نون لیگ اور اسٹیبلشمنٹ ، پس پردہ کیا ہو رہا ہے ؟

Home Forums Siasi Discussion نون لیگ اور اسٹیبلشمنٹ ، پس پردہ کیا ہو رہا ہے ؟ نون لیگ اور اسٹیبلشمنٹ ، پس پردہ کیا ہو رہا ہے ؟

#11
Awan
Participant
Offline
Thread Starter
  • Professional
  • Threads: 140
  • Posts: 2822
  • Total Posts: 2962
  • Join Date:
    10 Jun, 2017

Re: نون لیگ اور اسٹیبلشمنٹ ، پس پردہ کیا ہو رہا ہے ؟

Awan اعوان بھائی، انگریزی کا مقولہ ہے کہ “فارچون فیور دا بریو” ایمانداری کی بات ہے کہ اپنی سیاست کے اس موڑ پر میاں صاحب نے میری توقع اور اپنی روایات کے بر خلاف کہیں زیادہ بہادری کا مظاہرہ کیا ہے اس بریوری کے کا سب سے بڑا اور غیر متوقع فائدہ کیپٹین صفدر کی مزار قائد پر جذباتی جمہوری نعروں اور نتیجتا ملٹری اسٹیبلشمنٹ کے رعونت بھرے اقدامات اور سندھ پولیس کے انتہائی موثر احتجاج نے ایسی صورتحال پیدا کردی ہے جس نے اس گندی اسٹیبلشمنٹ کو پوری طرح برہنہ کرکے میاں صاحب کو یہ کہنے کا موقع فراہم کردیا ہے کہ “دیکھیں ریاست سے اوپر ریاست کا اس سے بڑا ثبوت اور کیا چاہئے.” حالیہ چھکے اور چوکوں سے میاں صاحب اور انکی بہادر اور کراؤڈ پلر بیٹی نے اس میچ میں اپنے لئے سازگار ماحول بنالیا ہے . اب سے کچھ عرصہ قبل تک عمران اور اسٹیبلشمنٹ حزب اختلاف کے پیچھے ایسے بھاگ رہے تھے جیسے چوروں کے پیچھے کوتوال مگر اب صورتحال میں کافی بدلاؤ آچکا ہے اسٹیبلشمنٹ پہلی مرتبہ کافی عرصہ کے بعد دفاعی انداز میں آچکی ہے حزب اختلاف کے ساتھ ساتھ ڈھکے چھپے الفاظ میں خان بھی باجوہ پر تنقید کررہا ہے .جو کہ ایک تشویشناک بات ہے سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ سامنے جو کچھ ہو رہا ہے کیا وہ ایسا ہی ہے جو نظر آرہا ہے یا اسٹیبلشمنٹ کے ہی کچھ عناصر پی ڈی ایم کے پیچھے ہیں اور انکو عوامی دباؤ بڑھاکر عمران کو بلکل ہی تابعدار بنانا چاہتے ہیں جسکا اشارہ حالیہ دنوں میں خان نے یہ کہہ کر دیا ہے کہ اگر میری حکومت جاتی ہے تو جائے مگر میں نے ان چوروں کو نہیں چھوڑنا . سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ اسکو یہ کیوں محسوس ہو رہا ہے کہ اسکی حکومت جاسکتی ہے؟ اور اگر حکومت جاتی ہے تو عمران کی سیاست کے لئے یہ بیانیہ ضروری ہے کہ دیکھو میں نے چوروں اور مافیاؤں پر کمپرومائز نہیں کیا اور اپنی حکومت سے جان چھڑالی . ایک بلین ڈالر کا سوال ہے کہ وہ کونسی صورت ہو سکتی ہے جسکے تحت یہ حکومت گھر چلی جائے اور نیے انتخابات کی صورت بنے؟ ایک صورت تو یہ ہوسکتی ہے کہ خان کو بھی عدالت کے ذرئیے نااہل قرار دلوادیا جائے یا یوسف رضا گیلانی ٹائپ کا مقدمہ بنا کر اسکو باہر کردیا جائے جسکے نتیجے میں سڑکوں پر کچھ امن و امان کا مسلہ پیدا ہوجاے اور حالت کو درست کرنے کے بہانے اقدامات لئے جایں. اور بھی کچھ صورتیں ہوسکتیں ہیں . اب آتے ہیں اصل نکتہ کی طرف کہ کیا فوج سے مذاکرت کی بات کرکے مریم نے کچھ غلط کیا ہے؟ میرا خیال ہے ایسا نہیں ہے کیوں کہ فوج ایک ڈی فیکٹو طاقت ہے اور اس سے آپ کو بات کرنی ہی پڑے گی . اہم بات یہ ہے کہ کیا بات کرنی ہے. اس بات میں کسی شک و شبہ کی گنجائش نہیں ہے کہ موجودہ حالت میں اسٹیبلشمنٹ نے کچھ علاقہ بحالت مجبوری خالی کیا ہے، فلحال فوج کو فیس سیونگ دی جاسکتی ہے اور دیا جانا چاہئے کیونکہ یہ بات نہیں بھولنی چاہیے کہ بندوق کس کے پاس ہے . ایک بات مگر طے ہے کہ مریم گروپ اگر حکومت میں آتی ہے تو اسٹبلشمنٹ کو کافی علاقہ خالی کرنا پڑے گا خطرہ اس صورتحال کا یہ ہے کہ کیا خان کو رسی تڑوا کر بھاگنے اور حزب اختلاف کی سیاست کرنے کی سہولت دی سکتی ہے ؟ یہ بہت خطرناک آپشن ہوگا کیوں کہ حکومت میں رہتے ہوے خان جن رسیوں میں بندھا ہوا ہے آزاد ہوتے ہی اسکی زبان پر قابو کرنا ناممکن ہوگا اسکو یا تو جیل میں ڈالنا پڑے گا یا مستقل علاج کرنا پڑےگا جو بھی ہو آنے والا وقت انتہائی دلچسپ ہونے جارہا ہے

ایک بات کا جواب رہ گیا تھا – آپ نے کہا ہے ملین ڈالر کا سوال ہے کہ حکومت کیسے جائے – بظاھر لگتا ہے خان کو گھر بھیجنا بہت مشکل ہے مگر یہ منحصر کرتا ہے اسٹیبلشمنٹ کونسا طریقہ اختیار کرتی ہے -خان کو نا اہل قرار دینے والے آپشن کو میں خارج الامکان قرار دونگا کیونکے اسے کوئی نہیں مانے گا نہ اسٹیبلشمنٹ اس حد تک جائے گی کہ خان جیسے فرمابردار کو ہمیشہ کے لئے نا اہل کر دے – میرے خیال کے مطابق سب سے پہلے اسٹیبلشمنٹ خان کو استعفیٰ دینے کا کہے گی اور تقریبا سو فیصد امکان ہے کہ خان انکار کرے گا – بائیس سال کے پاپڑ بیلنے کے بھد وہ کیسے اتنی آسانی سے اقتدار کو جانے دے گا – اس کے بھد خان کے خلاف تحریک عدم اعتماد لائی جا سکتی ہے اور اس تحریک کو کامیاب کرنا ان کے لئے کوئی بڑی بات نہیں ہے اپوزیشن تو اپوزیشن حکومت میں شامل ق لیگ اور ایم قیو ایم بھی خان کے خلاف ووٹ دینگی آزاد امیدواروں کا کیا وہ تو آسان ہدف ہونگے – مزے کی بات یہ ہے جس نے جہاز میں ڈھو ڈھو کر خان کے لئے بندے پورے کئے تھے وہی مخالفت کے لئے اپنا جہاز پیش کرے گا – خان کے خلاف تحریک عدم اعتماد کے بھد اسٹیبلشمنٹ ایک آدھا تیتر آدھا بٹیر کی طرح سب پارٹیوں کے اپنے وفاداروں پر مشتمل ایک حکومت اور اوپر شاہ محمود جیسا کوئی اپنا پٹھو وزیر اعظم لا سکتی ہے – میں سمجھتا ہوں یہ آپشن قومی حکومت کے نام پر بہت پہلے اسٹیبلشمنٹ کی طرف سے شہباز شریف کو پیش کی جا چکی ہے جسے نون لیگ خاص کر میاں صاحب رد کر چکے ہیں – نیا وزیر اعظم اسمبلیاں توڑ کر نئے اتخابات بھی کروا سکتا ہے جو نون سمیت تمام اپوزیشن قبول کرے گی -یہ سب تب ممکن ہے جب واقعی فوج کے کچھ عناصر جو اینٹی باجوہ ہیں پس پردہ نون یا اپوزیشن کے ساتھ ملے ہوئے ہیں لیکن اگر ایسا نہیں ہے تو اسٹیبلشمنٹ کیوں انتخابات کروا کر نون کو اپنے سر پر بٹھائے گی ؟ سب سے زیادہ اسی بات کے چانس ہیں کہ اپوزیشن کو ابھی لمبی لڑائی لڑنی ہے اور پانچ سال خان کے پورے ہونگے – خان کے اقتدار کے آخری سال آگے کی منصوبہ بندی ہو گی خاص کر باجوہ کے جانے کے بھد – باجوہ خان حکومت کے آخری سال جائے گا اور خان کتنا بھی اپنا وفا دار جنرل لے کر آئے اس نے وہی کرنا ہے جو فوج پہلے سے طے کر چکی ہو گی –

Navigation

Do NOT follow this link or you will be banned from the site!