Thread: بنگلہ دیش کا قیام: جنرل نیازی نے ہتھیار کیوں ڈالے؟

Home Forums Siasi Discussion بنگلہ دیش کا قیام: جنرل نیازی نے ہتھیار کیوں ڈالے؟

This topic contains 2 replies, has 3 voices, and was last updated by  Ghost Protocol 6 months ago. This post has been viewed 120 times

Viewing 3 posts - 1 through 3 (of 3 total)
  • Author
    Posts
  • #1
    حسن داور
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 2904
    • Posts: 1744
    • Total Posts: 4648
    • Join Date:
      8 Nov, 2016

    Re: بنگلہ دیش کا قیام: جنرل نیازی نے ہتھیار کیوں ڈالے؟

    انڈیا کی مشرقی کمان کے  اسٹاف آفیسر میجر جنرل جے ایف آر جیکب نے 1971 میں بنگلہ دیش کی جنگ کے دوران اہم کردار ادا کیا تھا۔

    وہ جیکب ہی تھے جنھیں مانک شاہ نے پاکستانی فوج سے ہتھیار ڈلوانے کے لیے ڈھاکہ بھیجا تھا۔ انھوں نے ہی جنرل نیازی سے بات کر کے انھیں ہتھیار ڈالنے کے لیے راضی کیا تھا۔ جیکب نے 1971 کے جنگ پر دو کتابیں بھی لکھی ہیں۔

    بی بی سی ہندی سروس کے ریحان فضل نے ان سے ملاقات کی اور پوچھا کہ عام تاثر یہ ہے کہ بھارت کی سیاسی قیادت چاہتی تھی کہ بھارتی فوج اپریل 1971 میں بنگلہ دیش کے لیے نکل پڑے لیکن فوج نے اس فیصلے کی مخالفت کی، اس کے پیچھے کہانی کیا ہے؟

    میجر جنرل جے ایف آر جیکب نے بتایا کہ جنرل مانک شاہ نے انھیں فون کر کے کہا کہ بنگلہ دیش میں داخل ہونے کی تیاری کیجیے کیونکہ حکومت چاہتی ہے کہ ہم وہاں فوراً مداخلت کریں۔ میں نے انھیں بتانے کی کوشش کی کہ ہمارے پاس پہاڑی ڈویژن ہے، ہمارے پاس کوئی پل نہیں ہے اور مون سون شروع ہونے والا ہے، ہمارے پاس بنگلہ دیش میں گھسنے کے لیے فوجی اور بنیادی سہولیات نہیں ہیں۔

     

    اگر ہم وہاں جاتے ہیں، تو یہ یقینی ہے کہ ہم وہاں پھنس جائیں گے۔  لہذا، میرا کہنا تھا کہ 15 نومبر تک اسے ملتوی کرنا چاہیے جب تک کہ زمین مکمل طور سے خشک نہ ہو جائے۔

    جنرل جیکب کا کہنا تھا کہ مانک شاہ کی منصوبہ بندی میں ڈھاکہ پر قبضہ کرنا شامل نہیں تھا لیکن ‘میں نے ان سے کہا کہ اگر ہم جنگ جیتنا چاہتے ہیں تو ڈھاکہ پر قبضہ کرنا ضروری ہے کیونکہ اس کی اسٹریٹیجک اہمیت یہ ہے کہ یہ مشرقی پاکستان کا جغرافیائی دل بھی ہے۔

    لیکن ان کا کہنا تھا کہ اگر ہم کھلنا اور چٹاگانگ لے لیتے ہیں تو ڈھاکہ خود ہی ہمارے قبضے میں آ جائے گا۔ مجھے نہیں پتہ اس کی کیا وجہ تھی، میں صرف یہ جانتا ہوں کہ ہمیں صرف کھلنا اور چٹاگانگ پر قبضہ کرنے کا تحریری حکم ملا تھا۔ ایئر مارشل پی سی لال نے بھی اس بات کی تصدیق کی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ڈھاکہ پر قبضہ منصوبے کا حصہ ہی نہیں تھا اور اس بارے میں بھارتی ہیڈکوارٹر میں کافی اختلافات تھے۔

    اس سوال پر کہ کیا یہ بات درست ہے کہ اگر پاکستان 3 دسمبر کو بھارت پر حملہ نہ کرتا تو آپ 4 دسمبر کو پاکستان پر ہلہ بول دیتے، جنرل جیکب کا کہنا تھا کہ یہ بلکل درست ہے۔  میں نے آرمی ڈپٹی چیف سے ملاقات کی اور مجھے بتایا گیا کہ اس حملے کی تاریخ پانچ دسمبر طے پائی ہے لیکن مانک شاہ نے اسے ایک دن پہلے کر دیا کیونکہ چار ان کا لکی نمبر تھا۔

    سولہ دسمبر کا دن یاد کرتے ہوئے انھوں نے کہا میرے پاس مانک شاہ کا فون آیا کہ جیکب ڈھاکہ جا کر ہتھیار ڈلوائیں۔ میں جب ڈھاکہ پہنچا تو پاکستانی فوج نے مجھے لینے کے لیے ایک بریگیڈیئر کو بھیجا۔

    مکتی باہنی اور پاکستانی فوج کے درمیان لڑائی جاری تھی اور گولیاں چلنے کی آواز سنی جا سکتی تھی۔ ہم جیسے ہی کار میں بیٹھے مکتی فورسز نے اس پر گولیاں چلا دیں کیونکہ وہ پاکستانی فوج کی کار تھی۔

    میں ہاتھ اوپر کر کے کار سے نیچے اتر گیا۔ وہ پاکستانی برگیڈیئر کو مارنا چاہتے تھے، ہم کسی طرح مشکل سے پاکستانی فوج کے ہیڈکوارٹر پہنچے۔

    جب میں نے جنرل نیازی کو ہتھیار ڈالنے سے متعلق دستاویز پڑھ کر سنائیں تو انھوں نے کہا کہ ’کس نے کہا ہے کہ ہم ہتھیار ڈال رہے ہیں، آپ یہاں صرف جنگ بندی کرانے آئے ہیں۔ اس بارے میں بحث ہوتی رہی میں نے ان سے کہا کہ ہم نے آپ کو بہت اچھی پیشکش کی ہے اور اس سے بہتر پیشکش نہیں کر سکتے، ہم آپ کی اور آپ کے خاندانوں کی حفاظت کی ضمانت دیتے ہیں لیکن آپ اس پیشکش کو نہیں مانتے تو پھر ہماری کوئی ذمہ دار نہیں ہوگی۔ اس پر انھوں نے کوئی جواب نہیں دیا۔‘

    جنرل جیکب نے کہا کہ میں نے ان سے کہا کہ میں آپ کو تیس منٹ دیتا ہوں اگر آپ نہیں مانتے تو میں پھر سے جنگ شروع کرنے اور ڈھاکہ پر بمباری کا حکم دے دوں گا۔ یہ کہہ کر میں باہر چلا گیا لیکن دل ہی دل میں سوچنے لگا کہ یہ میں نے کیا کر دیا۔ میرے پاس کچھ بھی نہیں اور ان کے پاس ڈھاکہ میں 26400 فوجی ہیں اور ہمارے پاس صرف تین ہزار اور وہ بھی ڈھاکہ سے تیس کلو میٹر باہر۔ اگر وہ نہ کر دیتے ہیں تو میں کیا کروں گا۔

     میں تیس منٹ بعد اندر گیا دستاویز وہیں میز پر تھیں، میں نے ان سے پوچھا کیا آپ کو یہ منظور ہے تو انھوں نے کوئی جواب نہیں دیا۔ میں نے تین بار سوال کیا پھر کاغذ میز سے اٹھا کر کہا میں یہ مان کر چل رہا ہوں کہ آپ کو یہ منظور ہے۔

    یہ پوچھے جانے پر کہ پاکستانیوں کے پاس ڈھاکہ کا تحفظ کرنے کے لیے فوجی تھے تب بھی انھوں نے ہتھیار کیوں ڈالے، جنرل جیکب نے حمودد الرحمن کمیشن کی کارروائی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ  جب جنرل نیازی سے پوچھا گیا کہ آپ کے پاس ڈھاکہ میں 26400 فوجی تھے جبکہ بھارت کے پاس صرف تین ہزار آپ کم سے کم دو ہفتے اور لڑ سکتے تھے۔ سکیورٹی کونسل کا اجلاس جاری تھا، اگر آپ ایک دن اور لڑ پاتے تو بھارت کو شاید واپس جانا پڑتا تو پھر آپ نے ایک شرمناک شکست اور بغیر کسی شرط کے ہتھیار ڈالنا کیوں منظور کیا۔ اس پر نیازی کا جواب تھا کہ مجھے ایسا کرنے کے لیے جنرل جیکب نے مجبور کیا تھا۔ انھوں نے مجھے بلیک میل کیا اور ہمارے خاندانوں کو قتل کرنے کی دھمکی دی۔ نیازی کی یہ بات بالکل غلط تھی اور کمیشن نے نیازی کو قصور وار ٹھہرایا۔

    http://www.bbc.com/urdu/regional-42379385

    #2
    Atif
    Participant
    Online
    • Expert
    • Threads: 110
    • Posts: 5368
    • Total Posts: 5478
    • Join Date:
      15 Aug, 2016

    Re: بنگلہ دیش کا قیام: جنرل نیازی نے ہتھیار کیوں ڈالے؟

    یہ بات البتہ خاصی تشویش انگیز ہے کہ 1965 کی جنگ میں جو فرشتے ہماری فوج کی مدد کیلئے اترے تھے وہ 1971 کی جنگ میں کیوں نازل نہیں ہوئے؟؟ مبینہ طور پر یہ بھی مکتی باہنی کی سازش لگتی ہے

    #3
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 84
    • Posts: 2072
    • Total Posts: 2156
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: بنگلہ دیش کا قیام: جنرل نیازی نے ہتھیار کیوں ڈالے؟

    یہ بات البتہ خاصی تشویش انگیز ہے کہ 1965 کی جنگ میں جو فرشتے ہماری فوج کی مدد کیلئے اترے تھے وہ 1971 کی جنگ میں کیوں نازل نہیں ہوئے؟؟ مبینہ طور پر یہ بھی مکتی باہنی کی سازش لگتی ہے

    وہ فرشتہ مستقبل کی سیاست میں اپنے کردار پر تحقیقات میں مصروف تھے

Viewing 3 posts - 1 through 3 (of 3 total)

You must be logged in to reply to this topic.

Navigation