Home Forums Siasi Discussion اب آگے کیا ہوگا؟ اب آگے کیا ہوگا؟

#16
Believer12
Participant
Offline
Thread Starter
  • Expert
  • Threads: 406
  • Posts: 9256
  • Total Posts: 9662
  • Join Date:
    14 Sep, 2016

Re: اب آگے کیا ہوگا؟

امریکہ کو بیس سال افغانستان میں جنگ کرنے کے بعد معلوم ہوا کہ اس جنگ کا فائدہ صرف اور صرف پاکستانی جرنیلوں کو ہورہا ہے اور وہ مزید بیس سال بھی لڑتا رہے تب بھی طالبان قابو میں نہیں آنے کے لہذا امریکہ نے فیصلہ کیا کہ جتنا پیسہ پاکستانی اسٹیبلشمنٹ کو دیا جارہا ہے اس کا ایک چوتھائی طالبان کو دے کر انہیں اپنا پالتو بنایا جاسکتا ہے۔ طالبان پہلے پاکستان کیلئے کرائے پر کام کرتے تھے اب امریکہ کیلئے کریں گے۔ پاکستان، چین، ایران اور روس کے ممکنہ اتحاد کر بےچین کئے رکھنے کیلئے یہاں ایک ایسی قوت درکار تھی جو بےلگام ہو اور اس پر بین الاقوامی قوانین کا اطلاق ہی نہ ہوتا ہو۔ ایران کا کردوار اگرچہ مشکوک ہی ہے لیکن بظاہر وہ امریکہ مخالف خود کو مشہور کرتا ہے لیکن جس طرح اپنے ازلی دشمن طالبان کیلئے اس بار ایران نے ہمدردی دکھائی ہے اس سے واضح معلوم ہورہا ہے کہ ایران امریکہ کے مفادات کے خلاف نہیں جاسکتا۔ پاکستانی اسٹیبلشمنٹ اس بار امریکہ کے اس چمتکار کے بعد چیں بچیں ہے کہ یا میرے مولہ ، اے کی پے گیا اے رولہ۔ طالبان اگر افغانستان میں مستحکم ہوگئے ججس کی بہت زیادہ امید ہے تو آنے والے چند ماہ میں آپ دیکھیں گے کہ بےوفائی کے جرم میں طالبان نے پاکستان کو بہت مطعون کرنا ہے اور دشمنیاں نکالنی ہیں۔ اس وقت طالبان کو سعودی عرب، پاکستان اور چین کی اخلاقی حمائیت درکار ہے جس کی وجہ سے یہ عفریت کچھ کینڈے میں نظر آرہا ہے ورنہ یہ اجڈ اور وحشی پاکستان پر بڑے عرصے سے دانت تیز کئے بیٹھے ہیں۔

چونکہ آپ کو آبیل مجھے مار کہہ کر تبصرے کیلئے بلوایا گیا تھا اور آپ کا تجزیہ بھی بہت مختصر ٹو دی پوائینٹ اور مبنی بر حقائق ہے لہذا اس پر کچھ لچ دلنا اپنا فرض سمجھتا ہوں

میرے جیسے لوگ جو سوات وغیرہ میں طالبان کی غیر شرعی حرکات اور ظلم و ستم کا تاریک دور پھر ان کی پاک فوج کے ہاتھوں دھلای دیکھ چکے ہیں کبھی بھی طالبان نام کی کسی تنظیم کو پسند نہیں کریں گے مگر اس بار حالات کچھ ایسے ہوچکے ہیں کہ جتنے بھی مخلص پاکستانی ہیں یا فوج میں بھی ملک کے وفادار لوگ ہیں وہ خوش دکھای دے رہے ہیں اور جن لوگوں کے مستقبل امریکہ سے وابستہ ہیں وہ امریکی انخلا کے بعد واقعی  پریشان ہیں کیونکہ سالہا سال سے یہ باتیں سنتے آرہے تھے کہ امریکی جارہے ہیں اب امریکی چلے گئے ہیں تو یقین نہیں آرہا اور جسطرح بغیر بتاے گئے ہیں اس سے پتا چلتا ہے کہا امریکیوں کو صرف اپنے شہریوں کی پرواہ ہے بھارتی جائیں بھاڑ میں انہیں کوی پرواہ نہیں۔ بھارتیوں نے خوامخواہ امریکی سالے بننے کی کوشش بھی کی ہے لیکن بایڈن نے ان سے وہی سلوک کیا ہے جو عمران نیازی سے کررہا ہے یعنی اتنی اہمیت بھی نہیں دے رہا جتنی کوی امیر بندہ اپنے گیٹ پر کھڑے گارڈ کو دیتا ہے

اس امریکی روئیے پر پاکستان اسٹیبلشمینٹ بہت جزبز ہے جس کی مثال دیکھنی ہو تو معید پیرزادہ کے امریکی صدر کی فون کال والے بیانات کو دیکھ کر اندازہ ہوجاتا ہے دوسری طرف انڈین حکومت بھی بہت پریشان ہے بلکہ مودی تو جیسے گم صم ہوگیا ہے بے عزتی اتنی ہوی ہے اوپر سے لیٹرینیں کھرچ کھرچ کر کمایا گیا شہریوں کا پیسہ اربوں ڈالر افغانستان میں جھونک کر ملا کچھ بھی نہیں اور پاکستان کو نقصان دینے کی سٹریٹیجی بھی دھڑام سے آگری۔ آپ دیکھیں گے کہ دھشت گرد حملے اب بہت کم ہوجائین گے یہ جو چند واقعات ہوے ہیں یہ سلیپرز پہلے سے موجود تھے جن تک ایجنسیاں پنہچ جائین گی تو مستقل ختم ہوجائیں گے بس دعا کریں کہ اب ایران کی زمین نہ استعمال ہونے لگے جو بھارتیون کی اب آخری امید ہے

نچوڑ یہ ہے کہ فی الوقت پاکستان کو طالبان کے آنے کے بہت سارے فوائد ملیں گے، دھشت گردی کم ہوگی، کاروبار بڑھے گا، امن ہوگا اور افغانستان ترقی کرے گا تو مہاجرین بھی واپس جانے لگین گے اور اسٹیبلشمینٹ کو امریکہ جانے کا نقصان ہوا ہے ان کی اہمیت نہیں رہی اور مال پانی بنانے کی اے ٹی ایم نیٹو سپلای روٹ بند ہوچکا ہے

×
arrow_upward DanishGardi