخص معذور پیدا ہوتا ہے، نابینا پیدا ہوتا ہے تو آپ کے خیال میں یہ اُس شخص کے ساتھ شدید ناانصافی ہوئی ہے اور آپ کا ایسی ناانصافیوں پر دِل بہت کڑھتا ہے اور آپ اِن کو دُرست کرنا چاہتے ہیں۔۔۔۔۔

    لیکن مسئلہ یہ ہے کہ اللہ پر ایمان رکھنا آپ نے بند کردیا ہے اور اِن ناانصافیوں کا کوئی مجرم بظاہر آپ کے سامنے ہے نہیں۔۔۔۔۔ اور آپ کو یہ بھی علم نہیں کہ کون یہ ناانصافیاں کررہا ہے۔۔۔۔۔ اور مجھے لگتا ہے کہ آپ اِس معاملے میں فرسٹریٹڈ ہیں۔۔۔۔۔ اور ہر ایک کو ہر لحاظ سے برابر کرنا آپ کے بس میں نہیں ہے۔۔۔۔۔ مجھے لگتا ہے کہ خیالات کی یہ مخصوص طرز(لَٹ) آپ کے دیگر خیالات پر اثرانداز ہوتی رہے گی کیونکہ یہ طرز بہت ہی زیادہ راسخ ہے۔۔۔۔۔

    میرا تجزیہ ہے کہ اِن ناانصافیوں کو دُرست کرنے کے چکر میں آپ شاید سوشلزم مارکسزم کی اچھی طرح خاک چھانیں گے کیونکہ مارکسزم سوشلزم آپ کو زبانی کلامی ایک بڑا ہی خوبصورت سا لیکن خیالی یوٹوپیا فراہم کرتے ہیں۔۔۔۔۔ لیکن ملے گا آپ کو وہاں بھی کچھ نہیں۔۔۔۔۔ خدشہ مجھے یہ ہے کہ جب آپ کی مُراد وہاں بھی پوری نہیں ہوگی تو آپ کیا کریں گے۔۔۔۔۔

    عموماً ہر شخص کو ایک اندرونی سکون چاہئے ہوتا ہے۔۔۔۔۔ وہ چاہتا ہے کہ وہ مطمئن ہوجائے۔۔۔۔۔ لیکن اکثر اوقات ہوتا یہ ہے کہ انسان اپنے آپ کو مطمئن کرنے کیلئے جو کچھ کرتا ہے وہ اُس کو مطمئن کرنے کے اُلٹا مزید بے چین کرتا ہے۔۔۔۔۔ سوال میرا آپ کے سوچنے کیلئے یہ ہے کہ کیا آپ اپنے آپ کو مطمئن کرنے کیلئے ایسا مقصد تو نہیں چُن لیں گے جس کو آپ کسی صورت پورا کر ہی نہ سکتے ہوں۔۔۔۔۔

    #144
    shahidabassi
    Participant
    Offline
    • Expert
    • Threads: 31
    • Posts: 6883
    • Total Posts: 6914
    • Join Date:
      5 Apr, 2017

    Re: مَیں

    شاہد عباسی صاحب ….مجھے آپ کی بات سے اتفاق نہیں ہے کہ امیر حضرات انفراسٹرکچر سے زیادہ فوائد حاصل کرتے ہیں …شوباز شریف نے میٹرو بس اور اورنج ٹرین پر بلینز لگا دیے ہیں مگر یہ پروجیکٹ عام پبلک ہی استعمال کرتی ہے ….اسی طرح موٹر وے پر وڈے شریف نے اربوں ڈالر لگائے …لیکن لاہور سے اسلام آباد جانا ہو تو امراء سڑک سے نہیں بلکہ جہاز سے جاتے ہیں …اگر آپ کا موقف یہ ہے کہ کارخانوں کے لیے سامان اور مال برداری کے لیے سڑکیں استمال ہوتی ہیں تو ان مصنوعات کا فائدہ کس کو ہوتا ہے؟ دوسری بات یہ کہ موٹر وے ..تربیلا دائم بھاشا ڈیم …اور انفرا اسٹرکچر کے بڑے بڑے پروجیکٹ …ان سب کو ماسٹر غلام حسین یا شیدے ترکھان کے پیسوں سے بنانا تو ناممکن ہے ….یہ پروجیکٹ تو بنتے ہی امیروں کے پیسے سے ہیں …اگر انہوں نے انفراسٹرکچر کو اپنے فائدے کے لیے استعمال کربھی لیا تو کیا مضائقہ ہے …ورنہ پاکستان کی عام پبلک تو انکم ٹیکس کی مد میں کوئی خاص رقم ادا نہیںں کرتی ..سب ہی مفتا لگا رہے ہیں …سب کی خواہش ہے کہ سڑکیں بنیں …ہسپتال بنیں …نوکری ملے ..ورنہ بیروزگاری الاؤنس ملے …فوج کا منہ بھرا جاۓ …لیکن آپ نے غور کیا ہے کہ گورنمنٹ نامی ادارے کا خزانہ کون بھرتا ہے؟

    قرار صاحب ۔ اب بات کو آپ پاکستان لے آئے ہیں تو کچھ تصیح اور کچھ مزاحکہ خیز فیکٹس۔ پاکستان میں امیر کوئی ٹیکس نہی دیتے۔ ۸۰ فیصد ٹیکس مڈل کلاس سے لیا جاتا ہے۔ پاکستان کل ملا کر ۴۰۰۰ ارب ریوینیو اکٹھا کرتا ہے۔ جس میں سے انکم ٹیکس ۱۳۵۰ ارب کے قریب ہے۔ ان ۱۳۵۰ ارب میں سے ۴۷۵ ارب تنخواہوں میں سے ایٹ دا سورس کاٹا گیا ٹیکس ہے۔ ۶۳۵ ارب کارپوریٹ ٹیکس ہے ۔ ان کارپوریٹ بزنس کے بھی ۶۰ فیصد شیئرز مڈل کلاس کے پاس ہیں۔ امیر لوگ بڑی مشکل سے ۲۵۰ ارب انکم ٹیکس دیتے ہیں لیکن ساتھ ہی ۲۵۰۰ ارب کی کرپشن بھی کرتے ہیں۔امیروں کی پراپرٹی کی ویلیوایشن بھی صحیح قیمت کے بیسویں حصے پر درج ہے اس طرح وہ پراپرٹی ٹیکس بھی نہی دیتے، نہ ہی جاگیردار زرعی آمدن پر ٹیکس دیتے ہیں۔
    سب سے زیادہ ٹیکس سیلز ٹیکس کی صورت میں اکٹھا کیا جاتا ہے اور اس میں مڈل کلاس کا حصہ ۸۵ فیصد تک ہے۔
    ۔
    آپ نے میٹرو کی بات کی جس سے کہ لاکھوں لوگ فائدہ اٹھاتے ہیں لیکن یہ بھول گئے کہ جتنی رقم سے میٹرو بنی تقریباً اتنی ہی رقم گورنمنٹ نے شوگر سبسڈی میں دے دی جس سے کہ صرف پندرہ امیر لوگوں نے فائدہ اٹھایا۔ ۲۰۱۸ میں شوگر پر ۱۰۵ ملین ڈالر سبسڈی دی گئی۔ ویسے بندہ سوال بھی نہی پوچھ سکتا کہ سینکڑوں ایکسپورٹ ایبل اجناس اور اشیاء میں سے ایک صرف شوگر ہی پر سبسڈی کیوں دی جاتی ہے۔
    موٹر وے بنانے والوں سے پوچھ کر بتائیں کہ اس کی ضرورت کیوں پیش آئی۔ اور کون کہتا ہے یہ کسی امیر کے پیسے سے بنے ہیں۔ ساری ادھار پر بنی موٹر وے کی عام عوام دھری قیمت ادا کر رہی ہے۔ ایک جب اس پر سفر کرے اور دوسرا جب قرضے ادا کرے۔
    قرار صاحب آپ نے اپنی دلیل کے لئے شاید غلط ملک کی مثال دے دی ہے۔ یہاں تو کوئی امیر ٹیکس نہی دیتا بلکہ غریب کا پیسہ لوٹ کر ہی امیر بنتا ہے۔

    #145
    Shirazi
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 158
    • Posts: 2101
    • Total Posts: 2259
    • Join Date:
      6 Jan, 2017

    Re: مَیں

    Qarar Sahib & BlackSheep Sahib

    Alexandria Cortez is good but I agree she is at other extreme, 90% is stretch and perhaps counter productive. I am socialist.  I believe socialism is in the middle of two extremes communism and capitalism. We have moved beyond the original idea of govt – defense. Universal public schooling, social security, universal health care, public housing etc. All are socialist ideas in capitalist economies of USA and Western Europe. This is redistribution of wealth taking from rich and giving it to poor.

    Is that charity or compulsion to maintain a certain level of harmony? Perhaps they learned lessons from Mao’s red revolution and Germany anti Jewish campaign.

    Mat the same time I understand when govt spends its lot of red tape and wastage of money, applies to defense as well. But when they are spending tax payers money ruthlessly they can be extravagant on adventures like moon and Mars. No businessman can explore the frontiers like that with so much investment and so dicy returns. When these public fundings open frontiers like internet BlackSheep Sahib completely overlook and give total credit to Gates, Bezos, Jobs.

    #146
    Qarar
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 95
    • Posts: 2227
    • Total Posts: 2322
    • Join Date:
      5 Jan, 2017

    Re: مَیں

    قرار صاحب ۔ اب بات کو آپ پاکستان لے آئے ہیں تو کچھ تصیح اور کچھ مزاحکہ خیز فیکٹس۔ پاکستان میں امیر کوئی ٹیکس نہی دیتے۔ ۸۰ فیصد ٹیکس مڈل کلاس سے لیا جاتا ہے۔ پاکستان کل ملا کر ۴۰۰۰ ارب ریوینیو اکٹھا کرتا ہے۔ جس میں سے انکم ٹیکس ۱۳۵۰ ارب کے قریب ہے۔ ان ۱۳۵۰ ارب میں سے ۴۷۵ ارب تنخواہوں میں سے ایٹ دا سورس کاٹا گیا ٹیکس ہے۔ ۶۳۵ ارب کارپوریٹ ٹیکس ہے ۔ ان کارپوریٹ بزنس کے بھی ۶۰ فیصد شیئرز مڈل کلاس کے پاس ہیں۔ امیر لوگ بڑی مشکل سے ۲۵۰ ارب انکم ٹیکس دیتے ہیں لیکن ساتھ ہی ۲۵۰۰ ارب کی کرپشن بھی کرتے ہیں۔امیروں کی پراپرٹی کی ویلیوایشن بھی صحیح قیمت کے بیسویں حصے پر درج ہے اس طرح وہ پراپرٹی ٹیکس بھی نہی دیتے، نہ ہی جاگیردار زرعی آمدن پر ٹیکس دیتے ہیں۔ سب سے زیادہ ٹیکس سیلز ٹیکس کی صورت میں اکٹھا کیا جاتا ہے اور اس میں مڈل کلاس کا حصہ ۸۵ فیصد تک ہے۔ ۔ آپ نے میٹرو کی بات کی جس سے کہ لاکھوں لوگ فائدہ اٹھاتے ہیں لیکن یہ بھول گئے کہ جتنی رقم سے میٹرو بنی تقریباً اتنی ہی رقم گورنمنٹ نے شوگر سبسڈی میں دے دی جس سے کہ صرف پندرہ امیر لوگوں نے فائدہ اٹھایا۔ ۲۰۱۸ میں شوگر پر ۱۰۵ ملین ڈالر سبسڈی دی گئی۔ ویسے بندہ سوال بھی نہی پوچھ سکتا کہ سینکڑوں ایکسپورٹ ایبل اجناس اور اشیاء میں سے ایک صرف شوگر ہی پر سبسڈی کیوں دی جاتی ہے۔ موٹر وے بنانے والوں سے پوچھ کر بتائیں کہ اس کی ضرورت کیوں پیش آئی۔ اور کون کہتا ہے یہ کسی امیر کے پیسے سے بنے ہیں۔ ساری ادھار پر بنی موٹر وے کی عام عوام دھری قیمت ادا کر رہی ہے۔ ایک جب اس پر سفر کرے اور دوسرا جب قرضے ادا کرے۔ قرار صاحب آپ نے اپنی دلیل کے لئے شاید غلط ملک کی مثال دے دی ہے۔ یہاں تو کوئی امیر ٹیکس نہی دیتا بلکہ غریب کا پیسہ لوٹ کر ہی امیر بنتا ہے۔

    شاہد عباسی صاحب
    اعداد و شمار کے بارے میں یہی کہا جاتا ہے کہ

    80% of all statistics quoted to prove a point are made up on the spot.

    آپ شاید نادانستگی میں میرا پوائنٹ خود ہی ثابت  ہیں ….پاکستان کی مثال بلکل صحیح ہے ….کیونکہ اس تھریڈ میں حالیہ بحث کا مرکز پروگریسو ٹیکسیشن ہے ….پاکستان میں امریکا کی طرح بڑی تعداد میں ارب پتی نہیں ہیں …لیکن  انکم ٹیکس انہی لوگوں سے جمع کیا جارہا ہے جوکہ ایک حد سے زیادہ پیسے بناتے ہیں …اس  کا  آپ امریکا کی ماہانہ انکم سے موازنہ نہ کریں ..آپ کو اعداد و شمار دینے کا شوق ہے …میرے دو سوالوں کا جواب اعداد و شمار کی روشنی میں دے دیں
    ایک …پاکستان میں کتنی ماہانہ انکم پر ٹیکس واجب الادا ہے اور  کتنے فیصد لوگ انکم ٹیکس دیتے ہیں؟
    دو ..پاکستان کی “مڈل کلاس” کلاس جوکہ آپ کی نظر میں پاکستان کا سارا بوجھ اٹھائے ھوئے ہے ..وہ پاکستان کی اڈلٹ پاپولیشن کا کتنا فیصد ہے؟ اور اس مڈل کلاس کی ماہانہ آمدنی کیا ہے؟

    میرا نکتہ یہ ہے کہ پیسے بنانے والوں سے پیسا اکٹھا کرکے ان لوگوں کو تقسیم کیا جارہا ہے جوکہ صفر بھی ٹیکس نہیں دیتے

    پس تحریر
    مجھے ذاتی طور کوئی مسئلہ نہیں ہے اگر میری آمدنی سے دوسروں کی نسبت زیادہ ٹیکس کٹ رہا ہے …آخر میرے سینے میں بھی دل ہے ..اگر ٹیکس کی رقم سے کسی غریب کا علاج  ہوجاۓ  …کسی یتیم کو سکالرشپ مل جاۓ …یا پبلک ٹرانسپورٹیشن کا کوئی منصوبہ بن جاۓ میری طرف سے خیر ہے …لیکن جیسا کہ بلیک شیپ صاحب نے کہا ہے کہ  لیے یا دوسرے فوائد حاصل کرنے کے لئے یہ بیانیہ سامنے لیا جاتا ہے کہ امیر لوگ ولن ہیں اور سب کے سب دھوکہ دہی سے اور غریبوں کا استحصال کرکے امیر  بنے ہیں

    Read this on who contributes to tax collection. It’s an old article but a good read.

    https://www.dawn.com/news/1198899

    #147
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 123
    • Posts: 3710
    • Total Posts: 3833
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: مَیں

    گھوسٹ صاحب۔۔ میرا خیال ہے سبھی پراجیکٹس دفاعی یا جارحانہ مقاصد کیلئے نہیں ہوتے، کچھ عرصہ پہلے کیسینی مشن کے ذریعے آئین سٹائن کی گریویٹی کے روشنی پر اثر انداز ہونے والی تھیوری کا عملی طور پر درست ثابت ہونے کا تجربہ کیا گیا، ابھی حال ہی میں خلا میں آٹھ ٹیلی سکوپس کے ذریعے بلیک ہول کے ایونٹ ہورائزن کی تصویر لی گئی، اس کے علاوہ دیگر سیاروں پر زندگی کی تلاش یا پھر ان کے ماحول کا معائنہ وغیرہ، اوربھی بے شمار مثالیں دی جاسکتی ہیں۔ یہ سب پوری بنی نوع انسان کے فائدے کے کام ہیں۔

    زندہ رود صاحب،
    آپ کی بات درست ہے میں نے بھی تمام پراجیکٹس کا نہیں کہا مگر زیادہ تر پراجیکٹس کی نوعیت دفاعی ہی ہوتی ہے مگر اس قسم کی عیاشی کے لئے بھی ایک خاص حد تک خوشحالی کی ضرورت ہے اب اگر اپنے خان صاحب اعلان کردیں کہ بنی نوع انسان کی خدمت کے لئے ہم اگلے پانچ برسوں میں خلائی تحقیق پر پندرہ ارب ڈالر خرچ کریں گے تو میرے سے پہلے آپ جوتی اتاریں گے

    :bigsmile: :bigsmile: :bigsmile:

    #148
    bluesheep
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 13
    • Posts: 268
    • Total Posts: 281
    • Join Date:
      7 Dec, 2018
    • Location: Pindi HQ

    Re: مَیں

    زندہ رُود۔۔۔۔۔ نوٹ: مَیں یہ تحریر یہاں صرف اِس لئے لکھ رہا ہوں کہ آپ نے بارہا یہ لکھا ہے کہ آپ کو پولیٹیکل کریکٹ نیس پسند نہیں ہے اور آپ کھل کر بات کرنا پسند کرتے ہیں۔۔۔۔۔ ورنہ یہ آپ کو پرسنل میسج میں بھی لکھ سکتا تھا۔۔۔۔۔ خیر آپ نے اجازت دی ہے تو شکریہ بنتا ہے۔۔۔۔۔ انسانوں کو پڑھنا، اُن کی عادات کو سمجھنا، اُن عادات کے پیچھے چھپی انتہائی گہری وجوہات کو سمجھنا میرا شوق ہے۔۔۔۔۔ کچھ عرصہ پہلے مَیں نے گھوسٹ صاحب کی نفسیات کے بارے میں ایک تجزیہ دیا تھا۔۔۔۔۔ گھوسٹ صاحب کا شکریہ کہ اُنہوں نے اُس تجزیہ کا ایک ایک لفظ دُرست ثابت کر کے دکھایا۔۔۔۔۔ جہاں تک آپ کی بات ہے تو میرے خیال میں اِس بحث میں آپ کا معاملہ دوسروں سے الگ ہے۔۔۔۔۔ کچھ عرصہ پہلے گھوسٹ صاحب کے ساتھ بات کرتے مَیں نے نظریاتی نازک حصوں پر بات کی تھی۔۔۔۔۔ کہ انسانوں کی شخصیات کے کچھ پہلو ایسے ہوتے ہیں جن پر بات آتے ہی وہ اچھا بھلا منطقی انسان ایک دم بیک فُٹ پر چلا جاتا ہے اور غیر منطقی جذباتی سی گفتگو شروع کردیتا ہے۔۔۔۔۔ مَیں یہ تو بالکل نہیں کہوں گا کہ آپ کے ساتھ گھوسٹ صاحب جیسا ہی شدید مسئلہ ہے بلکہ یہ کہوں گا کہ آپ کے خیالات کی خصوصاً ایک لَٹ ذرا اُلجھی ہوئی ہے جو آپ کے دیگر خیالات کے ساتھ اسٹریم لائن نہیں ہے۔۔۔۔۔ آپ کے اندر ایک بہت ہی شدید خواہش ہے کہ دُنیا میں ہر شخص کو ہر لحاظ سے برابر ہونا چاہئے۔۔۔۔۔ اور زندگی کے بارے میں آپ کا عمومی رویہ پَیسیمِسٹک ہے۔۔۔۔۔ اگر کوئی شخص معذور پیدا ہوتا ہے، نابینا پیدا ہوتا ہے تو آپ کے خیال میں یہ اُس شخص کے ساتھ شدید ناانصافی ہوئی ہے اور آپ کا ایسی ناانصافیوں پر دِل بہت کڑھتا ہے اور آپ اِن کو دُرست کرنا چاہتے ہیں۔۔۔۔۔ لیکن مسئلہ یہ ہے کہ اللہ پر ایمان رکھنا آپ نے بند کردیا ہے اور اِن ناانصافیوں کا کوئی مجرم بظاہر آپ کے سامنے ہے نہیں۔۔۔۔۔ اور آپ کو یہ بھی علم نہیں کہ کون یہ ناانصافیاں کررہا ہے۔۔۔۔۔ اور مجھے لگتا ہے کہ آپ اِس معاملے میں فرسٹریٹڈ ہیں۔۔۔۔۔ اور ہر ایک کو ہر لحاظ سے برابر کرنا آپ کے بس میں نہیں ہے۔۔۔۔۔ مجھے لگتا ہے کہ خیالات کی یہ مخصوص طرز(لَٹ) آپ کے دیگر خیالات پر اثرانداز ہوتی رہے گی کیونکہ یہ طرز بہت ہی زیادہ راسخ ہے۔۔۔۔۔ میرا تجزیہ ہے کہ اِن ناانصافیوں کو دُرست کرنے کے چکر میں آپ شاید سوشلزم مارکسزم کی اچھی طرح خاک چھانیں گے کیونکہ مارکسزم سوشلزم آپ کو زبانی کلامی ایک بڑا ہی خوبصورت سا لیکن خیالی یوٹوپیا فراہم کرتے ہیں۔۔۔۔۔ لیکن ملے گا آپ کو وہاں بھی کچھ نہیں۔۔۔۔۔ خدشہ مجھے یہ ہے کہ جب آپ کی مُراد وہاں بھی پوری نہیں ہوگی تو آپ کیا کریں گے۔۔۔۔۔ عموماً ہر شخص کو ایک اندرونی سکون چاہئے ہوتا ہے۔۔۔۔۔ وہ چاہتا ہے کہ وہ مطمئن ہوجائے۔۔۔۔۔ لیکن اکثر اوقات ہوتا یہ ہے کہ انسان اپنے آپ کو مطمئن کرنے کیلئے جو کچھ کرتا ہے وہ اُس کو مطمئن کرنے کے اُلٹا مزید بے چین کرتا ہے۔۔۔۔۔ سوال میرا آپ کے سوچنے کیلئے یہ ہے کہ کیا آپ اپنے آپ کو مطمئن کرنے کیلئے ایسا مقصد تو نہیں چُن لیں گے جس کو آپ کسی صورت پورا کر ہی نہ سکتے ہوں۔۔۔۔۔

    کالے دنبہ صاحب

    میں کچھ کچھ توقع کر رہا تھا کے آپ زندہ رود کا کالا چٹھا کھول کا سب سیاہ اور سفید کا فرق صاف کردیں گے مگر ندارد ہے چمن میں کوے جو کائیں کرنے کو تھے. خیر آپ کی تحریر پڑھ کر جو فیلنگز ہورہی تھیں وہ اس ویڈیو کو دیکھ کر ہوتی ہونگی، زبان تو سمجھ آتی ہے مگر بصری طور پر ذھن ماننے کو تیار نہیں ہوتا.

    مجھے امید ہے زندہ رود صاحب جلد ہی جوابی وار کریں گے.

    #149
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 123
    • Posts: 3710
    • Total Posts: 3833
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: مَیں

    Mat the same time I understand when govt spends its lot of red tape and wastage of money, applies to defense as well. But when they are spending tax payers money ruthlessly they can be extravagant on adventures like moon and Mars. No businessman can explore the frontiers like that with so much investment and so dicy returns. When these public fundings open frontiers like internet blacksheep Sahib completely overlook and give total credit to Gates, Bezos, Jobs.

    Shirazi bhai,

    I think invention of internet was purely result of defense related need. 

    #150
    Zinda Rood
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 13
    • Posts: 1649
    • Total Posts: 1662
    • Join Date:
      3 Apr, 2018
    • Location: NorthPole

    Re: مَیں

    زندہ رُود۔۔۔۔۔ نوٹ: مَیں یہ تحریر یہاں صرف اِس لئے لکھ رہا ہوں کہ آپ نے بارہا یہ لکھا ہے کہ آپ کو پولیٹیکل کریکٹ نیس پسند نہیں ہے اور آپ کھل کر بات کرنا پسند کرتے ہیں۔۔۔۔۔ ورنہ یہ آپ کو پرسنل میسج میں بھی لکھ سکتا تھا۔۔۔۔۔ خیر آپ نے اجازت دی ہے تو شکریہ بنتا ہے۔۔۔۔۔ انسانوں کو پڑھنا، اُن کی عادات کو سمجھنا، اُن عادات کے پیچھے چھپی انتہائی گہری وجوہات کو سمجھنا میرا شوق ہے۔۔۔۔۔ کچھ عرصہ پہلے مَیں نے گھوسٹ صاحب کی نفسیات کے بارے میں ایک تجزیہ دیا تھا۔۔۔۔۔ گھوسٹ صاحب کا شکریہ کہ اُنہوں نے اُس تجزیہ کا ایک ایک لفظ دُرست ثابت کر کے دکھایا۔۔۔۔۔ جہاں تک آپ کی بات ہے تو میرے خیال میں اِس بحث میں آپ کا معاملہ دوسروں سے الگ ہے۔۔۔۔۔ کچھ عرصہ پہلے گھوسٹ صاحب کے ساتھ بات کرتے مَیں نے نظریاتی نازک حصوں پر بات کی تھی۔۔۔۔۔ کہ انسانوں کی شخصیات کے کچھ پہلو ایسے ہوتے ہیں جن پر بات آتے ہی وہ اچھا بھلا منطقی انسان ایک دم بیک فُٹ پر چلا جاتا ہے اور غیر منطقی جذباتی سی گفتگو شروع کردیتا ہے۔۔۔۔۔ مَیں یہ تو بالکل نہیں کہوں گا کہ آپ کے ساتھ گھوسٹ صاحب جیسا ہی شدید مسئلہ ہے بلکہ یہ کہوں گا کہ آپ کے خیالات کی خصوصاً ایک لَٹ ذرا اُلجھی ہوئی ہے جو آپ کے دیگر خیالات کے ساتھ اسٹریم لائن نہیں ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    بلیک شیپ صاحب۔۔۔۔ میرے متعلق آپ کا تجزیہ بالکل درست ہے۔۔۔ مجھ میں یہ کمزوری ہے اور اکثر یہ میرے خیالات پر اثر اندازی ہوتی ہے، کبھی مجھے اس کا احساس ہوتا ہے، کبھی نہیں۔۔  انسانوں اور جانوروں کے ساتھ اس دنیا میں جو کچھ ہو رہا ہے، ایک ایسا نظام ہے جو انہیں ایک دوسرے کے ساتھ برسرِ پیکار رکھے ہوئے ہے، جو مظلوم ہے، وہی ظالم بھی ہے اور جو مضروب ہے، وہی ضارب  بھی۔۔ یہ معاملات اکثر میرے اعصاب پر سوار رہتے ہیں۔۔  میں نے بہت غوروخوض کیا کہ انسان کتنا با اختیار ہے اور اسے اپنے (اچھے /برے) اعمال کیلئے کس قدر ذمے دار ٹھہرایا جاسکتا ہے، انسان کی زندگی اور اس کے فیصلوں کا بہت زیادہ دارومدار اس کے دماغ اور اس کے فطری خواص (جیسا کہ غصہ، تحمل، نفرت، محبت، بہادری، بزدلی وغیرہ) پر ہوتا ہے اور یہ چیزیں اسے پیدائش، وراثتی جینز اور بعد کے ماحول سے ملتی ہیں، آئین سٹائن کا دماغ اس کی اپنی کاوش سے نہیں بنا تھا، اسے قدرت کی طرف سے ملا تھا، ممتاز قادری کی سوچ اس کی اپنی تشکیل کردہ نہیں تھی،  مغربی ممالک میں مقیم لوگ اگر آسودہ حال ہونے کی وجہ سے اتنے باشعور ہیں کہ اپنی راہیں خود چنتے ہیں تو اس لئے کہ وہ ایک آسودہ حال معاشرے میں پیدا ہوئے، اگر وہ سندھ کے کسی پسماندہ گاؤں میں پیدا ہوتے تب ان کی زندگی کیسی ہوتی ؟ قدرت ہماری زندگیوں میں بہت زیادہ دخیل ہے، کہیں ہم محض کٹھ پتلیاں تو نہیں؟۔۔۔۔

    آپ کے اندر ایک بہت ہی شدید خواہش ہے کہ دُنیا میں ہر شخص کو ہر لحاظ سے برابر ہونا چاہئے۔۔۔۔۔ اور زندگی کے بارے میں آپ کا عمومی رویہ پَیسیمِسٹک ہے۔۔۔۔۔ اگر کوئی شخص معذور پیدا ہوتا ہے، نابینا پیدا ہوتا ہے تو آپ کے خیال میں یہ اُس شخص کے ساتھ شدید ناانصافی ہوئی ہے اور آپ کا ایسی ناانصافیوں پر دِل بہت کڑھتا ہے اور آپ اِن کو دُرست کرنا چاہتے ہیں۔۔۔۔۔ لیکن مسئلہ یہ ہے کہ اللہ پر ایمان رکھنا آپ نے بند کردیا ہے اور اِن ناانصافیوں کا کوئی مجرم بظاہر آپ کے سامنے ہے نہیں۔۔۔۔۔ اور آپ کو یہ بھی علم نہیں کہ کون یہ ناانصافیاں کررہا ہے۔۔۔۔۔ اور مجھے لگتا ہے کہ آپ اِس معاملے میں فرسٹریٹڈ ہیں۔۔۔۔۔ اور ہر ایک کو ہر لحاظ سے برابر کرنا آپ کے بس میں نہیں ہے۔۔۔۔۔ مجھے لگتا ہے کہ خیالات کی یہ مخصوص طرز(لَٹ) آپ کے دیگر خیالات پر اثرانداز ہوتی رہے گی کیونکہ یہ طرز بہت ہی زیادہ راسخ ہے۔۔۔۔۔ ۔۔

    ہاں یہ بات درست ہے۔۔۔ اور اپنے زمانۂ ایمان کے آخری ادوار میں میں اس بات کی بھڑاس خدا پر خوب نکال لیا  کرتا  تھا ، مگر اب فی الحال کوئی ٹارگٹ میرے پاس نہیں ہے، جس کو میں ذمے دار ٹھہرا سکوں۔۔ لیکن مجھے اس بات کی خواہش ضرور ہے کہ اگر کوئی ذمے دار ہے تو کبھی وہ مجسم صورت میں میرے سامنے ضرور آئے۔بہ زبانِ اقبال۔۔۔ کبھی اے حقیقتِ بدبخت نظر آ لباسِ مجاز میں۔۔۔ :) ۔۔ 

    میرا تجزیہ ہے کہ اِن ناانصافیوں کو دُرست کرنے کے چکر میں آپ شاید سوشلزم مارکسزم کی اچھی طرح خاک چھانیں گے کیونکہ مارکسزم سوشلزم آپ کو زبانی کلامی ایک بڑا ہی خوبصورت سا لیکن خیالی یوٹوپیا فراہم کرتے ہیں۔۔۔۔۔ لیکن ملے گا آپ کو وہاں بھی کچھ نہیں۔۔۔۔۔ خدشہ مجھے یہ ہے کہ جب آپ کی مُراد وہاں بھی پوری نہیں ہوگی تو آپ کیا کریں گے۔۔۔۔۔ عموماً ہر شخص کو ایک اندرونی سکون چاہئے ہوتا ہے۔۔۔۔۔ وہ چاہتا ہے کہ وہ مطمئن ہوجائے۔۔۔۔۔ لیکن اکثر اوقات ہوتا یہ ہے کہ انسان اپنے آپ کو مطمئن کرنے کیلئے جو کچھ کرتا ہے وہ اُس کو مطمئن کرنے کے اُلٹا مزید بے چین کرتا ہے۔۔۔۔۔ سوال میرا آپ کے سوچنے کیلئے یہ ہے کہ کیا آپ اپنے آپ کو مطمئن کرنے کیلئے ایسا مقصد تو نہیں چُن لیں گے جس کو آپ کسی صورت پورا کر ہی نہ سکتے ہوں۔۔۔۔۔

    میں نے سوشلزم اور کمیونزم پر بھی کافی سوچ بچار کی، مگر کچھ وجوہات کی وجہ سے میں سوشلزم کا قائل نہیں ہوا۔ ایک تو سوشلزم میں انفرادیت بہت کم ہے اور اجتماعیت زیادہ،، دوسرا اس نظریے کی بنیاد میں بھی جبر اور تشدد کارفرما ہے اور میرے خیال میں یہ نظام جبر کے بغیر قائم بھی نہیں رہ سکتا، شاید اسی لئے مارکس اور اینگلز نے پرولتاری آمریت کو لازمی قرار دیا تھا، اور میرے خیال میں جبر کا نظام استحصال کو اور ظلم کو جنم دیتا ہے (روس اور چائنا کی تاریخ اس کی زندہ مثال ہے)۔ سوشلزم کے نعروں میں جو سہانے خواب دکھائے جاتے ہیں، بھلا وہ جبر کے نظام کے تحت کیسے پورے ہوسکتے ہیں۔ جب سوشلزم ہی قائم نہیں ہوگی تو کمیونزم تو بہت دور کی بات ہے، ویسے بھی کمیونزم کی تھیوری مجھے حقیقت سے بہت دور لگتی ہے، بھلا انسان اتنا پارسا ، حرص، لالچ ، طمع سے پاک کیسے ہوسکتا ہے کہ وہ خود ہی برابری کی سطح پر، بغیر کسی طبقاتی تفریق کے رہنا شروع کردے۔۔۔ ایک اور عنصر بھی ہے جو سوشلزم کے باب میں شدت پسندی اور جبر کا سبب ہے اور وہ ہے صرف اور صرف خود کو سچا اور صحیح ماننا، غالباً آپ ہی نے ایک بار کہا تھا کہ جن کو اپنے درست اور سچا ہونے کا بہت یقین ہوتا ہے، ان کی سوچ میں لچک اور برداشت نہیں ہوتی، اسی لئے میرا خیال ہے اس نظریے کے پیروکاروں کی سوچ بھی اسی لئے عدم برداشت کی حامل ہوتی ہے۔۔۔

    عموماً ہر شخص کو ایک اندرونی سکون چاہئے ہوتا ہے۔۔۔۔۔ وہ چاہتا ہے کہ وہ مطمئن ہوجائے۔۔۔۔۔ لیکن اکثر اوقات ہوتا یہ ہے کہ انسان اپنے آپ کو مطمئن کرنے کیلئے جو کچھ کرتا ہے وہ اُس کو مطمئن کرنے کے اُلٹا مزید بے چین کرتا ہے۔۔۔۔۔ سوال میرا آپ کے سوچنے کیلئے یہ ہے کہ کیا آپ اپنے آپ کو مطمئن کرنے کیلئے ایسا مقصد تو نہیں چُن لیں گے جس کو آپ کسی صورت پورا کر ہی نہ سکتے ہوں۔۔۔۔۔

    سچ پوچھیں تو فی الحال میری اپنی سوچ ہی خلفشار کا شکار ہے، اور کوئی واضح مقصد میرے سامنے نہیں ہے۔۔ اکثر اوقات میرے ذہنے میں الٹے سیدھے خیالات پنپتے رہتے ہیں، لیکن بہرحال وہ قابلِ بیان نہیں ہیں :) ۔۔۔

    • This reply was modified 2 months, 1 week ago by  Zinda Rood.
    #151
    bluesheep
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 13
    • Posts: 268
    • Total Posts: 281
    • Join Date:
      7 Dec, 2018
    • Location: Pindi HQ

    Re: مَیں

    سچ پوچھیں تو فی الحال میری اپنی سوچ ہی خلفشار کا شکار ہے، اور کوئی واضح مقصد میرے سامنے نہیں ہے۔۔ اکثر اوقات میرے ذہنے میں الٹے سیدھے خیالات پنپتے رہتے ہیں، لیکن بہرحال وہ قابلِ بیان نہیں ہیں :) ۔۔۔

    :)

    سر جی آپ اتنی فکر نہ کریں اور کھل کر اپنے الٹے سیدھے خیالات کی الٹی یہاں کردیں، دیکھیں پھر کالا دنبہ کیا کہتا ہے

    #152
    Zinda Rood
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 13
    • Posts: 1649
    • Total Posts: 1662
    • Join Date:
      3 Apr, 2018
    • Location: NorthPole

    Re: مَیں

    :) سر جی آپ اتنی فکر نہ کریں اور کھل کر اپنے الٹے سیدھے خیالات کی الٹی یہاں کردیں، دیکھیں پھر کالا دنبہ کیا کہتا ہے

    بلوشیپ صاحب۔۔۔ ابھی دوسرے تھریڈ پر گھوسٹ پروٹوکول صاحب کی ساکھ داؤ پر لگی ہوئی ہے اوردور دور تک  مسئلہ حل ہوتا نظر نہیں آرہا۔ :) ۔ آپ چاہتے ہیں میری ساکھ بھی بھانبڑ بھوسے کی نظر ہوجائے۔ :angry_smile: :angry_smile: ۔۔۔۔؟؟؟

    Ghost Protocol

    #153
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 123
    • Posts: 3710
    • Total Posts: 3833
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: مَیں

    بلوشیپ صاحب۔۔۔ ابھی دوسرے تھریڈ پر گھوسٹ پروٹوکول صاحب کی ساکھ داؤ پر لگی ہوئی ہے اوردور دور تک مسئلہ حل ہوتا نظر نہیں آرہا۔ :) ۔ آپ چاہتے ہیں میری ساکھ بھی بھانبڑ بھوسے کی نظر ہوجائے۔ :angry_smile: :angry_smile: ۔۔۔۔؟؟؟ Ghost Protocol

    Saakh lies in the eyes of beholder.

    :) :) :)

    #154
    BlackSheep
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 15
    • Posts: 1972
    • Total Posts: 1987
    • Join Date:
      11 Feb, 2017
    • Location: عالمِ غیب

    Re: مَیں

    ویسے بھی کمیونزم کی تھیوری مجھے حقیقت سے بہت دور لگتی ہے، بھلا انسان اتنا پارسا ، حرص، لالچ ، طمع سے پاک کیسے ہوسکتا ہے کہ وہ خود ہی برابری کی سطح پر، بغیر کسی طبقاتی تفریق کے رہنا شروع کردے

    کمیونزم کے نظریہ کو تو مَیں صرف اِس بناء پر ماننے سے انکار کرتا ہوں کہ عزیز میاں کہہ گئے ہیں۔۔۔۔۔

    ۔

    ۔

    مُنکرِ رحمتِ خدا رہنا

    کُفر ہے اتنا پارسا رہنا

    ;-) :cwl: ;-)

    #155
    BlackSheep
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 15
    • Posts: 1972
    • Total Posts: 1987
    • Join Date:
      11 Feb, 2017
    • Location: عالمِ غیب

    Re: مَیں

    ریاست کے شہریوں کو اپنی حفاظت کیلئے اسلحہ رکھنے کی آزادی

    میرے خیال میں یہ کافی سے زیادہ پیچیدہ معاملہ ہے۔۔۔۔۔

    ایک طرف شخصی آزادی ہے تو دوسری طرف معاشرتی امن و امان کا نکتہ۔۔۔۔۔

    یہاں پر مَیں سمجھتا ہوں کہ جو شیرازی صاحب کا موقف ہے وہ اپنے اندر کافی وزن رکھتا ہے کہ جب ریاست قائم ہوتی ہے تو انفرادی سطح پر لوگ اپنے کچھ حقوق ریاست کے نام کردیتے ہیں کہ وہ یہ کام کرے گی۔۔۔۔۔ شہریوں کی حفاظت کی ذمہ داری ریاست پر آجاتی ہے، اگر ایسا نہ ہو تو پھر ریاست کس اُصول کے تحت ایک قتل کے مُجرم کو موت کی سزا دیتی ہے۔۔۔۔۔

    لیکن پھر یہاں ایک دوسرا نقطہِ نظر بھی ہے کہ ایک شخص جو کنٹری میں رہتا ہے، دو دراز تک کوئی آبادی نہیں ہے، پولیس نہیں ہے، اگر اُس شخص کو کسی جنگلی جانور سے یا کسی لُٹیرے سے اپنی جان کو خطرہ ہو تو وہ کیا کرے گا۔۔۔۔۔

    مگر ہوتا یہ بھی ہے کہ کوئی ذہنی نفسیاتی مریض اپنی گن اٹھا کر کسی اسکول میں گھس جاتا ہے اور بڑی تعداد میں معصوم بچوں کو قتل کردیتا ہے یا اسی قسم کی دیگر ماس شوٹنگز۔۔۔۔۔

    خیر بہرحال شخصی آزادی بمقابلہ حقوق کو ریاست کے سُپرد کرنے کا یہ مخصوص مسئلہ امیریکہ میں ہی اہمیت رکھتا ہے۔۔۔۔۔ یورپ وغیرہ میں ایسا کوئی مسئلہ نہیں۔۔۔۔۔ کینیڈا کا مجھے علم نہیں۔۔۔۔۔ آسٹریلیا نے کافی عرصہ پہلے ایک ماس شوٹنگ کے بعد اپنے قوانین کافی سخت کردیے تھے، خودکار ہتھیاروں پر پابندی لگائی گئی اور ہتھیار حاصل کرنا مشکل کیا گیا اور میرے ذاتی خیال میں امیریکہ کے حوالے سے بھی یہی طریقہ بہترین ہے۔۔۔۔۔

    یہاں ایک پہلو اور بھی ہے۔۔۔۔۔ وائلڈ ویسٹ کے زمانے میں ہتھیار رکھنا ضرورت تھی۔۔۔۔۔ مسئلہ بس یہ ہوا کہ امریکی آئین بنانے والوں نے اُس زمانے کی ضرورتوں کے حساب سے آئین کی دوسری شق میں یہ حق عطا کردیا اور اِس کو بنیادی حق بنادیا اور اب یہ نکالنا بہت مشکل ہے۔۔۔۔۔ اُسی طرح جیسے پاکستان کے آئین میں توہینِ مذہب کے قوانین ڈال دیے گئے ہیں اور اب نکالنا انتہائی مشکل ہے۔۔۔۔۔ ری پبلکن پارٹی بھی اِس مسئلہ پر اپنی سیاست خوب چمکاتی ہے۔۔۔۔۔ امیریکہ میں اِس کا ایک حل یہ ہوسکتا ہے کہ ایک ریفرنڈم کرا لو اور ایک دفعہ کیلئے طے کرلو اور جو بھی نتائج آئیں پھر اِن کو بُھگتو۔۔۔۔۔

    Qarar, Shirazi

    #156
    bluesheep
    Participant
    Offline
    • Advanced
    • Threads: 13
    • Posts: 268
    • Total Posts: 281
    • Join Date:
      7 Dec, 2018
    • Location: Pindi HQ

    Re: مَیں

    بلوشیپ صاحب۔۔۔ ابھی دوسرے تھریڈ پر گھوسٹ پروٹوکول صاحب کی ساکھ داؤ پر لگی ہوئی ہے اوردور دور تک مسئلہ حل ہوتا نظر نہیں آرہا۔ :) ۔ آپ چاہتے ہیں میری ساکھ بھی بھانبڑ بھوسے کی نظر ہوجائے۔ :angry_smile: :angry_smile: ۔۔۔۔؟؟؟ Ghost Protocol

    بھانبڑ بھوسے ؟؟؟؟؟

    یہاں کس کی طرف اشارہ ہورہا تھا ؟

    :serious:

    #157
    Qarar
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 95
    • Posts: 2227
    • Total Posts: 2322
    • Join Date:
      5 Jan, 2017

    Re: مَیں

    ریاست کے شہریوں کو اپنی حفاظت کیلئے اسلحہ رکھنے کی آزادی میرے خیال میں یہ کافی سے زیادہ پیچیدہ معاملہ ہے۔۔۔۔۔ ایک طرف شخصی آزادی ہے تو دوسری طرف معاشرتی امن و امان کا نکتہ۔۔۔۔۔ یہاں پر مَیں سمجھتا ہوں کہ جو شیرازی صاحب کا موقف ہے وہ اپنے اندر کافی وزن رکھتا ہے کہ جب ریاست قائم ہوتی ہے تو انفرادی سطح پر لوگ اپنے کچھ حقوق ریاست کے نام کردیتے ہیں کہ وہ یہ کام کرے گی۔۔۔۔۔ شہریوں کی حفاظت کی ذمہ داری ریاست پر آجاتی ہے، اگر ایسا نہ ہو تو پھر ریاست کس اُصول کے تحت ایک قتل کے مُجرم کو موت کی سزا دیتی ہے۔۔۔۔۔ لیکن پھر یہاں ایک دوسرا نقطہِ نظر بھی ہے کہ ایک شخص جو کنٹری میں رہتا ہے، دو دراز تک کوئی آبادی نہیں ہے، پولیس نہیں ہے، اگر اُس شخص کو کسی جنگلی جانور سے یا کسی لُٹیرے سے اپنی جان کو خطرہ ہو تو وہ کیا کرے گا۔۔۔۔۔ مگر ہوتا یہ بھی ہے کہ کوئی ذہنی نفسیاتی مریض اپنی گن اٹھا کر کسی اسکول میں گھس جاتا ہے اور بڑی تعداد میں معصوم بچوں کو قتل کردیتا ہے یا اسی قسم کی دیگر ماس شوٹنگز۔۔۔۔۔ خیر بہرحال شخصی آزادی بمقابلہ حقوق کو ریاست کے سُپرد کرنے کا یہ مخصوص مسئلہ امیریکہ میں ہی اہمیت رکھتا ہے۔۔۔۔۔ یورپ وغیرہ میں ایسا کوئی مسئلہ نہیں۔۔۔۔۔ کینیڈا کا مجھے علم نہیں۔۔۔۔۔ آسٹریلیا نے کافی عرصہ پہلے ایک ماس شوٹنگ کے بعد اپنے قوانین کافی سخت کردیے تھے، خودکار ہتھیاروں پر پابندی لگائی گئی اور ہتھیار حاصل کرنا مشکل کیا گیا اور میرے ذاتی خیال میں امیریکہ کے حوالے سے بھی یہی طریقہ بہترین ہے۔۔۔۔۔ یہاں ایک پہلو اور بھی ہے۔۔۔۔۔ وائلڈ ویسٹ کے زمانے میں ہتھیار رکھنا ضرورت تھی۔۔۔۔۔ مسئلہ بس یہ ہوا کہ امریکی آئین بنانے والوں نے اُس زمانے کی ضرورتوں کے حساب سے آئین کی دوسری شق میں یہ حق عطا کردیا اور اِس کو بنیادی حق بنادیا اور اب یہ نکالنا بہت مشکل ہے۔۔۔۔۔ اُسی طرح جیسے پاکستان کے آئین میں توہینِ مذہب کے قوانین ڈال دیے گئے ہیں اور اب نکالنا انتہائی مشکل ہے۔۔۔۔۔ ری پبلکن پارٹی بھی اِس مسئلہ پر اپنی سیاست خوب چمکاتی ہے۔۔۔۔۔ امیریکہ میں اِس کا ایک حل یہ ہوسکتا ہے کہ ایک ریفرنڈم کرا لو اور ایک دفعہ کیلئے طے کرلو اور جو بھی نتائج آئیں پھر اِن کو بُھگتو۔۔۔۔۔ Qarar, Shirazi

    بلیک شیپ صاحب
    آپ کی اپنی اپنی تحریر کی روشنی میں یہاں دو تین نکات بحث طلب ہیں
    ایک ….کیا کسی  معاشرے یا ملک میں بنیادی حقوق کی تشریح اور  نفاذ کا اختیار  اکثریت کے علاوہ بھی کسی کو ہے؟
    دو….کیا ایک جمہوریت میں اکثریت کی راۓ کو بذریعہ عدلیہ مسترد کرنے کا عمل جائز ہے …دوسرے الفاظ میں اینڈ جسٹفایز دا مینز؟
    تین …کیا کچھ انسانی حقوق اب آفاقی قوانین کا درجہ رکھتے ہیں جنھیں ارتقاء کے بعد دنیا کی اکثریت  تسلیم کر چکی ہے اور وہ حقوق دنیا کے تقریباً ہر ملک کے آئین  میں موجود ہیں؟

    میں شہریوں کے اپنی حفاظت کے لیے ہتھیار رکھنے کو یقیناً امریکی ایشو سمجھتا ہوں ..لیکن ساتھ ساتھ  سمجھتا ہوں کہ انسانی حقوق کی تشریح کرنے میں امریکی آئین اپنے لحاظ سے یکتا اور منفرد ہے اور شخصی  آزادیوں میں امریکا اور چند ایک ممالک پوری دنیا کے لیے مثال کی حیثیت رکھتے ہیں

    آپ نے ریفرینڈم کی بات کی  ہے لیکن اس ریفرینڈم کا نتیجہ تو سب کو پہلے  سے ہی معلوم ہے کہ امریکی عوام کی اکثریت آئین میں تبدیلی نہیں چاہتی اور ہتھیاروں پر پابندی کو قبول نہیں کرے گی .. یہی وجہ ہے کہ ڈیموکریٹک پارٹی میں بھی  کچھ فیصد لوگ ہتھیاروں پر پابندی چاہتے ہیں مگر بحثیت پارٹی ہتھیاروں پر پابندی کی کوئی تجویز زیر غور نہیں ہے ….اور اگر پارٹی ایسی تجویز کی حمایت کرے گی تو کافی ریاستوں سے پارٹی کا صفایا ہوجاۓ گا …یہی وجہ ہے کہ اوباما سمیت سب صدارتی امیدوار صرف اس بات تک محدود رہتے ہیں کہ کامن سینس قوانین بناۓ جائیں جس سے “برے” لوگ ہتھیار حاصل نہ کر سکیں …لیکن یہ تجویز زبانی جمع خرچ سے زیادہ کچھ نہیں کیونکہ حالیہ برسوں میں ہونے والے ماس شوٹنگ کے واقعات ان لوگوں نے کیے ہیں جن کا کوئی مجرمانہ بیک گراؤنڈ نہیں تھا اور کوئی قانون انہیں قانوناً ہتھیار خریدنے سے نہیں روک سکتا تھا

    ہم جنس پرستی ایک اور مثال ہے جسے امریکی عوام کی اکثریت ناپسند کرتی ہے …اور کسی بھی قسم کے ریفرینڈم میں ہم جنس پرستوں کی  شادی یعنی …گے میریج …منظور نہیں ہوسکتی تھی …اور تو اور امریکا کی سب سے لبرل ریاست کیلی فورنیا میں کچھ سال پہلے ہونے والے ریفرینڈم میں بھی… گے میریج کو قانونی  قرار دینے کی  تجویز بھی مسترد کر دی گئی تھی ..اگرچہ ووٹوں کا فرق معمولی تھا…لہٰذا کیلی فورنیا کا یہ حال ہے  تو باقی قدامت پسند ریاستوں کا آپ کو خود ہی اندازہ ہوجاۓ گا
    کیلی فورنیا میں ریفرینڈم میں مسترد ہونے پر پہلے کیلی فورنیا کے سپریم کورٹ نے مداخلت کی اور پھر مقدمہ  امریکی سپریم کورٹ میں پونہچا جہاں غالباً پانچ چار… یا چھ تین کی اکثریت سے ہونے والے کورٹ کے فیصلے کے بعد یہ پھڈا ختم ہوا اور.. گے میریج قانون بن گیا

    میں ذاتی طور پر ہم جنس پرستوں سے ہمدردی رکھتا ہوں ..اور انہیں یہ حق ملنے پر خوش ہوں …تاہم ایک پیوریسٹ کے طور پر سوچوں تو شاید کچھ غلط بھی ہوا ہے ..کیونکہ امریکی کانگریس جوکہ عوام کی اکثریت کی نمائندگی کرتی ہے …اس میں… گے میریج کے منظور ہونے کا دور دور تک بھی کوئی امکان نہیں تھا …یہاں امریکی سپریم کورٹ کے غیر منتخب نو ججوں میں سے  معمولی اکثریت نے فیصلہ کرکے  ایک قانون بنا دیا …حالانکہ کورٹس کو قانون بنانے کا امریکی آئین میں کوئی اختیار حاصل نہیں …کورٹس صرف تشریح کرسکتی ہیں یا کوئی قانون مسترد کرسکتی ہے …کافی لوگوں کے نزدیک یہ جوڈیشل ایکٹیوزم تھا

    اسقاط حمل کے قانونی ہونے کا فیصلہ بھی کورٹ سے آیا ہے ورنہ ریفرینڈم کی صورت میں فیصلہ شاید اس کے الٹ آئے

    امریکی لبرل اور ڈیموکریٹک پارٹی اس امید پر زندہ ہہیں کہ کورٹ میں ججوں کا تناسب شاید کبھی ان کے حق میں ہوجاۓ اور  کورٹ شہریوں کے ہتھیار رکھنے کو غیر قانونی قرار دے دے …امریکا میں فیڈرل جج کی ریٹائرمنٹ کو کوئی عمر نہیں ہوتی لہٰذا موجودہ سپریم کورٹ سے ایسا فیصلہ آنا ناممکن ہے …لیکن میں امریکا میں کافی عرصے سے رہ رہا ہوں ..یہ ایک ایسا حساس معاملا ہے کہ کورٹ کے ذریعے پابندی لگنے پر امریکا میں خون  کی ندیاں بہ سکتی ہیں …کبھی امریکی کنٹری سائیڈ میں ڈرائیو کریں تو اکثر گاڑیوں پر سٹکر اور گھروں میں جھنڈے لگے دکھائی دیتے ہیں جن پر کچھ دلچسپ پیغامات درج ہوتے ہیں

    If you want my gun, come and take it!

    #158
    BlackSheep
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 15
    • Posts: 1972
    • Total Posts: 1987
    • Join Date:
      11 Feb, 2017
    • Location: عالمِ غیب

    Re: مَیں

    آپ نے ریفرینڈم کی بات کی ہے لیکن اس ریفرینڈم کا نتیجہ تو سب کو پہلے سے ہی معلوم ہے کہ امریکی عوام کی اکثریت آئین میں تبدیلی نہیں چاہتی اور ہتھیاروں پر پابندی کو قبول نہیں کرے گی

    قرار صاحب۔۔۔۔۔

    مَیں نے امیریکہ میں عوام کیلئے ہتھیاروں پر پابندی کی خبروں، تجزیوں اور اِس پر مباحثوں کو سرسری سا دیکھا ہے۔۔۔۔۔ مَیں ابھی تک اِسی خیال میں تھا کہ یہ صرف اربن بمقابلہ کنٹری کی بات ہے، اور ہتھیاروں پر پابندی کے خیال کے حامل لوگ ذرا سی اکثریت میں ہیں۔۔۔۔۔۔

    باقی نکات پر لکھتا ہوں۔۔۔۔۔

    • This reply was modified 2 months ago by  BlackSheep.
    #159
    Shirazi
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 158
    • Posts: 2101
    • Total Posts: 2259
    • Join Date:
      6 Jan, 2017

    Re: مَیں

    I don’t think pro gun lobby will win the referendum unless you word the question to give them an advantage.

    https://news.gallup.com/poll/1645/guns.aspx

    National Rifle Association (NRA) is very strong and despite frequent shootings it has managed to maintain all it’s turf. Liberals are willing to to work with genuine needs of rural America from there security to passion. They are not seeking complete gun control. They are asking for stricter back ground check and ban on automatic weapons. It will solve random shootings issue quite a bit.

    Elections break ties in many cases but not always. Tried to solve racial equality through elections that lead to civil war. Women rights, gay rights, minority rights none of them can be solved if purists wait for majority opinion. Gun control unfortunately is going down to the same level.

    #160
    Qarar
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 95
    • Posts: 2227
    • Total Posts: 2322
    • Join Date:
      5 Jan, 2017

    Re: مَیں

    I don’t think pro gun lobby will win the referendum unless you word the question to give them an advantage. https://news.gallup.com/poll/1645/guns.aspx National Rifle Association (NRA) is very strong and despite frequent shootings it has managed to maintain all it’s turf. Liberals are willing to to work with genuine needs of rural America from there security to passion. They are not seeking complete gun control. They are asking for stricter back ground check and ban on automatic weapons. It will solve random shootings issue quite a bit. Elections break ties in many cases but not always. Tried to solve racial equality through elections that lead to civil war. Women rights, gay rights, minority rights none of them can be solved if purists wait for majority opinion. Gun control unfortunately is going down to the same level.

    شیرازی صاحب …آپ کے اس راۓ عامہ کے جائزے میں ستر فیصد لوگ ہتھیاروں پر پابندی کے خلاف ہیں …ترپن فیصد کلاشنکوف یا ..اے آر ففٹین وغیرہ اسالٹ رائفلز پر پابندی کے بھی خلاف ہیں …تو کس بنیاد پر آپ سمجھتے ہیں کہ امریکی عوام ہتھیاروں کو ترک کرنے پر آمادہ ہیں؟
    امریکا میں قومی سطح ریفرینڈم کا کوئی تصور موجود ہی نہیں ہے اور نہ ہی آئین میں اس کی گنجائش ہے …صرف ریاستیں اپنے طور پر فیصلہ کرسکتی ہیں کہ ریاستی سطح ریفرینڈم ہو یا نہ ہو…میں گن کر آپ کو پینتیس چالیس ریاستوں کے نام  بتا سکتا ہوں جہاں اگلے دو سو سالوں میں بھی ہتھیاروں پر پابندی کا کوئی قانون پاس نہیں ہوسکتا
    شخصی آزادیوں کی ایک قیمت بھی ہوتی ہے …مثلاً  اظہار رہے کی آزادی کا یہ مطلب بھی ہے کہ میری کسی تحریر سے  ایک یا ایک سے زیادہ طبقوں کے جذبات کو ٹھیس لگ سکتی ہے …اسی طرح ماس شوٹنگز آئندہ بھی ہوتی رہیں گی اور یہ امریکیوں کے ہتھیار رکھنے کے حق کی ایک قیمت ہے

Viewing 20 posts - 141 through 160 (of 242 total)

You must be logged in to reply to this topic.

Navigation