Home Forums Non Siasi بازار میں چلتے ہوئےکبھی آپ کو مردوں نےہراساں کیا ہے؟ جانئے خواتین کی رائے بازار میں چلتے ہوئےکبھی آپ کو مردوں نےہراساں کیا ہے؟ جانئے خواتین کی رائے

#11
Guilty
Participant
Offline
  • Expert
  • Threads: 0
  • Posts: 5390
  • Total Posts: 5390
  • Join Date:
    6 Nov, 2016

Re: بازار میں چلتے ہوئےکبھی آپ کو مردوں نےہراساں کیا ہے؟ جانئے خواتین کی رائے

بات جنسی ہراسگی کی نہیں فطری تعلق کی ہے جو کہ اس معاشرے اور کلچر میں جرم ہے اصل مسئلہ جنسی پابندیوں کا ہے. مرد عورتوں کو ہراساں ایسی ہی پابندیوں کی وجہ سے کرتا ہے ہمارے ہاں کسی محرم سے تو دور کی بات ہے غیر محرم سے بات چیت کرنا بھی ایک قسم کا گناہ اور غیر اخلاقی عمل سمجھا جاتا ہے مثال کے طور پر موجود دور میں بہت سی خواتین مردوں کے شانہ بشانہ کام کرتی ہیں. لیکن ان کے بارے میں زیادہ تر جاہل مذھبی لوگ یہ ہی خیال رکھتے ہیں کہ ایسی خواتین کرپٹ ہیں یا یہ جنسی طور پر بے لگام ہیں. اگر کوئی عورت رکشہ چلا رہی ہو گی تو اس کو پاکستانی لوگ کہیں گے یہ دو نمبر ہے … اگر کوئی کسی دوسرے سے ہنس کر بات کر رہی ہو گی تو لوگ کہیں گے اس کا کوئی چکر چل رہا ہے ارے بھئی جو بھی ہے آپ کو کیا تکلیف وہ جو بھی کرے … یہ ملائی ، قبائلی سوچ بنانے میں مذھب ، کلچر اور مسجد کا بہت ہاتھ ہے .. جنسی تسکین کا حصول ہر فرد کا حق ہے. اصل مسلح حوروں اور جنت کا ہے … کہ ہم سے وہ نہ چھوٹ جاے کیوں کہ مرنا تو سب نے ایک دن ہہے

۔۔۔۔۔

چلیں یہ بتا دیں کہ ۔۔۔۔

امریکہ کینیڈا یورپ ۔۔۔ پا کستان ۔۔۔ انڈیا ۔۔۔۔ مطلب آل موسٹ ھرجگہ ۔۔۔۔۔

سڑکوں پر ۔۔۔ مال میں ۔۔۔ بازاروں ۔۔۔ مارکیٹوں ۔۔۔ یونیورسٹیوں ۔۔۔ تقریبات ۔۔۔ پبلک مقامات پر ۔۔۔ کتنے پرسنٹ عورتیں  ۔۔۔۔ اپنے  ۔۔۔ سیکس ٹول ۔۔۔ کو نما یاں ۔۔۔ عریاں کرکے ۔۔۔ اپنے سیکس جذ بات کو

ظا ھر کرتی پھرتی ہیں ۔۔۔۔۔

دوسری طرف  ۔۔۔۔ کتنے پرسنٹ  ۔۔۔۔ مرد ۔۔۔۔ سڑکوں ۔۔۔ ما ل ۔۔۔۔ مارکیٹوں ۔۔۔۔ میں  ۔۔۔۔۔ اپنا ۔۔۔۔ سیکس ۔۔۔ ٹول ۔۔۔۔ نما یا ۔۔۔  دکھا تے پھرتے ہیں ۔۔۔۔

ایک بھی مرد ۔۔۔ اپنا سیسکس ۔۔۔ ٹول ۔۔۔۔ شو کیس کرتا نظر نہیں آتا ہے ۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

لیکن عورت ۔۔۔۔ سڑک ۔۔۔ ما ل سے لیکر ۔۔۔۔۔ ٹک ٹا ک  تک ھر جگہ ۔۔۔۔ اپنے ۔۔۔ سیکس ٹول ۔۔۔ کو ہی دکھا  کر ۔۔۔ اپنی سیکس تسکین پوری کرتی نظر آتی  ہے ۔۔۔۔

مرد کا سیکس ٹول تو ایک ہی ہوتا ہے ۔۔۔۔۔ کسی مرد کو نہیں دیکھا گیا ہے کہ ۔۔۔۔۔ اپنا سیکس ٹول ۔۔۔۔ عریاں کرکے گھوم رھا ہو ۔۔۔۔۔۔

عورتوں ۔۔۔۔ کے  ۔۔۔ تین چار ۔۔۔ سیکس ٹول ۔۔۔ ہوتے ہیں ۔۔۔۔  سنگتروں سے لیکر  بڑے خربوزوں تک ۔۔۔ کونسا ایسا   سیکس ٹول ہے  ۔۔۔ ہے جو عورت ۔۔۔ نہیں عریاں نہیں کرتی ۔۔۔۔۔

اولمپکس گیمز ہوں یا  دوسری سپورٹس ۔۔۔ اتھلیٹ  نوجوان لڑکیا ں  ۔۔۔۔  اپنی گیم کے ساتھ ساتھ ۔۔

۔ اپنے سارے ۔۔۔ سیکس ٹول ۔۔۔  عریاں کرنے کا با قاعدہ اھتمام کرتی ہیں ۔۔اور بتا تی ہیں  کہ عورت کو سیکس کا  اتنا جنون ہے جو قابو سے با ھر ہے ۔۔۔

اولمپک گیمز میں ۔۔۔ نوجوان اتھلیٹ  لڑکیوں کا جتنا دھیان گیمز پر ہوتا ہے اس سے زیادہ دھیان ان کا ۔۔۔  سیکس ٹول ۔۔۔ عریاں کرنے پر ہوتا ہے ۔۔

مطلب ملکی قومی خد مت کرتے وقت بھی ۔۔۔ نوجوان اتھلیٹ لڑکیوں کے ۔۔۔ سر میں ۔۔۔ سیکس ہی گھوم رھا ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔

۔۔ ان نوجوان لڑکیوں کی دما غی حالت بھی مفتی عزیز سے کم نہیں ہوتی ۔۔۔ مفتی عزیز مسجد میں سیکس کرتا ہے ۔۔۔۔

نوجوان اتھلیٹ لڑکیاں ۔۔۔۔ اولمپک گیمز میں ۔۔۔ سیکس جنون سے بھری گھو م رھی ہوتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔

بلکہ اب تو ایسی باریک پینٹس اور شارٹس بھی عام ہوگئے ہیں کہ ۔۔۔۔ آپ عورت کی شرمگاہ کا سا ئز ۔۔۔ اور کٹ ۔۔۔ تک ملاحظہ کرسکتے ہیں

سڑکوں پر بھی اور سوشل میڈیا پر بھی  فلم میں بھی اور ٹک ٹا ک ۔۔۔ پر بھی ۔۔

یہ تمام سیکس سے بھری عورتیں ۔۔۔ مفتی عزیز ۔کی طرح سیکس اوب سیشن ہوتی ہیں  ۔۔۔ مفتی  بھی سیکس  جنون لیکر پڑھا تا ہے  عورتو ں بھی سیکس جنون کے ساتھ گھومتی ہیں ۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس لیئے پوری دنیا میں ۔۔۔ جب عورت کو ۔۔۔ اپنے سیکس جنون ۔۔۔ پر کنٹرول ہی نہیں ہے ۔۔۔۔

عورت اپنے سیکس جنون سے ۔۔۔ فرسٹریٹ ہوکر ۔۔۔۔ اپنے سیکس ٹول ۔۔۔۔ دیکھا کر ۔۔۔ سیکس سکون حاصل کررھی ہے ۔۔۔۔

تو معاشرے کو یہ سوچنا چا ھیے کہ ۔۔۔ آج کی عورت ۔۔۔۔ سیکس کے لیئے اتنی اوب سیس سیوو ۔۔۔ کیوں ہے ۔۔۔۔۔

معاشرے کو یہ سوچنا چاھیے ۔۔۔۔ آج کی عورت ۔۔۔ اپنے سیکس ٹول  ۔۔۔ کو دکھا کر ۔۔۔ جو سیکس سکون چا ھتی ہے

وہ عورت کو کون دے گا ۔۔۔۔۔ مطلب عورت کو بھی  مفتی عزیز کی طرح ۔۔۔ سیکس جنون ۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔

مفتی مسجد میں سیکس جنون پورا کررھا تھا ۔۔۔ عورتیں ۔۔۔  گول مٹول ۔۔۔ ٹول دکھا کر  سکیس جنون پورا کررھی ہیں ۔۔۔۔۔

معاشروں کو ۔۔۔۔ عورتوں ۔۔۔ کے اس ۔۔۔ سیکس جنون ۔۔۔ کو پور ا کروانے کی کوشش کرنے چا ھیے تاکہ عورتوں کی

سیکس فرسٹریشن ختم ہو ۔۔۔۔ ان کو ۔۔۔ روزآنہ ۔۔۔ سیکس کرنے کو ملے ۔۔۔۔ وہ پر سکون ۔ہو جائیں ۔۔۔۔ اور نارمل زندگی گزاریں ۔۔۔۔

اس کے لیئے ۔۔۔۔ حکومت کو چاھیے ۔۔۔۔۔ پا کستان میں  فوری طور ۔۔۔ چار شادیوں کی اجازت دے دے ۔۔۔۔

اور امریکہ یورپ میں بھی قانون پاس ہونا چاھیے ۔۔۔ کہ ھر مرد ۔۔۔ کو ۔۔۔ سال ۔۔۔ کم ازکم۔۔۔۔ چار ۔۔۔ گرل فرینڈ ۔۔۔ سرکاری طور ۔۔۔

پر ۔۔۔ آسا ئن کی جائیں بھجی جائیں ۔۔۔ تاکہ ۔۔۔ عورت کا سیکس جنون بھی پورا ہو جائے ۔۔۔۔ا ور ۔۔۔ مرد ۔۔۔ بھی ریپ ۔۔۔  پورنو گرافی ۔۔۔  کال سیکس سے  ۔۔۔ بچ جا ئیں ۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

  • This reply was modified 3 weeks, 5 days ago by Guilty.
×
arrow_upward DanishGardi