وبا اور دعا

Home Forums Islamic Corner وبا اور دعا وبا اور دعا

#4
Believer12
Participant
Offline
  • Expert
  • Threads: 378
  • Posts: 8679
  • Total Posts: 9057
  • Join Date:
    14 Sep, 2016

Re: وبا اور دعا

…. بلیور صاحب ہمارا معاشرہ نظریاتی اعتبار سےدو گروپس میں تقسیم ہے ۔ ایک جو روائتی مذہب کے حامل ہیں۔ جو کٹراور شدت پسند مذہبی ہیں ۔ پاکستان میں ان کی واضح اکثریت ہے۔ ریاست اور حکومت پاکستان اسی روائتی کٹر مذہب کی حامل ہے اسی مذہب کی ریاستی سرپرستی ہوتی ہے، ہی مذہب پڑھایا، سنایا، دکھایا جاتا ہے۔ دوسرا مزہبی گروپ قدرے لبرل اور ریشنل ہے جس میں آپ جیسے لوگ شامل ہیں وہ سائنس اور مذہب میں کوئی متصادم تضاد نہیں دیکھتے، اور سائنس کی نئی ایجادات کو جھوٹ موت بنا کر اپنی مذھبی کتاب سے ملا کر اپنی اور دوسرے لوگوں کی دل پشوری کرتے رہتے ہیں . کیوں کہ مذھب چھوڑنا ان کے لئے محال ہے .

جس طرح یہ اپ لوگ مذھب اور سائنس کی لڑائی کو ختم کرنا چاہتے ہیں۔ ایسے ممکن نہیں۔۔ یہ انسانی شعوری زندگی کے دو الگ الگ ڈیپارٹمنٹ نہیں ہیں۔۔ اگر یہ بات ایسی ہوتی، تو مذہب کبھی سائنسی تحقیق کی راہ میں رکاوٹ نہ بنتا۔ اور نہ سائنس دانوں، مفکروں، فلاسفروں کو ازیتیں اور سزائیں دیتا۔۔۔ لیکن ایسا مسیحی دور میں بھی ہوا اور اسلامی دور میں بھی ہوا۔۔۔ کوئی مسلمان مفکر، فلاسفر، سائنس دان ایسا نہیں جسے اسلامسٹوں نے سزائیں نہ دی ہوں، ان پر کفر کے فتوے نہ لگائے ہوں۔۔۔ جن کا حوالہ آپ فخر سے اپنی اوپر والی پوسٹ میں دے رہے ہیں اور جن پر مسلمانوں کو فخر ہے ۔۔ یہ الگ سے ان کی مکاری بھی ہے اور جہالت بھی ہے۔ اس کا مطلب یہ ہوا، کہ مذہب اور سائنس یا عقل کی لڑائی ایک بنیادی لڑائی ہے۔ اور وہ ابتدا سے ہے۔۔۔۔ ۔۔ تفہیم کائنات سے ہی تعبیر کائنات کی سمجھ آتی ہے۔۔ آج جو جدید سیکولر تہذیبی معاشرے ہمارے سامنے ہیں۔۔ ان کی کونسی اخلاقی،سماجی، روحانی اقدار ۔۔ مزہب کی دی ہوئی ہیں؟ اصل میں ‘لبرل مذہب’ جس پر آپ چل رہے ہیں مذہب کی کوئی قسم نہیں ہے۔ اسی لئے پوری مذہبی تاریخ گواہ ہے۔ کہ کبھی لبرل/ریشنل مذہب کی بنیاد پرپائدارمعاشرے نہ بن سکے۔۔ اصل مذہب وہی ہے، جو مولوی، مسجد، مدرسے، روایات کا ہوتا ہے۔ لبرل مزہب ایک جعلی مصنوعی فرقہ ہے۔ ہمارے ہاں سرسید ، علامہ پرویز اور غامدی کو منہ کی کھانی پڑی۔۔ مسلمانوں نے ان کی اسلام کے بارے ‘جعلی تعیبر’ کو قبول نہ کیا۔

مسئلہ ہمیں نہیں آپ کو لاحق ہے کیونکہ آپ کسی بات کو مذہب کی عینک کے بغیر دیکھتے ہی نہیں ہیں، ہم تو ہرگز یہ نہیں کہتے کہ جہاز کی ایجاد فلاں مذہب کے ماننے والے نے کی تھی یا ٹرین عیسائیوں نے ایجاد کی تھی۔ ہم تو صرف یہ کہتے ہیں کہ فلاں ایجاد کے موجد کا نام یہ ہے، ہم کبھی بھی اس کا مذہب ڈسکس نہیں کرتے۔ یہ فوبیا آپ ہی کو لاحق ہے کہ ہر بات میں مذہب کو گھسیڑ رہے ہو اور مذہبی کتب میں پای جانے والی تمام اچھی باتوں میں سے صرف چند ایک پر عمل کرکے کوی بہترین معاشرہ تشکیل دے دیتا ہے تو آپ اس کی تعریفیں کرتے ہوے بھول جاتے ہو کہ آج کے دور میں بھی تمام ترقی یافتہ اور مہذب قومیں عیسای اور یہودی اور بعض جگہ مسلمان ہیں، روس اور چین میں اگر مذہب نہیں تو وہاں انسانی حقوق کی صورتحال بھی دگرگوں ہے

Navigation

Do NOT follow this link or you will be banned from the site!