Thread: آزاد سوچ

Home Forums Hyde Park / گوشہ لفنگاں آزاد سوچ

This topic contains 43 replies, has 13 voices, and was last updated by  Zinda Rood 2 months ago. This post has been viewed 1488 times

Viewing 4 posts - 41 through 44 (of 44 total)
  • Author
    Posts
  • #41
    Guilty
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 0
    • Posts: 3926
    • Total Posts: 3926
    • Join Date:
      6 Nov, 2016

    Re: آزاد سوچ

    میں جب بھی آزاد سوچ کے بارے گفتگو سنتا ہوں ۔۔۔۔۔ یا غور کرتا ہوں ۔۔۔۔

    مجھے یہ بات کبھی سمجھ نہی آتی کہ ۔۔۔۔۔۔

    بھارت ۔۔۔۔ پا کستان ۔۔۔ جیسے ان پڑھ ۔۔۔۔۔ جا ھل ۔۔۔۔ معاشروں میں ۔۔۔۔۔ ملکوں شہروں میں ۔۔۔۔۔۔۔ عوام ۔۔۔۔۔۔ کس آزادی سے ۔۔۔۔ بھری ھجوم میں کھڑے ہوکر ۔۔۔۔

    بھری سڑک پر کھڑے ہو کر ۔۔۔۔۔ اپنی حکومتوں ۔۔۔۔۔ وزیراعظموں ۔۔۔۔۔ کے خلاف ۔۔۔۔۔۔ آزاد سوچ کا ۔۔۔۔ اظہار کرلیتے ہیں ۔۔۔۔۔  اور خوف زدہ نہیں ہوتے ۔۔۔۔۔

    ۔۔۔۔۔۔

    دوسری طرف ۔۔۔۔ یورپ مغربی ممالک ۔۔۔۔ امریکہ کینیڈا میں ۔۔۔۔۔ عوام ۔۔۔۔۔۔۔ بھرے ھجوم اور بھری سڑکوں پر ۔۔۔۔۔۔۔ اپنی حکومتوں کے خلا ف ۔۔۔۔ اپنی آزاد سوچ ۔۔۔۔ کا  اظہار کیوں نہیں کرپا تے ۔۔۔۔

    ۔۔۔۔۔۔

    بھارت پا کستان میں ۔۔۔ کس آزادی سے ۔۔۔۔ لوگ ۔۔۔۔ جگہ جگہ ۔۔۔۔ جلسے جلوس کرکے ۔۔۔۔۔ اپنی آزاد سوچ کو برملا  اظہار کرتے پا ئے جاتے ہیں ۔۔۔۔

    جبکہ ترقی یافتہ مغربی مما لک میں ۔۔۔۔۔۔ لوگ جگہ جگہ ۔۔۔۔۔ جلسے جلوس ۔۔۔۔ کرکے اپنی آزاد سوچ کو برملا ۔۔۔ کیوں اظہار نہیں کر پاتے ۔۔۔۔۔۔

    #42
    Ghost Protocol
    Participant
    Offline
    Thread Starter
    • Professional
    • Threads: 126
    • Posts: 3787
    • Total Posts: 3913
    • Join Date:
      7 Jan, 2017

    Re: آزاد سوچ

    میں جب بھی آزاد سوچ کے بارے گفتگو سنتا ہوں ۔۔۔۔۔ یا غور کرتا ہوں ۔۔۔۔ مجھے یہ بات کبھی سمجھ نہی آتی کہ ۔۔۔۔۔۔ بھارت ۔۔۔۔ پا کستان ۔۔۔ جیسے ان پڑھ ۔۔۔۔۔ جا ھل ۔۔۔۔ معاشروں میں ۔۔۔۔۔ ملکوں شہروں میں ۔۔۔۔۔۔۔ عوام ۔۔۔۔۔۔ کس آزادی سے ۔۔۔۔ بھری ھجوم میں کھڑے ہوکر ۔۔۔۔ بھری سڑک پر کھڑے ہو کر ۔۔۔۔۔ اپنی حکومتوں ۔۔۔۔۔ وزیراعظموں ۔۔۔۔۔ کے خلاف ۔۔۔۔۔۔ آزاد سوچ کا ۔۔۔۔ اظہار کرلیتے ہیں ۔۔۔۔۔ اور خوف زدہ نہیں ہوتے ۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ دوسری طرف ۔۔۔۔ یورپ مغربی ممالک ۔۔۔۔ امریکہ کینیڈا میں ۔۔۔۔۔ عوام ۔۔۔۔۔۔۔ بھرے ھجوم اور بھری سڑکوں پر ۔۔۔۔۔۔۔ اپنی حکومتوں کے خلا ف ۔۔۔۔ اپنی آزاد سوچ ۔۔۔۔ کا اظہار کیوں نہیں کرپا تے ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ بھارت پا کستان میں ۔۔۔ کس آزادی سے ۔۔۔۔ لوگ ۔۔۔۔ جگہ جگہ ۔۔۔۔ جلسے جلوس کرکے ۔۔۔۔۔ اپنی آزاد سوچ کو برملا اظہار کرتے پا ئے جاتے ہیں ۔۔۔۔ جبکہ ترقی یافتہ مغربی مما لک میں ۔۔۔۔۔۔ لوگ جگہ جگہ ۔۔۔۔۔ جلسے جلوس ۔۔۔۔ کرکے اپنی آزاد سوچ کو برملا ۔۔۔ کیوں اظہار نہیں کر پاتے ۔۔۔۔۔۔

    گلٹی بھائی صاحب،
    یہاں دو باتیں عرض کرنا صرف اس لئے ضروری ہیں کہ آپ نے یہ نکتہ ایک سے زائد مرتبہ اٹھایا ہے –
    پہلی بات کہ حکومت کے خلاف جذبات کے اظہار کی آزادی اور آزاد سوچ دو بلکل مختلف چیزیں ہیں
    دوسری بات یہ بات بلکل بھی درست نہیں ہے کہ مغربی ممالک میں اپنے حکمرانوں کے خلاف اظہار راے کی آزادی کا موازنہ پاکستان یا اس جیسے ممالک سے بنتا ہے
    ایک ہلکی سی جھلک اپنے وزیر اعظم ٹروڈو کے ایک حالیہ دورے کے دوران سامنے آئ جب وہ پورے کیمرہ کی ٹیم کے ساتھ سیلاب کو روکنے کے لئے سینڈ بیگ بھر رہے تھے تو سائیڈ میں کھڑے ایک رضا کار سے رہا نہیں گیا اور اسنے سب کے سامنے ٹروڈو کی کسطرح کھچائی کی ملاحظہ فرمایں

    اس کے علاوہ دنیا کے سب سے طاقت ور ترین ملک کے صدر ٹرمپ کے بارے میں ہر روز شام کو کامیڈی شوز میں کس حد تک جاکر گفتگو ہوتی ہے ملاحظہ فرماہیں

    #43
    Guilty
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 0
    • Posts: 3926
    • Total Posts: 3926
    • Join Date:
      6 Nov, 2016

    Re: آزاد سوچ

    پروٹوکول ۔۔۔۔۔

    آپ کہہ رھے ہو کہ ۔۔۔۔۔

    پہلی بات کہ حکومت کے خلاف جذبات کے اظہار کی آزادی اور آزاد سوچ دو بلکل مختلف چیزیں ہیں  ۔۔۔

    میں اس بات سے با لکل بھی متقق نہیں ہوں ۔۔۔۔ کیونکہ ۔۔۔۔۔ دو رخ ہیں ۔۔۔۔ ایک ۔۔۔۔ آزاد سوچ  ۔۔۔۔۔۔ دوسری ۔۔۔۔۔ غلام سوچ ۔۔۔۔۔

    اگر کسی شخص کی یا کسی معاشرے کی سوچ ۔۔۔۔ آزاد سوچ ۔۔۔۔ نہیں ہے تو مطلب طے ہے کہ ۔۔۔۔ اس کی سوچ ۔۔۔۔ غلام سوچ ہے ۔۔۔۔

    غلام سوچ ۔۔۔۔۔ کو بھلا کون غلام  بنا سکتا ہے ۔۔۔۔۔ آف کورس۔۔۔۔ کوئی طاقت ۔۔۔۔ ہی کسی کو یا کسی سوچ کو غلا م بنا سکتی ہے ۔۔۔۔

    اور طاقت معاشرے میں یا ملکون میں َ۔۔۔۔ کسی دھوبی ۔۔۔۔ نائی ۔۔۔۔ حلوائی ۔۔۔ شیف ۔۔۔۔ کے پاس تو نہیں ہوتی ۔۔۔۔

    معاشروں میں ملکوں ۔۔۔۔۔ میں ۔۔۔۔ کس کے پاس طاقت ہوتی ہے جو ۔۔۔۔ کسی سوچ کو غلام ۔۔۔۔ بنا سکے ۔۔۔۔

    معاشروں میں ملکون ۔۔۔۔ طاقت کا مرکز کہاں ہوتا ہے ۔۔۔۔ کیا غلام بنا نے والی ۔۔۔ طاقت ۔۔۔ کسی مال یا سنیما میں گھوم رھی ہوتی ہے ۔۔۔

    آف کورس نہیں ۔۔۔۔ طاقت کا سر چشہ ۔۔۔۔ با اختیار ۔۔۔۔ طاقت ور حکومتوں ۔۔۔۔۔ کے پا س ہی ہوتا ۔۔۔۔۔

    ورنہ ۔۔۔۔۔ ان کے علاوہ کوئی گاڈ فارد ۔۔۔۔ تو موجود نہیں ہوتا جو ۔۔۔۔ لوگوں کو یا سوچوں کو غلام بنا  سکتا ہو ۔۔۔۔

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    دوسرے آپ کہ رھے ہیں ۔۔۔

    ۔۔۔۔۔۔۔یہ بات بلکل بھی درست نہیں ہے کہ مغربی ممالک میں اپنے حکمرانوں کے خلاف اظہار راے کی آزادی کا موازنہ پاکستان یا اس جیسے ممالک سے بنتا ہے

    اگر مغربی ممالک کا موازنہ ۔۔۔۔ پا کستان جیسے ممالک سے نہیں کیا جا سکتا تو ۔۔۔۔ پھر مغربی مما لک کا موزانہ ۔۔۔۔ کیا ھم ۔۔۔۔ جنت سے کریں گے ۔۔۔۔

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    تیسرے آپ نے ۔۔۔۔ وزیراعظم ٹروڈو ۔۔۔۔۔ اور ۔۔۔ ٹرمپ ۔۔۔۔ کی مثا لیں ۔۔۔۔ دیں ہیں ۔۔۔ جو کہ بہت نا کافی ہیں ۔۔۔۔

    ٹروڈو کے سا تھ پیش آنے والے ایک معمولی واقعہ کو ۔۔۔۔۔ آپ پا کستان میں ستر سا ل سے ۔۔۔ گلیو ں سٹرکوں میں ہونے کروڑھا ۔۔۔ جلسوں جلوسوں میں مخا لف اظہار کو۔۔۔۔۔  تول رھے  ہیں ۔۔۔۔

    عمران خان کے مشہور زمانہ دھرنے کو جو ۔۔۔۔۔۔ حکومت کے خلاف ۔۔۔ مہینوں ۔۔۔۔۔ آزادی سے اظہار خیال کرتا رھا ۔۔۔۔۔ اس اظہار رائے کی مثال نہ مغربی مما لک میں ملتی ہے

    نہ چاند پر ملتی ہے ۔۔۔۔ نہ  کسی اور سیارے پر ملتی ہے ۔۔۔۔۔ نہ ہی جنت کی نشانیوں میں اس کا کہیں زکر ملتا ہے ۔۔۔۔۔۔

    یہ صرف پا کستان اور بھارت جیسے ۔۔۔۔ مما لک میں ممکن ہے ۔۔۔۔

    آپ  بھارت میں گاوں دیہات ۔۔۔ چھوٹے شہروں ۔۔۔ بڑے شہروں ۔۔۔۔میں چلنے والے ۔۔۔ کروڑھا ۔۔۔۔ حکومت مخالف ۔۔ جلسوں ۔۔۔ جلوسوں ۔۔۔۔  کو ٹروڈ  و کے ایک معمولے واقعے

    سے یا ٹرمپ کے ایک ٹی وی پروگرام سے نہیں ۔۔۔۔ تو ل سکتے  ۔۔۔۔۔۔۔

    ان مخالف جلسوں ۔۔  بخیئے ا دھیڑ دینے والی تقریروں  ۔۔۔۔ جلوسوں ۔۔۔۔ حکومت تختہ کردینے والے مظا ھروں ۔۔۔۔۔ اور ۔۔۔ سوچ کے ۔۔۔۔ گالیوں کے اظہار ۔۔۔۔ کا ایک پرسنٹ بھی ۔۔۔۔۔ مغربی مما لک میں نہیں ہوتا۔۔۔۔۔

    ۔۔

    • This reply was modified 2 months, 1 week ago by  Guilty.
    #44
    Zinda Rood
    Participant
    Offline
    • Professional
    • Threads: 13
    • Posts: 1687
    • Total Posts: 1700
    • Join Date:
      3 Apr, 2018
    • Location: NorthPole

    Re: آزاد سوچ

    آپ کی اس بات سے اصولی طور پر مجھے اتفاق ہے یہ وہ مقام ہے جس کے نزدیک انتہا درجہ کی بلوغت اور اصول پسندی کی صورت میں پہنچا جاسکتا ہے یہ وہ مقام بھی ہے جہاں تک پہنچنے کے لئے سیاست کو سیاسی اصولوں اور قوتوں کے زیر اثر پھلنے پھولنے کا موقع ملے – یہ مقام مزید دور ہوجاتا ہے جب معاشرہ کئی لحاظ سے تقسیم ہو پاکستان کے پس منظر میں آپ کی اس تنقید کو میں موجودہ صورتحال میں قبول کرنے سے گریز کروں گا کہ یہاں سیاسی لحاظ سے بحرانی کیفیت روزاول سے طاری ہے یہاں مختلف غیر فطری قوتیں اپنی اجارہ داری بر قرار رکھنے کے لئے سیاسی عمل کو تسلسل کے ساتھ پٹھری سے اتارنے کی کوششوں میں مصروف ہیں الزامات لگاے جاتے ہیں جھوٹ بولا جاتا ہے منظم پروپیگندہ ہوتا ہے بیانیہ تیار کیا جاتا ہے انصاف کے عمل کو اپنی مرضی سے ڈھالا جاتا ہے غرض ہر طرف اعتماد کا فقدان ہے ایسے ماحول میں اگر سرکاری نشریاتی ادارے سے یا نفع کے حصول کی غرض سے قائم نجی نشریاتی اداروں کی ہر بات ہر الزام پر تابعداری سے سر تسلیم خم بجالانے کی آپ کی توقع نہایت غیر حقیقی ہے جس بات کو آپ دفاع سے تعبیر کررہے ہیں وہ نکتہ نظر بھی کہا جاسکتا ہے اپنی اس بات کو ایک مرتبہ پھر دھرا دیتا ہوں کہ گروہ بندی اصولوں سے زیادہ مفادات کے حصول کے لئے ہوتی ہے اور اگر وسیع تر گروہی مفادات پر ضرب لگنے کا خدشہ ہو تو لوگ اصولوں کی قربانی دیدیتے ہیں یہ انسانی فطرت ہے آپ کی تنقید اور غصہ موجودہ غیر فطری سیاسی کرداروں پر بجا ہے مگر میری گزارش ہوگی کہ انفرادی کرداروں کے بجاے بڑی پکچر دیکھنے کی کوشش کریں اور اس بات پر غور کریں کہ ان کرداروں کی پیدائش میں کن عوامل کا کردار تھا اور آپ کی خیالی قیادت کو وجود میں آنے کے لئے کن عوامل کی ضرورت پڑے گی اور اس میں رکاوٹ کیا ہے آزاد سوچ کے موثر ہونے کے لئے آپ نے نہایت کڑی شرط عائد کردی ہے اس شرط کے لاگو ہونے کے لئے جتنا وقت درکار ہوگا اس دوران مبینہ آزاد سوچ کا حامل کیا کرے گا؟ عموما اگر آپ دیکھیں تو ووٹنگ کی شرح پینتیس سے پچاس کے درمیان رہتی ہے یہ بھی وہ لوگ ہوتے ہیں جو یا تو کسی کو ہرانے کے لئے یا کسی کو جتانے کے لئے ووٹ ڈالنے جاتے ہیں مطلب کسی نہ کسی سیاسی سوچ سے وابستہ ہوتے ہیں ووٹرز کی تو غالب اکثریت تمام موجودہ آپشنز پر تین الفاظ بھیج کر اپنی ذمہ داریوں سے مبرا ہوجاتے ہیں اور بعد میں شکایات کرنے میں بھی سب سے آگے ہوتے ہیں سیاسی جماعت سے وابستگی کا مطلب جلسوں میں کرسیاں لگانا نہیں ہے بلکہ گروہی مفادات کے حصول کے لئے سیاسی سوچ کی حمایت ہے مگر میرے لئے دیواروں پر پمفلٹ لگانے والے، کرسیاں لگانے والے جھنڈے اٹھانے والے یا موجودہ دور کی مناسبت سے سماجی ویبسائٹ پر اپنے سیاسی نظریات کا پرچار کرنے والے کسی بھی طرح کمتر نہیں ہیں بلکہ بہت زیادہ لائق احترام ہیں کہ انکے بغیر نام نہاد سہل پسند آزاد سوچ کے علمبرداروں کو آپشنز نہیں ملیں گے

    گھوسٹ پروٹوکول صاحب۔۔ جواب میں تاخیر پر معذرت۔۔۔۔  ایسا نہیں ہے کہ میں سیاسی جدوجہد کا بالکل قائل نہیں ہوں، میں مخصوص حالات میں سیاسی جدوجہد پر یقین رکھتا ہوں، جیسا کہ مشرف کی آمریت کے خلاف جدوجہد یا پھر کسی خاص معاملے میں عوام کا حکومت کے خلاف متحرک ہوجانا۔۔ لیکن اس کیلئے بھی عوام کا کسی خاص سیاسی جماعت کے ساتھ وابستہ ہونا ضروری نہیں ہوتا۔ جب عوامی جذبات بھڑکے ہوتے ہیں تو انہیں ذرا سی تحریک کی ضرورت ہوتی ہے اور وہ ایک جگہ مجتمع ہوجاتے ہیں، جب لوڈشیڈنگ ہوتی ہے تو عوام تمام تر سیاسی وابستگیاں ایک طرف رکھتے ہوئے سڑکوں پر متحرک ہوجاتے ہیں۔

    جس چیز کو میں صحیح نہیں سمجھتا، وہ ہے لوگوں کا سیاسی جماعتوں یا سیاسی رہنماؤں  کے ساتھ مذہبی عقیدت پال لینا۔۔۔ اور پاکستان میں یہ کلچر عام ہے۔۔ جب لوگ گروہوں میں بٹ کر مختلف سیاسی رہنماؤں یا سیاسی جماعتوں کے ساتھ باقاعدہ بندھ جاتے ہیں، تو اس کا میری نظر میں ایک بہت بڑا نقصان ہے کہ وہ طاقت جو سیاسی نظام نے ووٹ کی صورت میں ہر شخص کو مہیا کی ہے، وہ عوام کے ہاتھ سے نکل کر ان سیاسی جماعتوں کے ہاتھ میں چلی جاتی ہے جو اپنے ساتھ بیوقوفانہ حد تک عقیدت رکھنے والی عوام کے استحصال کا باعث بنتی ہے۔ اور میرے خیال میں یہ انسانی شعور کی بھی توہین ہے کہ وہ اپنی سوچ سمجھ کو کسی جماعت یا شخص کے ہاتھ گروی رکھ دے۔۔  

Viewing 4 posts - 41 through 44 (of 44 total)

You must be logged in to reply to this topic.

Navigation