آپ اپنا چندہ واپس لے سکتے ہیں

Home Forums Suggestions & Support آپ اپنا چندہ واپس لے سکتے ہیں آپ اپنا چندہ واپس لے سکتے ہیں

#29
Bawa
Participant
Offline
  • Expert
  • Threads: 154
  • Posts: 15434
  • Total Posts: 15588
  • Join Date:
    24 Aug, 2016

Re: آپ اپنا چندہ واپس لے سکتے ہیں

عاطف بھائی

مجھے تو یہ سمجھ نہیں آئی ہے کہ ایک معمولی اعتجاج پر یہ ہنگامہ کیوں کھڑا کیا گیا ہے؟

کیا منہ چھپا کر اور دو نمبر آئی ڈی بنا کر آنے والے کسی شخص کے قائد اعظم اور علامہ اقبال کو گالی دینے اور اسلام کے خلاف دن میں دس دس تھریڈ کھولنے پر اعتجاج اتنا بڑا جرم تھا کہ پورے فورم کی انتظامیہ نے اسے عزت کا مسئلہ بنا لیا ہے؟

ایک سادہ سا سوال موڈریٹرز سے پوچھا جا رہا تھا کہ قومی اور اسلامی رہنماؤں کے متعلق توہین آمیز کومنٹس کے بارے میں فورم کی پالیسی کیا ہے؟ اس کا جواب دینا کیا مشکل تھا؟ ایک سیدھا جواب دے کر معاملہ ختم کیا جا سکتا تھا کہ قومی اور اسلامی رہنماؤں تنقید کرنے کی مکمل آزادی ہے لیکن توہین سے گریز کیا جائے. موڈریٹرز اس سوال کا جواب دینے کی بجائے ان لوگوں کے ترجمان بنے ہوئے تھے جو توہین آمیز کومنٹس لکھ رہے تھے

آپ نے بھی اس معاملے کو دوستوں کے ساتھ ڈسکس کرکے ختم کرنے کی بجائے باقائدہ تھریڈ کھول کر انہیں تنقید کا نشانہ بنانا مناسب سمجھا. مجھے اس پر کوئی اعتراض نہیں ہے کہ آپ نے دوستوں کو اس طرح تنقید کا نشانہ بنایا. دوستوں پر تنقید کا آپ کو پورا حق ہے لیکن مجھے افسوس اس بات کا ضرور ہے کہ آپ نے بھی اپنے موڈریٹرز کی طرح اس شخص کے بارے میں ایک لفظ تک لکھنا گوارہ نہ کیا جس نے ایک پاکستانی فورم پر قائد اعظم اور علامہ اقبال کو گالی دی. اگر قائد اعظم اور علامہ اقبال کو پیغمبر کا درجہ حاصل نہیں ہے تو کیا کسی کو انہیں گالیاں دینے کا لائسنس مل گیا ہے؟

یہ آپکا فورم ہے اور آپ یہاں جس قسم کی بھی پالیسی نافذ کرنا چاہتے ہیں یا جس طرح کے بھی نظریات کے پرچار کی اجازت دینا چاہتے ہیں وہ آپکی صوابدید ہے. مجھے یا کسی اور فورم ممبر کو فورم کی پالیسی کے بارے میں تنقید کا کوئی حق نہیں ہے لیکن قومی رہنماؤں کو گالی دینے پر اعتجاج کا حق تو ہے

ہماری دوستی ان فورم کے معاملات سے بالاتر ہے. ہم اسوقت سے دوست ہیں جب اس فورم کا وجود تک نہ تھا اور یہ دوستی ہمیشہ قائم رہے گی. آپکی دعوت پر یہاں آنے سے پہلے آپ کو بتا دیا تھا کہ ہم وہ مہمان ہیں جو میزبان کے دعوت دینے سے آتے ضرور ہیں لیکن میزبان کی مرضی سے جاتے نہیں ہیں. ہم میزبان کے گھر کو اپنا ہی گھر سمجھتے ہیں بیشک میزبان اسے اپنا گھر سمجھنا چھوڑ دے اور غصے میں گھر کی چابیاں ہمارے پاوں میں پھینک کر خود اپنا گھر چھوڑ کر چل دے. اس بات کو بھول جائیں کہ ہم یہاں سے چلے جائیں گے. امید ہے آپ بھی چابیاں پاوں میں پھینک کر گھر چھوڑ کر نہیں جائیں گے

Atif Qazi

Navigation

Do NOT follow this link or you will be banned from the site!